جرمنی میں دہشت گردوں سے رابطوں پر مشتبہ شامی مہاجر گرفتار | حالات حاضرہ | DW | 03.11.2016
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

جرمنی میں دہشت گردوں سے رابطوں پر مشتبہ شامی مہاجر گرفتار

جرمن پولیس نے ملکی دارالحکومت برلن سے ایک غیر ملکی دہشت گرد تنظیم کی رکنیت کے شبے میں ایک شامی مہاجر کو گرفتار کر لیا ہے۔ ملزم پر شبہ ہے کہ وہ برلن کے دو ہوائی اڈوں میں سے ایک پر حملے کی منصوبہ بندی کر رہا تھا۔

Berlin Kreuzberg Islamisten Festnahme Razzia IS (Reuters/F.Bensch)

اس مشتبہ شامی دہشت گرد کو برلن کے علاقے شوئنے برگ میں اس کے فلیٹ پر چھاپہ مار کر گرفتار کیا گیا

وفاقی جرمن دارالحکومت برلن سے جمعرات تین نومبر کو موصولہ مختلف نیوز ایجنسیوں کی رپورٹوں کے مطابق ایک مہاجر کے طور پر جرمنی میں داخل ہونے والا یہ 27 سالہ شامی مرد پچھلے سال سے جرمنی میں مقیم ہے۔

پولیس ذرائع نے ملزم کا نام ظاہر کیے بغیر بتایا کہ اس شامی باشندے پر شبہ ہے کہ وہ شام اور عراق کے مختلف علاقوں پر قابض دہشت گرد تنظیم ’اسلامک اسٹیٹ‘ یا داعش کے ایماء پر جرمنی میں بم حملوں کی منصوبہ بندی کر رہا تھا۔

برلن میں پولیس حکام نے نیوز ایجنسی روئٹرز کو بتایا کہ اس مشتبہ دہشت گرد کو جرمن دارالحکومت کے علاقے ’شوئنے برگ‘ میں ایک فلیٹ سے حراست میں لیا گیا اور اس سے پوچھ گچھ کی جا رہی ہے۔ اس سلسلے میں پولیس نے مزید کوئی تفصیلات بتائے بغیر کہا کہ دیگر معلومات کی فراہمی کے لیے وفاقی جرمن دفتر استغاثہ سے رابطہ کیا جائے۔

اسی دوران نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس نے لکھا ہے کہ وفاقی دفتر استغاثہ نے بھی ملزم کا ابھی تک نام تو ظاہر نہیں کیا تاہم بتایا کہ اس کی عمر 27 برس ہے اور اس پر داعش کی رکنیت کے علاوہ اس گروپ کے دہشت گردوں سے رابطوں کا بھی شبہ ہے۔

Deutschland ehemaliges Fahndungsfoto des Syrers Dschaber Al-Bakr ( Polizei Sachsen)

مہاجر کے طور پر جرمنی آنے والا داعش کا مشتبہ شامی دہشت گرد جابر البکر جس نے لائپزگ کی جیل میں خود کشی کر لی تھی

روئٹرز کے مطابق برلن میں اس مشتبہ دہشت گرد کی گرفتاری کے لیے چھاپہ جرائم کی تحقیقات کرنے والے وفاقی جرمن محکمے بی کے اے کی صوبائی شاخ کے اہلکاروں نے مارا، جس کے قریب 40 منٹ بعد ٹوئٹر پر ایک پیغام میں یہ تصدیق بھی کر دی گئی کہ ایک غیر ملکی دہشت گرد تنظیم کی رکنیت کے شبے میں ایک شامی شہری کو گرفتار کر لیا گیا ہے۔

برلن سے شائع ہونے والے اخبار ’برلینر سائٹُنگ‘ نے لکھا ہے کہ مشتبہ ملزم کے فلیٹ پر چھاپے کے دوران پولیس حکام نے اس کی رہائش گاہ کی تلاشی بھی لی اور اسے آج جمعرات تین نومبر کے روز ایک مقامی عدالت میں پیش کیا جا رہا ہے۔

قبل ازیں گزشتہ ماہ اکتوبر میں بھی جرمن پولیس نے ایک ایسے شخص کو حراست میں لیا تھا، جو ایک ایسے مشتبہ شامی مہاجر کے ساتھ رابطے میں تھا، جس نے جرمنی میں مختلف بم حملوں کی منصوبہ بندی کر رکھی تھی۔

پولیس کو اس مشتبہ شامی باشندے کے فلیٹ سے کئی سو گرام دھماکا خیز مواد اور بم بنانے والا ساز و سامان بھی ملا تھا۔ بعد ازاں اس مشتبہ دہشت گرد نے جرمنی کے مشرقی شہر لائپزگ کی ایک جیل میں خود کشی کر لی تھی۔

DW.COM

Audios and videos on the topic