جاپان: کورونا وائرس کا بحران، آن لائن ڈیٹنگ میں اضافہ | معاشرہ | DW | 26.05.2020
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

معاشرہ

جاپان: کورونا وائرس کا بحران، آن لائن ڈیٹنگ میں اضافہ

جاپانی شہری کورونا وائرس کی وبا کے دوران جیون ساتھی کی تلاش میں آن لائن ڈیٹنگ کے پلیٹ فارمز کا استعمال کر رہے ہیں۔ رشتہ استوار کرنے کی کمپنیاں اب ورچوئل بار، ویڈیو پارٹی اور آن لائن کوکنگ کی سروسز مہیا کر رہی ہیں۔

کورونا وائرس کی وجہ سے سماجی دوری کے دوران بہت سے جاپانی  لڑکے اور لڑکیاں جوش و خروش کے ساتھ آن لائن لائف پارٹنر تلاش کر رہے ہیں۔ لیکن نوجوانوں کے لیے یہ عمل پیچیدہ اور مشکل ہوتا ہے کیونکہ ڈیٹنگ ویب سائٹ استعمال کرنے والے افراد سماجی دوری کے ضوابط کی وجہ سے روبرو ملاقات نہیں کر سکتے۔
رشتے استوار کرنے کی روایتی کمپنیوں نے جوڑے بنانے کے متبادل طریقے پیش کرنا شروع کر دیے ہیں۔ اب پارٹنر کی تلاش، ملاقات اور ڈیٹنگ مکمل طور پر آن لائن ہو رہی ہے۔ یہ کمپنیاں پر امید ہیں کہ معمول کی صورت حال میں بھی لوگوں کا آن لائن ڈیٹنگ کے لیے جوش و خروش برقرار رہے گا۔

ٹوکیو میں واقع ایک میرج بیورو کے مینیجر کسٹمر سروسز گو یاماکوشی نے بتایا، ’’ہم نے ابھی اپریل کے اوآخر میں آن لائن ڈیٹنگ سپورٹ کا آغاز کیا، صارفین کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے۔ گزشتہ ہفتے یہ تعداد دوگنی ہو گئی۔‘‘


بحران میں ہم سفر کی تلاش
یاماکوشی سمجھتے ہیں کہ جب ہر جگہ مسلسل منفی خبریں گردش کر رہی ہوں، مستقبل غیر یقینی ہو، تو یہ انسانی فطرت ہے کہ لوگ بحران کے وقت میں رابطہ قائم کرنا چاہتے ہیں۔ ان کے بقول، ’’پریشانی کے دوران کسی کے ساتھ ہونے کی خواہش اور بھی بڑھ جاتی ہے۔‘‘ 
یاماکوشی نے مزید کہا کہ جاپان میں شادی کے کاروبار میں سنہ 2011 کے زلزلے اور سونامی کے بعد اسی طرح کا رجحان دیکھنے میں آیا تھا۔ ان قدرتی آفات میں لگ بھگ بیس ہزار افراد ہلاک اور مکمل برادریاں تباہ ہوگئی تھیں۔

مزید پڑھیے: اور کچھ نہیں، جاپانی چور چھ ہزار سرجیکل ماسک چرا لے گئے
ایک مطالعہ کے مطابق جاپان میں جیون ساتھی کے انتخاب کے عمل میں آن لائن ڈیٹنگ کا عمل موثر ثابت ہو رہا ہے۔ کیونکہ، جاپانی معاشرے میں ملازمت، بار، ریستوران یا پھر مشترقہ دوستوں کے ذریعہ کسی شخص سے تعرف کے بعد دوبارہ ملاقات کے امکانات عموماﹰ کم ہوتے ہیں۔

ورچوئل ملاقاتیں
جاپان کی ایک ایونٹ مینیجمنٹ کمپنی لنک وال کارپوریشن کے ایک سروے میں بتایا گیا کہ حکومت کی جانب سے ملک گیر ایمرجنسی نافذ کرنے کے بعد سے 90 فیصد غیر شادی شدہ مرد اور خواتین نے خود کو تنہا محسوس کیا ہے۔

یہ بھی پڑھیے: معاشرے کا ضمیر: کوڑے دان خالی کرنے والے جاپانی حیران رہ گئے

اس صورت حال کے نتیجے میں آن لائن ڈیٹنگ کمپنیوں نے ورچوئل بار ویڈیو سروسز کا آغاز کیا، جس میں دو سو تک سنگل افراد شرکت کر سکتے ہیں۔ اس آن لائن پارٹی کے دوران شرکاء نئے لوگوں سے ورچوئل ملاقات اور چیٹنگ کر سکتے ہیں۔ اسی طرح میچ میکنگ کمپنیوں نے اپنی ویب سائٹ پر ایک ساتھ آن لائن کوکنگ بھی متعارف کروائی ہے۔
یاماکوشی کے مطابق لوگوں کو آمنے سامنے بات چیت کرتے یا پھر مسکراتے دیکھ کر ایک ربط کا احساس ہوتا ہے، خواہ وہ شخص جسمانی طور پر دور ہی کیوں نہ ہوں۔

جاپان میں کورونا وائرس کی وجہ سے ہنگامی حالات سے قبل شادی کی صنعت بھی عروج پر تھی ۔ لیکن اب زیادہ تر کمپنیوں نے اس موسم بہار میں شادی کے رشتے میں بندھنے والے جوڑوں کو اپنی رسمی تقریبات کو سال کے آخر تک ملتوی کرنے کی اجازت دے دی ہے۔
ع آ / ع ت (ریال جولیان)

DW.COM

Audios and videos on the topic