ترکی: آئی ایس کے خلاف کارروائی، نو ہلاکتیں | حالات حاضرہ | DW | 26.10.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ترکی: آئی ایس کے خلاف کارروائی، نو ہلاکتیں

جنوب مشرقی ترکی میں کرد اکثریتی علاقے دیار باقر میں آج پیر کے روز فائرنگ کے ایک واقعے میں اسلامک اسٹیٹ کے سات مبینہ دہشت گرد اور دو پولیس اہلکار ہلاک ہو گئے ہیں۔ یہ واقعہ ایک چھاپے کے دوران پیش آیا۔

خبر رساں ادارے ’اے ایف پی‘ کے مطابق ترک پولیس نے آج علی الصبح ضلع دیار باقر میں مختلف گھروں پر چھاپے مارے۔ حکام کو علاقے میں شدت پسندوں کی موجودگی کی اطلاعات ملی تھیں۔ بتایا گیا ہے کہ اس دوران شدت پسندوں کی جانب سے پولیس پر فائرنگ کی گئی، جس سے دو اہلکار ہلاک ہو گئے۔ تاہم جوابی کارروائی میں کم از کم سات شدت پسندوں کو ہلاک کرنے کا دعوی کیا گیا ہے۔ اے ایف پی کے مطابق فائرنگ کا سلسلہ صبح دیر تک جاری رہا جبکہ پولیس کو شبہ ہے کہ علاقے میں مزید مشتبہ افراد چھپے ہوئے ہیں۔

ترک حکام نے دارالحکومت انقرہ میں دس اکتوبر کو کردوں کی ریلی پر ہونے والے خود کش حملے کی ذمہ داری اسلامک اسٹیٹ پر عائد کی تھی۔

اس واقعے میں 102 افراد ہلاک ہوئے تھے۔ ترکی کی جدید تاریخ کا یہ خونریز ترین حملہ تھا۔ ترک ذرائع ابلاغ کے مطابق گزشتہ اختتام ہفتہ پر ریلی پر ہونے والے حملے کے تناظر میں مختلف علاقوں پر چھاپے مارے گئے اور ان حملوں کی منصوبہ بندی میں ملوث ہونے کے شبے میں ایک جرمن خاتون شہری کو بھی حراست میں لیا گیا ہے۔ اناطولیہ نیوز ایجنسی کے مطابق سلامتی کے اداروں کو خدشہ تھا کہ یہ افراد کسی بڑے دہشت گردانہ حملے کی تیاری میں مصروف ہیں ، جسیے کے ہوائی یا بحری جہاز کا اغوا یا کسی عوامی مقام پر بارودی مواد نصب کرنا وغیرہ۔ انقرہ حملوں کے تناظر میں گزشتہ دو ہفتوں کے دوران متعدد افراد کو حراست میں لیا جا چکا ہے۔

ترکی میں چھ روز بعد پارلیمانی انتخابات ہونے والے ہیں۔ اس موقع پر ترکی کے حالات کرد تنازعے اور آئی ایس کے خطرے کی وجہ سے شدید تناؤ کا شکار ہیں۔ اس سلسلے میں آج اسلامک اسٹیٹ کے شدت پسندوں اور پولیس کے مابین فائرنگ ترک سرزمین پر ہونے والا اپنی نوعیت کا پہلا واقعہ ہے۔ ترکی نے شام میں آئی ایس اور شمالی عراق میں کرد باغیوں کے خلاف جولائی میں فضائی حملوں کا سلسلہ شروع کیا تھا۔ بعد ازاں انقرہ حکام نے امریکا کو بھی فضائی حملوں کے لیے اپنی سرزمین استعمال کرنے کی اجازت دے دی تھی۔