1. مواد پر جائیں
  2. مینیو پر جائیں
  3. ڈی ڈبلیو کی مزید سائٹس دیکھیں
Protest nach Gruppenvergewaltigung und Ermordung zweier Mädchen in Indien 30.05.2014
تصویر: Reuters

بھارت میں دلت خواتین کے خلاف جنسی جرائم کبھی رکیں گے بھی؟

21 ستمبر 2022

ذات پات کے سماجی نظام میں انتہائی کم حیثیت سمجھے جانے والی دلت خواتین کے خلاف جنسی تشدد کے واقعات میں تشویش ناک اضافہ ہو رہا ہے۔ قصورواروں کے خلاف ٹھوس قانونی کارروائی نہیں ہونے کے سبب صورت حال مزید ابتر ہو سکتی ہے۔

https://p.dw.com/p/4H9RH

 

اترپردیش کے ضلع لکھیم پور کھیری میں گزشتہ ہفتے پندرہ اور سترہ برس کی دو بہنوں کی لاشیں درخت سے لٹکی ہوئی پائی گئیں۔ پوسٹ مارٹم رپورٹس کے مطابق ان کے ساتھ جنسی زیادتی کی گئی اور گلا گھونٹ کر قتل کیا گیا۔ پولیس نے گینگ ریپ اور قتل کے الزام میں چھ افراد کو گرفتار کرلیا ہے۔

یہ واقعہ بھارت میں تقریباً آٹھ کروڑ دلت خواتین کو درپیش جنسی تشدد کے مسئلے کی تازہ کڑی ہے۔ دلت خواتین بھارت کے صدیوں پرانے ذات پات کے سماجی نظام میں روایتی طور پر سب سے کم سطح پر سمجھی جاتی ہیں۔

جنسی تشدد معمول کی بات

لکھیم پورکھیری کے واقعے نے سن 2014 میں ہونے والے اسی طرح کے واقعے کی خوفناک یادیں تازہ کر دیں جب اترپردیش کے ہی بدایوں ضلعے میں دو کمسن بہنوں کا اغوا اور ان کا گینگ ریپ کے بعد قتل کرکے لاشوں کو ایک درخت سے لٹکا دیا گیا تھا۔

اس واقعے کے خلاف بڑے پیمانے پر احتجاجی مظاہرے ہوئے تھے اور اقوام متحدہ کو قصورواروں کے خلاف فوراً کارروائی کرنے کی اپیل کرنی پڑی تھی۔ سن 2020 میں بھی اترپردیش کے ہی ہاتھرس ضلع  میں اعلیٰ ذات کے ہندؤوں نے ایک 19سالہ دلت لڑکی کو گینگ ریپ کے بعد قتل کردیا تھا۔ اس واقعے نے بھی دلتوں کے مسلسل استحصال کی جانب لوگوں کی توجہ مبذول کرائی تھی۔

متبادل نوبل انعام کے نام سے مشہور رائٹ لائیولی ہڈ ایوارڈ یافتہ سماجی کارکن رتھ منورما نے ڈی ڈبلیو سے بات چیت کرتے ہوئے کہا، "دلت خواتین اور لڑکیوں کے ساتھ ریپ دراصل ان کے وجود اور وقار کو کچل دینے کی کوشش ہے۔سماجی نظام کے حساب سے اعلیٰ ذات کے سمجھے جانے والے مرد اپنی طاقت کا مظاہرہ کرنے، دلت خواتین کی توہین کرنے اور ان کے ساتھ غیر انسانی سلوک کرنے کے لیے جنسی تشدد کا استعمال کرتے ہیں۔"

بھارت کے دلت اور چین کے ایغور غلامی کی جدید شکلیں، اقوام متحدہ

بھارت کے نیشنل کرائم ریکارڈز بیورو کی رپورٹ کے مطابق دلت ذات کے افراد کے ساتھ ہونے والے جرائم کے تقریباً 71000 کیسز سن 2021 کے اواخر تک زیر التوا تھے۔

دلت خواتین کے ساتھ جنسی تشدد کے سب سے زیادہ واقعات اترپردیش، بہار اور راجستھان میں پیش آتے ہیں
دلت خواتین کے ساتھ جنسی تشدد کے سب سے زیادہ واقعات اترپردیش، بہار اور راجستھان میں پیش آتے ہیںتصویر: Sukhomoy Sen/NurPhoto/picture alliance

بڑے پیمانے پر تفریق

اعدادو شمار سے یہ بھی پتہ چلتا ہے کہ سن 2015 سے 2020 کے درمیان دلت خواتین کے ساتھ ریپ کے واقعات میں 45 فیصد کا اضافہ ہوا۔ تاہم حقیقی تعداد اس سے کہیں زیادہ ہوسکتی ہے کیونکہ بیشتر کیسز پولیس میں درج ہی نہیں ہوپاتے ہیں۔ بھارت میں دلت خواتین کے ساتھ جنسی تشدد کے سب سے زیادہ واقعات اترپردیش، بہار اور راجستھان میں پیش آتے ہیں۔ پورے ملک میں دلت خواتین کے خلاف ہونے والے جنسی تشدد کے واقعات کا نصف سے بھی زائد ان تین ریاستوں میں درج کیے گئے۔

بھارت میں دلتوں کی ملک گیر ہڑتال: کئی جگہ کرفیو، ہلاکتیں

گھوڑا کیوں خریدا، بھارت میں دلت کا قتل

دلتوں کے حقوق کے لیے سرگرم تنظیم دلت ہیومن رائٹس کی جنرل سکریٹری بینا پالیکل نے ڈی ڈبلیو سے بات چیت کرتے ہوئے کہا، "اتر پردیش میں بھارتی دلتوں کے خلاف جرائم کی شرح سب سے زیادہ ہے۔" انہوں نے مزید کہا ''خواتین کمیشن ایسے واقعات کے خلاف ایک لفظ بھی نہیں بولتا ہے۔ ملک کے پورے عدالتی نظام پر ازسر نو غور کرنے کی ضرورت ہے۔ ہمیں دلت خواتین کو تحفظ فراہم کرنے کا مطالبہ کرنا چاہیے۔"

دلت خواتین کو ایک ساتھ تین تین طرح کے مسائل کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔ ایک عورت ہونے کی وجہ سے، دوسرا ذات کی بنیاد پر اور تیسرے نمبر پر اقتصادی طور پر پسماندہ ہونے کی وجہ سے۔

دلت خواتین کے ساتھ ریپ کے واقعات میں 45 فیصد کا اضافہ ہوا
دلت خواتین کے ساتھ ریپ کے واقعات میں 45 فیصد کا اضافہ ہواتصویر: Francis Mascarenhas/Reuters

منہ بند رکھنے کا کلچر

سن 1990کی دہائی کے اوائل سے دلتوں کے حقوق کی تحریک میں تیزی آنے کے ساتھ ہی ان کے خلاف تشدد کے واقعات میں بھی اضافہ ہوا ہے۔ سخت قوانین اور حکومت کے وعدوں کے باوجود ذات پات پر مبنی قتل، سماجی تفریق اور دیگر خلاف ورزیاں روز کا معمول بن گئی ہیں۔

خواتین کے حقوق کی ایک بین الاقوامی تنظیم 'ایکوالٹی ناؤ' کی سن 2020 کی ایک رپورٹ کے مطابق، ''دلت خواتین اور لڑکیاں بالعموم انصاف سے محروم رہ جاتی ہیں بالخصوص اگر جرم کرنے والے شخص کا تعلق بھارتی سماجی نظام میں اعلیٰ درجے سے ہو۔''

سماجی کارکنوں کا کہنا ہے کہ بھارت میں یوں تو دلتوں کے خلاف جرائم کے لیے سخت قوانین موجود ہیں لیکن ان پر شاذ و نادر ہی عمل ہوپاتا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ دلت خواتین کے خلاف جنسی تشدد کے واقعات کم ہونے کا نام نہیں لے رہے ہیں۔

ج ا/ ر ب   (مرلی کرشنن)

ملتے جلتے موضوعات سیکشن پر جائیں

ملتے جلتے موضوعات

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ سیکشن پر جائیں

ڈی ڈبلیو کی اہم ترین رپورٹ

Pakistan Karatschi Premierminister Mian Shahbaz

ن لیگ نے عمران خان کی ’مشروط‘ مذاکرات کی پیشکش مسترد کر دی

ڈی ڈبلیو کی مزید رپورٹیں سیکشن پر جائیں
ہوم پیج پر جائیں