بھارت: قوانین مزید سخت لیکن گینگ ریپ پھر بھی جاری | معاشرہ | DW | 25.12.2015
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بھارت: قوانین مزید سخت لیکن گینگ ریپ پھر بھی جاری

شمالی بھارت میں پولیس ایک پندرہ سالہ لڑکی کے ساتھ اجتماعی زیادتی اور پھر اُس لڑکی کی ہلاکت کے ایک واقعے کی تحقیقات کر رہی ہے۔ اس واقعے پر مشتعل شہریوں کی جانب سے احتجاجی مظاہرے کیے جا رہے ہیں۔

Neu Delhi Protest Vergewaltigung Freilassung Indien

بھارت میں جنسی زیادتی کے بڑھتے ہوئے واقعات کے خلاف آئے روز شدید مظاہرے ہوتے رہتے ہیں

جرمن نیوز ایجنسی ڈی پی اے نے نئی دہلی سے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ یہ پندرہ سالہ لڑکی ایک اسکول طالبہ تھی۔ پولیس افسر ہیمراج مینا کے مطابق ریاست اُتر پردیش کے ضلع علی گڑھ کے ایک گاؤں کے قریب چار افراد نے اس طالبہ کو اُس کی بائیسکل سے کھینچ کر ا ُتارا اور اسے قریب ہی گنّے کے ایک کھیت میں لے جا کر پہلے اُسے جنسی زیادتی کا نشانہ بنایا اور پھر اُس کے گلے میں پھندا ڈال کر اُسے مار ڈالا۔

دیہاتیوں کو اس طالبہ کی لاش اگلے روز یعنی جمعرات کو ملی، جنہوں نے ملزمان کو پکڑنے کے لیے پولیس کی جانب سے کارروائی نہ کیے جانے پر احتجاجی مظاہرے شروع کر دیے۔ ان مظاہروں کے دوران پولیس کے چار اہلکار زخمی بھی ہو گئے۔

علی گڑھ پولیس کے چیف جے رویندر گاؤڈ نے صحافیوں سے باتیں کرتے ہوئے کہا کہ ’لڑکی کی موت کا سبب اُس کے پوسٹ مارٹم کے بعد ہی واضح ہو سکے گا‘۔ بتایا گیا ہے کہ اس واقعے کے سلسلے میں دو افراد سے پوچھ گچھ کی جا رہی ہے۔

بظاہر ایک اور جنسی جرم کے اس واقعے سے ایک ہی ہفتہ قبل بھارت میں دسمبر 2012ء میں رونما ہونے والے اجتماعی جنسی زیادتی کے ایک واقعے میں ملوث سب سے کم عمر ملزم کو جیل سے رہا کر دیا گیا تھا۔ اس رہائی پر بھارت بھر میں شدید احتجاج کیا گیا تھا۔

Indien Neu Delhi Kinder Vergewaltigungen Polizei Untersuchung

پولیس اس قتل کے سلسلے میں دو افراد سے پوچھ گچھ کر رہی ہے اور کہہ رہی ہے کہ لڑکی کے قتل کا سبب پوسٹ مارٹم سے ہی پتہ چل سکے گا (فائل فوٹو)

ابھی منگل کے روز ملکی پارلیمان نے ایک نئے قانون کی منظوری دی تھی، جس کے تحت ریپ یا قتل جیسے سنگین جرائم کے لیے آئندہ سولہ تا اٹھارہ سال کے نوجوانوں کو بھی بالغوں کے طور پر مقدمات کا سامنا کرنا پڑے گا۔