بھارتی روپیہ امریکی ڈالر کے مقابلے میں کم ترین سطح پر | معاشرہ | DW | 10.06.2013
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

بھارتی روپیہ امریکی ڈالر کے مقابلے میں کم ترین سطح پر

بھارتی روپیہ امریکی ڈالر کے مقابلے میں اپنی کم ترین سطح 54۔57 پرآ گیاہے، جو ایک نیا ریکارڈ ہے۔ دیگر ایشیائی کرنسیوں کی طرح مئی میں بھارتی روپے کی قدر میں سات فیصد کی کمی واقع ہوئی۔

کموڈٹیز اور کرنسیز کی ایسوسی ایٹ ڈائریکٹر نوین ماتھر کا کہنا ہے کہ ڈالر کی بڑھتی ہوئی قدر بھارتی روپے کو نقصان پہنچا رہی جبکہ اینجل بروکنگ کا کہنا تھا کہ بھارتی کرنسی یونٹ نے مسلسل کمزوری کا مظاہرہ کیا ہے۔

امریکی معیشت کی بہتری کے ساتھ ساتھ ایک بحث یہ بھی جاری ہے کہ امریکی فیڈرل ریزرو توقع سے جلد اپنے مونیٹری سٹیمیولس پروگرام کو ریورس کر سکتا ہے۔

بھارت کی کنسلٹنسی فرم فارکس ایڈوائزر کے چیف ایگزیکٹو ابھیشیک گوئنکا کے مطابق 2013ء کے آخر تک ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر 60۔59 تک پہنچ جائے گی اور قدر گرنے کا سلسلہ اسی طرح سے جاری رہے گا۔

تاجروں اور تجزیہ کاروں کی نظریں اب بھارت کے مرکزی ریزرو بینک کی طرف ہیں جن کا خیال ہے کہ اب اس ریزرو بینک کی ممکنہ مداخلت کی وجہ سے کرنسی کی قدر میں مزید کمی کو روکا جا سکتا ہے۔ کمزور کرنسی درآمدات کو مہنگا کر دیتی ہے خاص طور پر غیر ملکی تیل جس پر بھارت کا بہت انحصار ہوتا ہے۔

HSBC کے بھارتی یونٹ کے مینیجنگ ڈائریکٹر پردیپ کھنہ نے کہا ہے کہ باقی کرنسیوں کے مقابلے میں بھارتی روپیہ زیادہ تیزی سے کم ترین سطح پر آیا ہے۔

غیر ملکی سرمایہ کاروں نے بھی منڈیوں سے پیسہ باہر نکالنا شروع کر دیا ہے۔ تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ غیر ملکی سرمایہ کاری کے لیے ذخائر برقرار رکھنا بہت ضروری ہے۔ اس وقت ان ذخائر میں صرف سات ماہ کی درآمدات کے لیے رقم موجود ہے۔

hm/ai(AFP)

اشتہار