’بچوں سے جنسی زیادتی‘: پوپ کے معتمد کارڈینل پر مقدمہ چلے گا | حالات حاضرہ | DW | 01.05.2018
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

’بچوں سے جنسی زیادتی‘: پوپ کے معتمد کارڈینل پر مقدمہ چلے گا

ویٹیکن میں اب تک مالیاتی امور کے سربراہ کے طور پر خدمات انجام دینے والے سینئر کارڈینل اور پاپائے روم کے قریبی معتمد جارج پَیل کو اپنے وطن آسٹریلیا میں بچوں سے جنسی زیادتی کے الزامات کے تحت ایک عدالت میں پیش ہونا پڑے گا۔

کارڈینل جارج پَیل

کارڈینل جارج پَیل

آسٹریلیا سے منگل یکم مئی کو ملنے والی نیوز ایجنسی ایسوسی ایٹڈ پریس کی رپورٹوں کے مطابق میلبورن کی ایک عدالت نے اس کلیسائی رہنما پر بچوں سے جنسی زیادتیوں کے متعدد الزامات کا کئی ماہ تک جائزہ لینے کے بعد آج یہ حکم دیا کہ اس وقت 76 سالہ کارڈینل جارج پَیل کے خلاف انہی الزامات کے تحت باقاعدہ مقدمہ چلایا جانا چاہیے۔

نابالغ لڑکی کا ریپ: معروف بھارتی گرو کو تا دم مرگ سزا

نیپالی امن فوجیوں پر بچیوں سے جنسی زیادتی کا الزام

دنیا بھر کے کیتھولک مسیحیوں کے روحانی پیشوا پوپ فرانسس کے قریبی معتمد قرار دیے جانے والے کارڈینل پَیل کچھ عرصہ پہلے تک ویٹیکن کے مالیاتی امور کے سربراہ کے طور پر فرائض انجام دے رہے تھے تھے۔ انہیں بچوں سے جنسی زیادتیوں کے الزامات منظر عام پر آنے کے بعد رخصت پر بھیج دیا گیا تھا۔

ایسوسی ایٹڈ پریس کے مطابق کارڈینل پَیل ویٹیکن کے اب تک کے وہ اعلیٰ ترین عہدیدار ہیں، جنہیں اپنے خلاف بچوں کے جنسی استحصال اور زیادتیوں کے الزامات کا سامنا ہے اور اب انہیں آسٹریلیا کی ایک عدالت میں باقاعدہ طور پر ان الزامات کا جواب دینا ہو گا۔

Australien Kardinal George Pell vor Gericht in Melbourne

کارڈینل جارج پَیل میلبورن کی عدالت میں جاتے ہوئے

میلبورن میں ایک مجسٹریٹ کی عدالت کی طرف سے منگل کے روز کہا گیا کہ جارج پَیل پر الزام ہے کہ وہ عشروں پہلے ایک نوجوان پادری اور پھر آرچ بشپ کے طور پر بھی ایسے مبینہ جرائم کے مرتکب ہوئے، جس دوران انہوں نے کئی بچوں سے جنسی زیادتی کی۔

بھارت: بچوں کو ریپ کرنے والے مجرمان کے لیے سزائے موت کا آرڈینینس

مختلف شادیوں میں شریک تین بھارتی لڑکیوں کا ریپ کے بعد قتل

کارڈینل پَیل کے خلاف جنسی زیادتی کے ان الزامات کی کُل تعداد ظاہر نہیں کی گئی۔ تاہم یہ بات مصدقہ ہے کہ خاتون مجسٹریٹ بیلِنڈا ویلنگٹن نے گزشتہ کم از کم چار ہفتوں کے دوران مکمل کی گئی ابتدائی سماعت کے نتیجے میں جارج پَیل کے خلاف لگائے گئے نصف کے قریب الزامات کو مسترد کر دیا۔ تاہم کئی دیگر الزامات اتنے مضبوط تھے کہ عدالت کو یہ حکم دینا پڑا کہ کارڈینل پَیل کے خلاف ایک جیوری کی موجودگی میں باضابطہ مقدمہ چلایا جانا چاہیے۔

ویڈیو دیکھیے 03:02

بھارت میں ’ازدواجی جنسی زیادتی‘ ایک بڑا مسئلہ

کارڈینل پَیل کے خلاف باقاعدہ مقدمہ چلائے جانے کا فیصلہ سنانے سے قبل مجسٹریٹ نے جب عدالت میں موجود اس کلیسائی رہنما سے یہ پوچھا کہ وہ اپنے خلاف ان الزامات کے بارے میں کیا کہتے ہیں، تو جارج پَیل نے کہا، ’’میں بےقصور ہوں۔‘‘

دنیا کے اکثر ممالک میں عدالتوں کی طرح آسٹریلیا کی عدالتوں میں بھی یہی روایت ہے کہ ایسے حالات میں ملزمان کو کھڑے ہو کر عدالت کو اپنا موقف بیان کرنا ہوتا ہے، لیکن یکم مئی کے روز عدالت کی سربراہ نے جارج پَیل کو یہ اجازت دے دی کہ وہ اگر چاہیں تو بیٹھ کر بھی جواب دے سکتے تھے۔ اس پر 76 سالہ پَیل نے بیٹھے بیٹھے ہی عدالت کو یہ جواب دیا کہ وہ اپنے خلاف ان الزامات کی صحت سے انکاری ہیں۔ میلبورن میں آج کی عدالتی کارروائی کے حوالے سے یہ بات بھی اہم ہے کہ اپنا فیصلہ سنانے کے بعد جب خاتون جج کمرہ عدالت سے رخصت ہو گئیں، تو وہاں پبلک گیلری میں موجود بہت سے افراد نے تالیاں بجا کر مجسٹریٹ کے فیصلے کو سراہا۔

ویڈیو دیکھیے 01:19

آٹھ سالہ آصفہ کا ریپ اور قتل، بھارت سراپا احتجاج

آج کی عدالتی کارروائی کے دوران عام لوگوں کا ایک بڑا ہجوم عدالت کے باہر راہگیروں کے لیے مختص راستے پر جمع ہو گیا تھا، جہاں امن عامہ کی صورت حال کو قابو میں رکھنے کے لیے درجنوں باوردی پولیس اہلکار بھی تعینات تھے۔

جرمنی: بچوں کے ساتھ جنسی زیادتی، سابق پادری مجرم قرار

زینب قتل کیس: ملزم عمران علی پر فرد جرم عائد

کارڈینل پَیل آسٹریلیا میں کیتھولک چرچ کے اعلیٰ ترین رہنما ہیں اور ان کے وکلاء کے مطابق ان کے خلاف لگائے گئے تمام الزامات غلط ہیں، جنہیں ثابت نہیں کیا جا سکتا۔ پَیل کے خلاف کئی افراد کے ساتھ جنسی زیادتی کے یہ الزامات گزشتہ برس جون میں آسٹریلوی ریاست وکٹوریہ میں عائد کیے گئے تھے۔

م م / ع س / اے پی

DW.COM

Audios and videos on the topic

ملتے جلتے مندرجات