بنگلہ دیش میں پارلیمانی انتخابات، اپوزیشن کو دھاندلی کا خدشہ | حالات حاضرہ | DW | 29.12.2018
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

بنگلہ دیش میں پارلیمانی انتخابات، اپوزیشن کو دھاندلی کا خدشہ

اتوار تیس دسمبر بنگلہ دیش میں عام انتخابات کا دن ہے۔ حسینہ شیخ تیسری مدتِ کے لیے وزیراعظم بننے کے لیے پرامید ہیں۔ ان کی مرکزی حریف خالدہ ضیاء کرپشن الزام کے تحت سزائے قید بھگت رہی ہیں۔

اتوار تیس دسمبر کے انتخابات کے حوالے سے اپوزیشن جماعتٰوں کو خدشہ لاحق ہے کہ حکمران سیاسی جماعت اپنی کامیابی کے لیے منفی ہتھکنڈوں کو استعمال کرنے سے گریز نہیں کرے گی۔  حکومت مخالف سیاسی اتحاد کے رہنما کمال حسین نے اس مناسبت سے ہفتہ انتیس دسمبر کو ایک پریس کانفرنس کے دوران کہا کہ سب سے بڑا خوف اتوار کے انتخابات کے حوالے سے پرتشدد حالات کا پیدا ہونا ہے اور دوسرا ووٹ ڈالنے کے عمل کو سازباز سے متاثر کیا جانا ہے۔

کمال حسین نے اپنی پریس کانفرنس میں کہا کہ حسینہ شیخ کی سیاسی جماعت عوامی لیگ کی قیادت میں قائم اتحاد نے پولنگ اسٹیشنوں پر متعین عملے کو خاص ہدایت کی ہے کہ وہ بیلٹ پیپرز پر مہریں لگا کر بیلٹ بکسوں کو بھریں، تاکہ بڑی کامیابی ممکن ہو سکے۔ اس مناسبت سے عوامی لیگ کی جانب سے کوئی ردعمل سامنے نہیں آیا ہے۔

کمال حسین کی جونو فورم نامی سیاسی جماعت، اس وقت بنگلہ دیش نیشنلسٹ پارٹی کی سربراہ اور سابق وزیراعظم خالدہ ضیا کی عدم موجودگی میں اپوزیشن کو قیادت فراہم کیے ہوئے ہے۔

Bangladesch Dhaka Polizei sichert Vorbereitungen für Parlamentswahl (Imago/Zumapress/K. Salahuddin Razu)

بنگلہ دیش میں پارلیمانی انتخابات سے قبل ممکنہ تشدد کے پیش نظر سکیورٹی سخت کر دی گئی ہے

کمال حسین خود بھی اپوزیشن کے انتخابی اتحاد ’جاتیا اوکیا فرنٹ‘ کی قیادت سنبھالے ہوئے ہیں۔ حسین نے اپنے حامیوں کو تلقین کی ہے کہ وہ الیکشن کے دن اپنا حق رائے دہی ہر ممکن انداز میں استعمال کریں۔

بنگلہ دیش میں پارلیمانی انتخابات سے قبل ممکنہ تشدد کے پیش نظر سکیورٹی سخت کر دی گئی ہے۔ خبر رساں اداروں کے مطابق آج ہفتہ 29 دسمبر کو ملک بھر میں چھ لاکھ سکیورٹی اہلکار تعینات کر دیے گئے ہیں۔ توقع ہے کہ وزیر اعظم شیخ حسینہ کی عوامی لیگ یہ انتخابات جیت لے گی۔

انتخابی مہم کے دوران حکمران عوامی لیگ اور مرکزی اپوزیشن بنگلہ دیش نیشنلسٹ پارٹی کے حامیوں کے مابین ہونے والی جھڑپوں کے نتیجے میں تیرہ افراد ہلاک جبکہ ہزاروں زخمی ہوئے۔ دوسری جانب اپوزیشن کا الزام ہے کہ اس کے خلاف ریاستی کریک ڈاؤن کیا جا رہا ہے تاہم ڈھاکا حکومت اسے پر زور انداز میں مسترد کرتی ہے۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات