’برفانی انسان‘ دراصل ریچھ کی ایک قسم ہے، تحقیق | سائنس اور ماحول | DW | 29.11.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

’برفانی انسان‘ دراصل ریچھ کی ایک قسم ہے، تحقیق

محقیقین نے دنیا بھر کے عجائب گھروں اور نجی افراد کے پاس موجود Yeti یا ’برفانی انسانوں‘ کی باقیات کا جائزہ لینے کے بعد کہا ہے کہ ان میں زیادہ تر محض ریچھ تھے۔

بدھ انتیس نومبر کے روز شائع ہونے والے ایک تحقیقی مقالے میں بتایا گیا ہے کہ Yeti، جنہیں برفیلے انسان یا پہاڑی انسان بھی کہا جاتا ہے، در حقیقت محض ریچھ تھے۔ سلسلہ کوہ ہمالیہ میں نیپال، بھوٹان اور تبت کے کئی علاقوں کے مکین ’پہاڑی انسانوں‘ کو ایک حقیقت سمجھتے ہیں تاہم سائنسدانوں کے نزدیک ان کی حقیقت محض افسانوی ہے۔

خلائی جہاز تین برس بعد جاگ اٹھا

حال ہی میں سائنسدانوں نے دنیا کے مختلف عجائب گھروں اور نجی ملکیت میں موجود نو ایسے ہی ’برفانی انسانوں‘ کی باقیات کی ہڈیوں، دانتوں، پنجوں اور بالوں کے نمونے حاصل کر کے ان کا مفصل جائزہ لیا۔ اس تحقیق کے نتائج کے مطابق یہ باقیات زیادہ تر ریچھوں کی ایک نسل اور ایک کتے کی ہیں۔

Fotos von Fußabdrücken des Yeti vor Versteigerung 2007 (picture-alliance/dpa)

کئی افراد اور گروہ ان افسانوی جانور نما انسانوں کے قدموں کے نشانات دیکھنے کا دعویٰ بھی کر چکے ہیں

سائنسی تحقیق کرنے والے گروپ کی سربراہ اور یونیورسٹی آف بفیلو کالج آف آرٹس اینڈ سائنس سے وابستہ ایسوسی ایٹ پرفیسر شارلٹ لُنڈکویسٹ کا کہنا تھا، ’’ہماری تحقیق اس بات کا عندیہ دیتی ہے کہ ’برفانی انسان‘ کے اس افسانوی کردار کا حیاتیاتی ماخذ در حقیقت مقامی ریچھوں میں پایا جاتا ہے۔‘‘

ان باقیات کا جائزہ لیے جانے کے بعد بتایا گیا ہے کہ جن باقیات کو ’برفانی یا پہاڑی انسان‘ سے منسوب کیا جا رہا ہے وہ در اصل کالے ایشیائی ریچھ، تبت کے بھورے ریچھ اور ہمالیہ میں پائے جانے والے بھورے ریچھ کی ہیں۔

رائل سوسائٹی جنرل کے ’پروسیڈنگز بی‘ میں شائع ہونے والا یہ تحقیقی مقالہ اب تک اس موضوع پر کی گئی تحقیق میں سب سے جامع ہے جس میں تبت، بھارت اور نیپال سے کالے، بھورے اور برفانی ریچھوں کے ڈی این اے کے نمونے بھی حاصل کیے گئے تھے۔

یٹی یا پہاڑی انسان کو سلسلہ کوہ ہمالیہ کے کئی ممالک کے باسی ایک حقیقت سمجھتے ہیں اور کئی افراد اور گروہ ان افسانوی جانور نما انسانوں کے قدموں کے نشانات دیکھنے کا دعویٰ بھی کر چکے ہیں۔

پروفیسر لُنڈکویسٹ کے مطابق دوران تحقیق اپنی بقا کے خطرے سے دوچار اس جانور کے بارے میں کئی اہم معلومات بھی سامنے آئی ہیں۔ نیوز ایجنسی اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے بتایا، ’’تبت کے سطح مرتفع پر پائے جانے والے بھورے ریچھ اور مغربی ہمالیہ کے پہاڑوں میں رہنے والے بھورے ریچھوں کی نسلیں ایک دوسرے سے مختلف ہیں۔‘‘

اس مطالعے سے حاصل کردہ نتائج کی بنیاد پر خاتون پروفیسر نے بتایا کہ ریچھوں کی یہ دو مختلف اقسام ساڑھے چھ لاکھ برس قبل گلیشیئر پگھلنے کے عمل کے باعث ایک دوسرے سے جدا ہو گئی تھیں۔

گرین لینڈ کی برف انتہائی تیزی سے پگھلتی ہوئی

DW.COM

اشتہار