برطانیہ: ایک ٹرک سے انتالیس لاشیں برآمد | حالات حاضرہ | DW | 23.10.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

برطانیہ: ایک ٹرک سے انتالیس لاشیں برآمد

برطانوی پولیس کو جنوب مشرقی علاقے ایسکس میں ایک ٹرک سے انتالیس لاشیں ملی ہیں۔ اس موقع پر ٹرک ڈرائیور کو قتل کے شبے میں حراست میں لے لیا گیا ہے۔

برطانوی پولیس نے آج بدھ کو بتایا ہے کہ یہ ٹرک ممکنہ طور پر بلغاریہ سے آیا تھا اور  یہ مشرقی لندن کے واٹر گیٹ صنعتی علاقے میں کھڑا ہوا تھا۔ وہاں پر موجود ایمبولنس ورکرز نے اس ٹرک کی موجودگی کی اطلاع پولیس کو دی تھی۔

مزید بتایا گیا ہے کہ اس ٹرک کے پچیس سالہ ڈرائیور کو گرفتار کر لیا گیا ہے اور اس کا تعلق شمالی آئرلینڈ سے ہے۔ ایسکس پولیس کے چیف سپریڈنڈنٹ اینڈریو میرینر نے بتایا،''  اتنی بڑی تعداد میں لوگوں کا اپنی جانیں کھونے کا یہ بہت ہی افسوس ناک واقعہ ہے۔ہنگامی سروس فوری پہنچی تاہم جائے وقوعہ پر ہی انتالیس افراد کی ہلاکت کی تصدیق کر دی گئی تھی۔‘‘

پولیس نے اڑتیس بالغ افراد اور ایک نابالغ کے قتل کے جرم میں تحقیقات شروع کر دی ہیں۔ میرینر نے مزید بتایا،'' ہمیں شک ہے کہ یہ ٹرک بلغاریہ سے آیا تھا اور ہولی ہیڈ نامی علاقے سے انیس اکتوبر بروز ہفتہ برطانیہ میں داخل ہوا تھا۔ ہم اپنے ساتھیوں کے ساتھ تفتیش جاری رکھے ہوئے ہیں۔‘‘

Archivbild | Großbritannien - Hafen von Holyhead zu 39 Leichen in LKW gefunden (picture-alliance/empics/D. Jones)

آئر لینڈ اور برطانیہ کے درمیان ہولی ہیڈ کا بندرگاہی قصبہ بہت اہمیت کا حامل ہے

بلغاریہ کی وزرات خارجہ نے ابھی تک یہ تصدیق نہیں کی ہے کہ اس ٹرک نے بلغاریہ کے کس علاقے سے اپنے سفر کا آغاز کیا تھا،'' ہم ابھی تک برطانوی ذرائع ابلاغ میں چھپنے والی اطلاعات کا جائزہ لے رہے ہیں اور ہم حکام سے رابطے میں ہیں۔

اس دوران واٹر گیٹ صنعتی پارک کے علاقے کے گرد حصار باندھ گیا ہے اور کسی کو وہاں داخلے کی اجازت نہیں دی جا رہی۔ میرینر  کے بقول،'' مرنے والوں کی شناخت کا عمل جاری ہے اور ممکنہ طور پر اس کام میں زیادہ وقت لگ سکتا ہے۔‘‘

برطانوی وزیراعظم بورس جانسن نے اس واقعے پر افسوس کا اظہار کیا ہے۔ ان کے بقول وہ ایسکس پولیس کے ساتھ رابطے میں ہیں۔ اسی طرح برطانوی وزیر داخلہ پریتی پاٹل نے بھی اس واقعے کو حیران کن اور افسوسناک قرار دیا ہے۔

ع ا ⁄ ع ح (اے ایف پی، ڈی پی اے)

ویڈیو دیکھیے 02:09

ایک اور بچہ جنسی تشدد کا شکار

DW.COM

Audios and videos on the topic