اٹلی کااقتصادی بحران، نئی حکومت کے لیے ایک چیلنج | حالات حاضرہ | DW | 10.11.2011
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

اٹلی کااقتصادی بحران، نئی حکومت کے لیے ایک چیلنج

اطالوی سیاستدان، وزیراعظم سلویو برلسکونی کی طرف سے مستعفی ہونے پر آمادگی کے بعد ان کے متبادل کے منتظر ہیں۔ اس کی ایک بنیادی وجہ اس وقت اٹلی کواقتصادی طور پر درپیش مشکلات اور مارکیٹ کی بد ترین صورتحال بھی ہے۔

اطالوی وزیراعظم سلویو برلسکونی

اطالوی وزیراعظم سلویو برلسکونی

اطالوی صدر جارجوناپولیتانو کی جانب سےاقتصادی صورتحال کی بہتری کے تمام اقدامات ناکام ہو چکے ہیں اور اٹلی کے قرضے اس حد تک بڑھ چکے ہیں کہ مزید فنڈنگ کا حصول نا ممکن دکھائی دیتا ہے۔ موجودہ بد ترین معاشی صورتحال کے باعث یورو زون کے مستقبل کو بھی خطرات لاحق ہیں۔

اطالوی صدر نے یقین دہانی کرائی ہے کہ اقتصادی مارکیٹ سے متعلق اصلاحات کی پارلیمنٹ سے منظوری کے بعد متنازعہ وزیراعظم برلسکونی اپنا عہدہ چھوڑ دیں گے۔ انہوں نے کہا کہ وہ وقت ضائع کیے بغیر یا تو ایک نئی حکومت کا قیام عمل میں لائیں گے یا پھر نئے انتخابات منعقد کرائیں گے۔ اٹلی میں مارکیٹ کی بہتری کے اقدامات پہلے ہی سے شدید تاخیر کا شکار ہیں اور یورپ کی اس تیسری بڑی اقتصادی قوت کے قرضے اس سطح تک بڑھ چکے ہیں جہاں آئرلینڈ اوریونان کو بھی بیل آوٹ پیکج کا سہارا لینے پر مجبور ہو نا پڑا ہے۔

Italien Mario Monti

میریو مونٹی کو اٹلی میں ایک قابل احترام ماہر اقتصادیات کا درجہ حاصل ہے

اطالوی صدر جارجوناپولیتانو نے سابق یورپی کمشنر میریو مونٹی کی سینیٹر کی حیثیت سے تقرری کی ہے۔ ان کے اس اقدام سے اطالوی مبصرین کا کہنا ہے کہ وزیراعظم برلسکونی کی رخصتی کے بعد جلد ہی مونٹی کو ٹیکنوکریٹس پر مشتمل حکومت بنانے کی دعوت دی جائے گی۔ مونٹی کو اٹلی میں ایک قابل احترام ماہر اقتصادیات کا درجہ حاصل ہے اور اس سے پہلے بھی وہ ملک میں اقتصادی صورتحال کی بہتری کے لیے کوشاں رہے ہیں۔ اگر ان کی حکومت برسراقتدارآئی تو یہی امید وابستہ کی جا رہی ہے کہ مارکیٹ فرینڈلی اصلاحات متعارف کروائی جائیں گی۔

اطالوی پارلیمان کے ایوان زیریں کے اسپیکر جین فرینکو فینی Gianfranco Fini نے اس حوالے سے کہا ہے کہ اقتصادی ترقی اور موجودہ صورتحال کی بہتری کے لیے پارلیمنٹ آئندہ اتوار تک اصلاحات کی منظوری دے دے گی۔ ان اصلاحات کا وزیراعظم سلویو برلسکونی نے گزشتہ ماہ وعدہ کیا تھا اور برلسکونی کے ‌حکومت چھوڑنے سے قبل ان کی حکومت کی یہ آخری پارلیمانی کاروائی ہو گی۔ برلسکونی کی برسراقتدار پارٹی کے سیکرٹری اینجیلینو الفانو نے اس حوالے سے بتایا کہ وزیراعظم برلسکونی آئندہ ہفتے اور سوموار کے درمیان کسی بھی دن اپنا عہدہ چھوڑ دیں گے۔

یورپی کمیشن نے بھی اٹلی پر زور دیا ہے کہ 2013ء کے بجٹ کو متوازن بنانے کے لیے اٹلی کی جانب سے کیے گیے وعدوں پر عمل درآمد کو یقینی بنانے کے لیے عملی اقدامات کیے جائیں۔

رپورٹ شاہد افراز خان

ادارت افسر اعوان

DW.COM