اوباما اور جِن پِنگ سائبر سکيورٹی کے ليے کام کرنے پر متفق | حالات حاضرہ | DW | 08.06.2013
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اوباما اور جِن پِنگ سائبر سکيورٹی کے ليے کام کرنے پر متفق

امريکی رياست کيليفورنيا ميں امريکا اور چين کے درميان دو روزہ مذاکرات کے آغاز پر امريکی صدر باراک اوباما نے اپنے چينی ہم منصب شی جِن پِنگ کے ہمراہ دونوں ممالک کے مابين تعاون بڑھانے پر روز ديا ہے۔

امريکا اور چين کے درميان اس سربراہی اجلاس کے افتتاحی روز امريکی صدر نے سائبر سکيورٹی يا انٹرنيٹ سے متعلق سکيورٹی کے حوالے سے دونوں ممالک کے ليے مشترکہ قوانين پر زور ديا۔ اوباما نے اس معاملے کے حل کو ’لازمی‘ قرار ديا۔ اس موقع پر امريکی صدر نے حقوق ملکيت دانش کے حوالے سے بھی اپنے اعتراضات کا اظہار کيا۔ قبل ازيں چينی رہنماء نے اپنے خيالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ان کا ملک بھی ’سائبر اٹيکس‘ يا انٹرنيٹ سائٹس پر کيے جانے والے حملوں يا ’ہيکنگ‘ سے متاثر ہو رہا ہے۔

اوباما اور جِن پِنگ کے مابين سَنی لينڈز نامی ايک ریزارٹ ميں منعقدہ ايک عشائيے پر ہونے والی يہ ملاقات قريب دو گھنٹے تک جاری رہی۔ اس ملاقات ميں صدر باراک اوباما نے جِن پِنگ کو خوش آمديد کہا اور دونوں ملکوں کے مابين تعاون بڑھانے پر بھی زور ديا۔ انہوں نے کہا، ’’اگرچہ دونوں ممالک کے درميان تنازعات موجود ہيں تاہم پچھلے چار برسوں ميں ميں نے يہی سيکھا اور سمجھا ہے کہ دونوں ملکوں کے عوام طاقتور اور تعاون پر مبنی رشتہ چاہتے ہيں۔‘‘ اوباما کے بقول دونوں صدور اس بات سے بخوبی واقف ہيں کہ عالمی مسائل کے حل کے ليے چين اور امريکا کا ايک دوسرے کے ساتھ تعاون کرنا دونوں ہی کے مفاد ميں ہے۔

واشنگٹن اور بيجنگ ايک دوسرے پر سائبر اٹيکس کا الزام عائد کرتے ہيں

واشنگٹن اور بيجنگ ايک دوسرے پر سائبر اٹيکس کا الزام عائد کرتے ہيں

اس موقع پر چينی رہنما کا کہنا تھا کہ يہ ايک تاريخی موڑ ہے۔ انہوں نے کہا، ’’جب ميں نے گزشتہ سال امريکا کا دورہ کيا تھا تو ميں نے کہا تھا کہ بحر الکاہل اتنا وسيع کے کہ دو عالمی طاقتيں امريکا اور چين، دونوں ہی اس خطے ميں اپنی جگہ بنا سکتے ہيں۔‘‘

اس ملاقات ميں اگرچہ امريکی صدر نے چين کے پر امن انداز ميں ايک عالمی طاقت کے طور پر ابھرنے کے عمل کو سراہا البتہ انہوں نے سائبر سکيورٹی اور چين ميں انسانی حقوق کی مبينہ پامالی کے حوالے سے اپنے اعتراضات کا اظہار بھی کيا۔ صدر اوباما نے آزاد تجارت کی ضرورت پر بھی زور ديا۔

توقع ہے کہ دو روزہ مذاکرات ميں ان مسائل کے علاوہ شمالی و جنوبی کوريا کے درمیان تنازعہ اور سمندری حدود کی ملکيت سے متعلق معاملات بھی زير بحث آئيں گے۔

as/aba (AFP)

اشتہار