امریکا نے داخلی معاملے میں مداخلت کی ہے، ایران | حالات حاضرہ | DW | 04.01.2018
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

امریکا نے داخلی معاملے میں مداخلت کی ہے، ایران

ایران نے امریکا پر الزام عائد کیا ہے کہ وہ اُس کے داخلی معاملے میں مداخلت کا مرتکب ہوا ہے۔ دوسری جانب پاسدارانِ انقلاب کے سربراہ نے کہا ہے کہ ملک میں پیدا بغاوت کی صورت حال بدھ تین جنوری سے ختم ہو کر رہ گئی ہے۔

اقوام متحدہ میں ایران کے سفیر غلام علی خوش رُو نے ایران کے داخلی معاملے میں مداخلت کا یہ الزام لگایا ہے۔ انہوں نے اس تناظر میں سلامتی کونسل کے صدر اور اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل انتونیو گوٹیرش کو ایک خط بھی ارسال کیا ہے۔ اس خط میں انہوں نےمختلف شہروں میں ہونے والے مظاہروں میں شرکاء کو عملی حمایت فراہم کرنے کا الزام بھی لگایا۔ ایران میں ہونے والے مظاہروں میں ہونے والی ہلاکتیں اکیس تک پہنچ چکی ہیں۔

ایران میں حالیہ احتجاج اور سن دو ہزار نو کے مظاہروں کا تقابل

ایران: پُر تشدد مظاہروں کے بعد اب حکومت کی حمایت میں ریلیاں

بدامنی کے لیے رقوم، ہتھیار ایران کے دشمنوں نے دیے، خامنہ ای

مظاہرین کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے، ایرانی مذہبی رہنما

غلام علی خوش رو نے نے یہ بھی کہا کہ ایرانی معاملات میں مداخلت کر کے امریکا نے بین الاقوامی قانون کی کھلی خلاف ورزی کی ہے۔ دوسری جانب وائٹ ہاؤس نے عندیہ دیا ہے کہ ایران میں مظاہرین پر کریک ڈاؤن کرنے والوں پر امکاناً سفری اور اقتصادی پابندیاں عائد کی جا سکتی ہیں۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے اپنے تازہ ٹویٹ میں ایرانی عوام کے لیے ایک مرتبہ پھر عزت و احترام کا اظہار کرتے ہوئے واضح کیا کہ یہ عوام اب کرپٹ ایرانی حکومت کی حمایت کو مزید جاری رکھنا نہیں چاہتے۔ ٹرمپ نے یہ بھی کہا کہ مناسب وقت پر امریکا کی جانب سے ایرانی عوام کے لیے بڑی حمایت کا اعلان بھی ممکن ہے۔

Iran Protest Sicherheitskräfte (FARS)

پاسدارانِ انقلاب نے کہا ہے کہ غاوت کی صورت حال بدھ تین جنوری سے ختم ہو کر رہ گئی ہے

اسی دوران ایک اور پیش رفت یہ ہے کہ ایران کے پاسدارانِ انقلاب کے سربراہ جنرل محمد علی جعفری نے کہا ہے کہ ملک کے اندر پائی جانے والی بغاوت پر اب قابو پا لیا گیا ہے۔ جنرل کی جانب سے پاسدارانِ انقلاب کی ویب سائٹ پر جاری کردہ بیان میں کہا گیا کہ باضابطہ طور پر اعلان کیا جا سکتا ہے کہ بغاوت کو اب مکمل طور پر ختم کر دیا گیا ہے۔

اُدھر ایران کی نوبل انعام یافتہ انسانی حقوق کی سرگرم کارکن شیرین عبادی نے اپنے ملک کی عوام سے کہا ہے کہ وہ ایرانی حکومت کے خلاف مظاہروں کے سلسلے کو ختم مت کریں اور انہیں جاری رکھیں۔ عبادی کا بیان عربی اخبار الشرق الاوسط میں شائع ہوا ہے۔ انہوں نے ایرانی عوام سے کہا ہے کہ اپنے حقوق کے لیے سڑکوں پر احتجاج کے سلسلے کو مزید آگے بڑھائیں۔ انسانی حقوق کی خاتون وکیل نے اپنے عوام سے یہ بھی کہا کہ وہ پانی، گیس اور بجلی کے بل ادا کرنے بند کرتے ہوئے شہری نافرمانی کی تحریک شروع کریں۔

ویڈیو دیکھیے 01:41
Now live
01:41 منٹ

ایران میں احتجاجی مظاہروں کی موبائل ویڈیو

DW.COM

Audios and videos on the topic

اشتہار