اقوام متحدہ کے عہدیدار حوثی باغیوں کا ساتھ دے رہے ہیں، سعودی اتحاد | حالات حاضرہ | DW | 29.12.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

اقوام متحدہ کے عہدیدار حوثی باغیوں کا ساتھ دے رہے ہیں، سعودی اتحاد

سعودی قیادت میں عرب عسکری اتحاد نے الزام عائد کیا ہے کہ یمن میں عام شہری ہلاکتوں کے حوالے سے اقوام متحدہ کے انسانی بنیادوں پر امداد کے شعبے کے اعلیٰ عہدیدار کا جھکاؤ حوثی باغیوں کی جانب ہے۔

جمعے کے روز سعودی ٹی وی چینلز العربیہ کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اقوام متحدہ کے انسانی بنیادوں پر امداد کے شعبے کے یمن کے لیے کوآرڈینیٹر جیمی  مک گولڈرِک اس تنازعے کی بات اس انداز کے بیانات دے رہے ہیں، جن کا جھکاؤ بہ ظاہر ایران نواز شیعہ حوثی باغیوں کی جانب ہے۔

حوثی باغیوں کے پاس بیلسٹک میزائل کیسے آئے؟

سعودی شاہی محل پر میزائل حملہ جنگ کا نیا باب ہے، حوثی باغی

یمنی باغیوں کے لیے ایرانی میزائل: حوثیوں کی تردید

مک گولڈرِ ک نے گزشتہ روز اپنے ایک بیان میں کہا تھا کہ یمن میں ایک ہی دن سعودی اتحاد کی جانب سے دو شہروں میںکی جانے والی فضائی کارروائیوں میں 68 عام شہری ہلاک ہوئے۔ ان کا کہنا تھا کہ یمن کی ’مبہم جنگ میں کوئی بھی فریق انسانی جان کی تکریم کرتا نظر نہیں آتا۔‘

سعودی عسکری اتحاد کے ترجمان ترکی المالکی نے کہا کہ مک گولڈرِک کا بیان ’گم راہ کن‘ اور ’جانب دارانہ‘ ہے اور یہ اصل میں ایران نواز حوثی باغیوں کو فائدہ پہنچانے کا حصہ ہے۔

سعودی ٹی وی چینل العربیہ پر جاری کردہ بیان میں المالکی نے کہا، ’’جو معلومات گولڈرِک نے پیش کی ہیں وہ غیرمصدقہ اور غیرثابت شدہ ہیں۔ اس سے واضح ہوتا ہے کہ وہ انسانی بنیادوں پر امداد کا استعمال کر کے حوثی باغیوں کے لیے جانب داری کا مظاہرہ کر رہے ہیں۔‘‘

المالکی نے مزید کہا، ’’اقوام متحدہ یمن میں انسانی بنیادوں پر امداد کے نظام پر نظرثانی کرے اور اپنے اہلکاروں کی کارکردگی میں اضافے کی کوشش کرے۔‘‘

مک گولڈرک نے جمعرات کو اپنے بیان میں کہا تھا کہ منگل کے روز یمن کے جنوب مغربی صوبے تعز میں سعودی اتحاد کے جنگی طیاروں کے حملے میں آٹھ بچوں سمیت 54 عام شہری مارے گئے۔ منگل ہی کو مغربی صوبے حدیدہ میں ایک فضائی حملے میں ایک ہی خاندان کے 14 افراد ہلاک ہوئے تھے۔

اپنے بیان میں اقوام متحدہ کے انسانی بنیادوں پر امداد کے شعبے کے کوآرڈینٹر نے کہا تھا، ’’یہ واقعات بتاتے ہیں کہ تمام فریق بہ شمول سعودی اتحاد اس مبہم جنگ میں انسانی جان کی تکریم کو مکمل طور پر نظرانداز کر رہے ہیں۔‘‘

ویڈیو دیکھیے 11:20
Now live
11:20 منٹ

’عورت کی مشقت کی نہ اُجرت نہ ہی گنتی‘

یہ بات اہم ہے کہ گزشتہ دو برس سے زائد عرصے سے سعودی عرب یمن میں ایران نواز شیعہ حوثی باغیوں کے خلاف عسکری کارروائیوں کی قیادت کر رہا ہے۔ سعودی عرب کو خدشات ہیں کہ یمن میں حوثی باغیوں کی مضبوطی سے خطے میں ایرانی اثر و رسوخ میں اضافہ ہو سکتا ہے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic