افغانستان میں امریکی فوجی گاڑی پر حملہ | حالات حاضرہ | DW | 11.01.2020
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

افغانستان میں امریکی فوجی گاڑی پر حملہ

افغانستان میں تعینات امریکی فوج کی گاڑی پر حملہ کیا گیا ہے۔ مغربی دفاعی اتحاد نیٹو نے اس حملے کی تصدیق کر دی ہے تاہم ہلاکتوں کے بارے میں کوئی بیان جاری نہیں کیا گیا ہے۔ طالبان نے اس کارروائی کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔

خبر رساں ادارے ڈی پی اے نے ہفتے کے سکیورٹی ذرائع کے حوالے سے بتایا کہ قندھار کے ہوائی اڈے کے نزدیک امریکی افواج کی ایک گاڑی پر حملہ کیا گیا ہے۔ مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کے ریزولوٹ سپورٹ مشن نے کہا ہے کہ حملے کی بعد کی صورتحال کا جائزہ لیا جا رہا ہے۔ مزید کہا گیا کہ یہ جاننے کی کوشش کی جا رہی ہے کہ آیا اس کارروائی میں کوئی ہلاکت ہوئی ہے؟

طالبان جنگجوؤں نے اس پرتشدد کارروائی کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ طالبان نے ایک ٹویٹ میں کہا ہے کہ یہ حملہ جنوبی صوبے قندھار میں کیا گیا ہے۔ اس ٹویٹ میں یہ دعویٰ بھی کیا گیا کہ 'امریکی حملہ آوروں‘ کی گاڑی کو دھماکے کا نشانہ بنایا گیا ہے۔ مزید کہا گیا کہ اس حملے کے نتیجے میں گاڑی تباہ ہو گئی اور اس میں سوار تمام فوجی مارے گئے۔

دوسری طرف خبر رساں ادارے روئٹرز نے اپنے ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ یہ امریکی گاڑی سڑک کنارے نصب ایک بم کی زد میں آ کر تباہ ہوئی ہے۔ قندھار صوبے کے ایک سینیئر افغان اہلکار نے روئٹرز کو بتایا کہ یہ کارروائی داند ڈسٹرکٹ میں کی گئی۔

عراق میں کیے گئے ایک امریکی حملے میں ایرانی جنرل قاسم سلیمانی کی ہلاکت مشرق وسطیٰ میں کشیدگی کا باعث بنی ہے۔ سکیورٹی ماہرین کے مطابق اس نئی پرتناؤ صورتحال میں افغانستان میں بھی تشدد بڑھ سکتا ہے۔ اسی تناظر میں افغان صدر اشرف غنی بھی کہہ چکے ہیں کہ افغان سرزمین کو کسی کے خلاف استعمال نہیں ہونے دیا جائے گا۔

گزشتہ برس افغانستان میں جنگی کارروائی کے دوران ہلاک ہونے والے امریکی فوجیوں کی تعداد بیس تھی۔ اس وقت افغانستان میں تعینات امریکی فوجیوں کی تعداد تقریبا بارہ ہزار ہے۔ سن دو ہزار میں اس شورش زدہ ملک میں تقریبا ایک لاکھ فوجی تعینات تھے۔ انیس برسوں سے جاری افغان فوجی مشن کے دوران اب تک مجموعی طور پر چوبیس سو امریکی فوجی لقمہ اجل بن چکے ہیں۔

ع ب / ع ت/ خبر رساں ادارے

DW.COM