افغانستان: ’اربوں ڈالر کی امداد کے باوجود تعمیر نو نامکمل‘ | حالات حاضرہ | DW | 01.02.2017
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

افغانستان: ’اربوں ڈالر کی امداد کے باوجود تعمیر نو نامکمل‘

افغانستان کے لیے امداد کے نگران ایک امریکی ادارے SIGAR (اسپیشل انسپکٹر جنرل فار افغان ری کنسٹرکشن) کے مطابق اربوں ڈالر کی امداد کے باوجود وہاں تعمیر نو کا عمل کمزور اور نامکمل ہے۔

Afghanistan Taliban Kämpfer (Getty Images/AFP/J. Tanveer)

افغان طالبان اور دیگر باغی گروپ ملک میں پہلے سے کہیں زیادہ علاقوں کو کنٹرول کرتے جا رہے ہیں اور اپنا دائرہٴ اثر بڑھا رہے ہیں

اس طرح اِس ادارے نے نئے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی انتظامیہ کو دی جانے والی اپنی پہلی رپورٹ میں افغانستان میں تعمیر نو کے حوالے سے ہونے والی پیش رفت کی ایک تاریک تصویر پیش کی ہے۔ اس رپورٹ میں اس امر کی طرف اشارہ کیا گیا ہے کہ افغان حکومت کو مشکل سے آدھے ملک پر کنٹرول حاصل ہے، اس کی سکیورٹی فورسز کی نفری کم ہوتی جا رہی ہے اور منشیات کی پیداوار بڑھ رہی ہے۔ مزید یہ کہ منشیات کے خاتمے کی کوششیں کمزور پڑتی جا رہی ہیں۔

نیوز ایجنسی اے ایف پی نے افغان دارالحکومت کابل سے اپنے ایک جائزے میں اس رپورٹ کے ایک مثبت نکتے کی طرف اشارہ کرتے ہوئے لکھا ہے کہ افغانستان میں ساز و سامان اور خدمات کی خریداری میں کی جانے والی بدعنوانی نمایاں طور پر کم ہوئی ہے۔ افغان صدر اشرف غنی نے 2014ء کے انتخابات کے بعد برسرِاقتدار آتے ہی کرپشن کے خلاف ایک ملک گیر مہم شروع کر دی تھی۔

John Sopko U.S. Special Inspector General for Afghanistan Reconstruction Archiv 2008 (Getty Images/A. Wong)

اسپیشل انسپکٹر جنرل فار افغان ری کنسٹرکشنز آفس جان سوپکو

اسپیشل انسپکٹر جنرل فار افغان ری کنسٹرکشنز آفس جان سوپکو نے دو سو انہتّر صفحات پر مشتمل اپنی یہ رپورٹ بدھ یکم فروری کو جاری کی ہے اور اس امر کی طرف توجہ دلائی ہے کہ ہر تین مہینے بعد تیار کی جانے والی یہ رپورٹ بیس جنوری کو نئے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے برسرِاقتدار آنے کے بعد سے سامنے آنے والی اپنی نوعیت کی پہلی رپورٹ ہے۔ مزید یہ کہ واشنگٹن حکومت سن 2002ء  سے اب تک افغانستان میں تعمیرِ نو اور دیگر منصوبوں کے لیے مجموعی طور پر ایک سو سترہ ارب ڈالر فراہم کر چکی ہے اور نئی امریکی انتظامیہ کے لیے اس امداد اور اس کے نتائج کو جانچنے کا یہ ایک اچھا موقع ہے۔

صرف گزشتہ تین ماہ کے دوران ہی جان سوپکو کے دفتر نے اپنی تحقیقات کے نتیجے میں ہوٹل اور رہائشی اپارٹمنٹس پر مشتمل ایک بڑی عمارت بنانے کا ننانوے ملین ڈالر کا ایک کنٹریکٹ اس بناء پر منسوخ کر دیا کہ افغان کنٹریکٹرز کو ادائیگی نہیں کی جا رہی تھی۔ اس تعمیراتی منصوبے کے لیے زیادہ تر مالی وسائل امریکا کی حکومت اور نجی اداروں نے فراہم کیے تھے۔

اسپیشل انسپکٹر جنرل فار افغان ری کنسٹرکشنز آفس کا قیام 2008ء میں ایسی رپورٹوں کے بعد عمل میں آیا تھا کہ افغانستان میں امریکی اور افغان کنٹریکٹرز کی بدعنوانی اور بد انتظامی کی وجہ سے امریکی ٹیکس دہندگان کے کروڑوں ڈالر ضائع  ہو رہے ہیں۔ سوپکو نے اپنی رپورٹ میں کہا ہے کہ پندرہ سال کا عرصہ گزرنے اور اربوں ڈالر کی سرمایہ کاری کے باوجود اس ملک میں تعمیر نو کا عمل کمزور اور نامکمل ہے: ’’باغیوں کی پیشقدمی کو روکنے کے لیے افغان فوج کو ڈونرز کے مسلسل تعاون کے ساتھ ساتھ امریکی فوج کی تربیت اور محدود مدد بھی بدستور درکار ہے۔‘‘

US Soldaten in Afghanistan (Getty Images/AFP/N. Shirzada)

’’باغیوں کی پیشقدمی کو روکنے کے لیے افغان فوج کو ڈونرز کے مسلسل تعاون کے ساتھ ساتھ امریکی فوج کی تربیت اور محدود مدد بھی بدستور درکار ہے‘‘

افغانستان مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کی اڑسٹھ سالہ تاریخ کا سب سے بڑا اور طویل ترین آپریشن ہے تاہم سوپکو کا کہنا ہے کہ افغان نیشنل آرمی کی نفری کم ہوتی جا رہی ہے جبکہ باغی پہلے سے کہیں زیادہ علاقوں کو کنٹرول کرتے جا رہے ہیں اور اپنا دائرہٴ اثر بڑھا رہے ہیں۔

’ایشیا فاؤنڈیشن‘ کے ایک سروے کے حوالے سے اس رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ زیادہ تر افغان یہ سمجھتے ہیں کہ اُن کا ملک غلط سمت میں جا رہا ہے۔ اقوام متحدہ کے مطابق 2008ء  سے ریکارڈ رکھے جانے کے بعد سے صرف گزشتہ سال ہی تنازعات کی وجہ سے نصف ملین سے زائد افغانوں کو اپنے گھر بار چھوڑنے پڑے۔

گزشتہ ہفتے افغان وزارتِ دفاع نے بتایا تھا کہ پچھلے دَس ماہ کے دوران باغیوں نے اُنیس ہزار حملے کیے جبکہ اِسی عرصے کے دوران افغان سکیورٹی فورسز نے بغاوت کے انسداد کے لیے تقریباً سات سو آپریشن کیے۔

Afghanistan Drogenanbau (Noorullah Shirzada/AFP/Getty Images)

2016ء میں افغانستان میں صرف 355 ہیکٹر (877 ایکڑ) یعنی گزشتہ دَس سال میں سب سے کم رقبے پر کھڑی پوست کی فصلیں تباہ کی گئیں

اس رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ جہاں پہلے ملک کا 63.4 فیصد علاقہ افغان حکومت کے کنٹرول میں تھا، وہاں اب یہ علاقہ کم ہو کر محض 57.2 فیصد رہ گیا ہے۔ افغان وزارتِ دفاع کے ترجمان دولت وزیری نے اس دعوے کو غلط قرار دیتے ہوئے کہا ہے کہ کابل حکومت کو بدستور ملک کے تمام چونتیس صوبوں پر کنٹرول حاصل ہے۔

طالبان نے اپنے دورِ حکومت کے آخری برسوں میں منشیات کی پیداوار پر پابندی لگا دی تھی جبکہ طالبان کی حکومت ختم ہونے کے ساتھ ہی منشیات کی پیداوار میں بہت زیادہ اضافہ ہو گیا تھا۔ امریکی ادارے SIGAR کی رپورٹ کے مطابق 2015ء کے مقابلے میں 2016ء میں افیون کی پیداوار میں تینتالیس فیصد اضافہ ریکارڈ کیا گیا۔ ایک اندازے کے مطابق 2016ء میں افغان کاشتکاروں نے پوست کے پودوں سے تقریباً چار ہزار آٹھ سو ٹن افیون تیار کی۔

پوست کی فصل تباہ کرنے کے سرکاری اقدامات میں بھی کمی آئی ہے۔ اقوام متحدہ کے مطابق 2016ء میں صرف 355 ہیکٹر (877 ایکڑ) رقبے پر پھیلی پوست کی فصلیں تباہ کی گئیں، جو کہ گزشتہ دَس سال میں سب سے کم رقبہ تھا۔