’آر ایس ایس کے وزیر اعظم نے بھارت ماتا سے جھوٹ بولا ہے‘ | حالات حاضرہ | DW | 26.12.2019
  1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages
اشتہار

حالات حاضرہ

’آر ایس ایس کے وزیر اعظم نے بھارت ماتا سے جھوٹ بولا ہے‘

بھارت میں شہریت سے متعلق نئے قانون کے خلاف احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے تاہم حکومت اپنے موقف پر ڈٹی ہوئی ہے اور اس نے مظاہرین پر پولیس کے مبینہ تشدد کو درست قرار دیا ہے۔

شمالی بھارت میں شدید سردی کی لہر کے باوجود  دارالحکومت دہلی اور کولکتہ میں احتجاجی مظاہرے ہوئے ہیں۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ میں شہریت ترمیمی ایکٹ کے خلاف گزشتہ دو ہفتوں سے مظاہرے جاری ہیں جبکہ شاہین باغ کے علاقے میں لوگوں کی ایک بڑی تعداد رات بھر دھرنے پر بیٹھتی ہے۔

ادھر ریاست مغربی بنگال کی وزیر اعلی ممتا بنر جی نے اس قانون کے خلاف کولکتہ میں ایک بار پھر سے ایک بڑی ریلی کی قیادت کی ہے،جس میں لاکھوں لوگ شامل ہوئے۔ اس موقع پر ممتا نے کہا، ’’کسی سے خوف کھانے کی ضرورت نہیں ہے۔ میں بی جے پی کو خبردار کرتی ہوں کہ وہ آگ سے نہ کھیلے۔ اور میں ہمیشہ آپ کا ساتھ دوں گی۔‘‘

 حیدرآباد اور  بنگلور جیسے متعدد دیگر شہروں میں بھی آج احتجاجی مظاہرے ہو رہے ہیں۔ بنارس ہندو یونیورسٹی کے درجنوں پرفیسروں نے اس قانون کی مخالفت میں ایک مہم چلانے کا اعلان کیا ہے جس کے تحت وہ گھر گھر جا کر لوگوں کو آگاہ کریں گے اور اس قانون کے خلاف لوگوں کی دستخط  لیں گے۔   

ممتنا بنرجی سمیت کئی ریاستوں کے وزارا پہلے ہی یہ اعلان کر چکے ہیں کہ مرکزی حکومت کے اس قانون کو وہ اپنی ریاستوں میں نافذ نہیں کریں گے۔ حزب اختلاف کی بیشتر جماعتوں، ملک کے سرکردہ دانشوروں، مورخین، سماجی کارکنان اور بہت سے اساتذہ کی جانب سے بھی اس قانون کی مخالفت ہو رہی ہے لیکن اس بارے میں حکومت کی طرف سے ابھی تک کوئی بیان جاری نہیں ہوا۔

ادھر کانگریس پارٹی کے رہنما راہول گاندھی نے اس حوالے سے ایک بار پھر سے وزیر اعظم نریندر مودی پر سخت نکتہ چینی کی ہے۔  انہوں نے حراستی مراکز کی تعمیر سے متعلق وزیراعظم نریندر مودی کے بیان کو گمراہ کن بتاتے ہوئے کہا ہے کہ مودی نے ملک سے جھوٹ بولا ہے۔ چند روز قبل وزیر اعظم نے اپنے ایک خطاب میں ان خبروں  کی ترید کی تھی کہ حکومت غیر قانونی تارکین وطن کے لیے حراستی مراکز کی تعمیر کر رہی ہے۔ اس پر راہول گاندھی نے اپنے ٹویٹر اکاؤنٹ پر ایک ویڈیو پوسٹ کی ہے جس میں حراستی مراکز کی تعمیر کو دیکھا جا سکتا ہے۔ انہوں نے لکھا، ’’آر ایس ایس کے وزیر اعظم نے بھارت ماتا سے جھوٹ بولا ہے۔" 

اس برس کے اوائل میں حکومت نے حراستی مراکز بنانے کا کام شروع کیا تھا اور آسام سمیت کئی ریاستوں میں ایسے سینٹر تعمیر ہو رہے ہیں۔ ان مراکز میں ان افراد کو رکھنے کی تجویز ہے جو دستاویزات نہ ہونے کی بنا پر نیشنل شہریت رجسٹر میں اپنا نام نہیں درج کر سکیں گے۔ اس پر بھارتی میڈیا میں بہت سی خبریں آ چکی ہیں اور تعمیرات کی ویڈیوز بھی ہر جگہ دستیاب ہیں۔ حزب اختلاف کی جماعتیں اس بات سے نالاں ہیں کہ جب حکومت کے خرچ سے یہ حراستی مراکز تعمیر ہو رہے ہیں تو وزیراعظم خود اس کا انکار کیسے کر سکتے ہیں؟

وزیراعظم نریندر مودی اور ان کی جماعت بی جے پی کا الزام ہے کہ شہریت ترمیمی ایکٹ کے خلاف احتجاجی مظاہرے کانگریس پارٹی کی ایما پر ہو رہے ہیں۔ نریندر مودی مظاہرین پر نکتہ چینی کرتے رہے ہیں لیکن اپنے حالیہ بیانات میں انہوں نے ان پر شدید تنقید کی ہے۔ انہوں نے کہا، ’’شہریت ترمیمی ایکٹ کے بعد سے جس طرح لوگ مظاہرہ کر رہے ہیں اور سرکاری املاک کو نقصان پہنچا رہے ہیں، کیا اس کا کوئی جواز ہے؟ لوگوں کو اس بارے میں سوال پوچھنا چاہیے۔‘‘

مظاہرین پر پولیس کے زبردست تشدد  اور بے جا طاقت کے استعمال کی ہر جانب سے مذمت ہو رہی ہے لیکن وزیراعظم نے پولیس کی تعریف کی، ’’لوگوں کو پولیس کی عزت کرنے کی ضرورت ہے۔ وہ ان کے تحفظ کے لیے ہے، حق کی ایک حد ہوتی ہے لیکن ذمہ داری اور فرائض کا دائرہ وسیع ہوتا ہے۔‘‘

وزیر داخلہ امیت شاہ نے بھی آج دہلی کے مظاہروں پر ناراضی کا اظہار کیا اور کہا کہ اب وقت آ گیا ہے کہ جو لوگ دہلی میں افرا تفری کے ذمہ دار ہیں انہیں سبق سکھایا جائے۔ ان کا کہنا تھا کہ کانگریس اور اس کی اتحادی جماعتوں کے اشاروں پر جو مظاہرے ہو رہے ہیں، ان سے بد امنی پھیل رہی ہے اور عوام کو چاہیے کہ وہ انہیں سبق سکھائے۔

 بھارتی فوج کے سربراہ بپن راؤت نے بھی پرتشدد مظاہروں کی مذمت کرتے ہوئے کہا ہے کہ وہ کوئی لیڈر شپ نہیں ہے جو پر تشدد مظاہروں کی قیادت کرے۔ کانگریس پارٹی نے اس پر اپنے سخت رد عمل میں کہا کہ فوجی سربراہ کو اس طرح کے سیاسی بیانات سے گریز کرنا چاہیے۔