1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

سائنس اور ماحول

DVD سے ہزار گنا زیادہ گنجائش والی ڈِسک

جاپانی محققین کی ایک ٹیم نے ایک ایسا مادہ دریافت کیا ہے، جسے استعمال کرتے ہوئے کم قیمت والی ایک ایسی سُپر ڈِسک تیار کی جا سکے گی، جس میں ڈیٹا سٹور کرنے کی گنجائش موجودہ ڈی وی ڈی سے ہزار گنا زیادہ ہو گی۔

default

ٹوکیو یونیورسٹی کے کیمسٹری کے پروفیسر شِن اِیچی اوکوشی نے بتایا کہ یہ مادہ ٹائیٹینیم آکسائیڈ کی نئی کرسٹل یا قلمی شکل ہے، جو ابتدا میں سیاہ رنگ کی دھاتی حالت میں ہوتی ہے۔ جب اِس پر روشنی پڑتی ہے تو یہ بھورے رنگ کے سیمی کنڈکٹر میں بجلی منتقل کرتی ہے۔ یہ مادہ روشنی پڑنے کی صورت میں بار بار کبھی اپنی دھاتی حالت میں چلا جاتا ہے اور کبھی سیمی کنڈکٹر والی حالت میں آ جاتا ہے۔ یُوں آن اور آف (Off) کی سہولت کے ہوتے ہوئے ڈیٹا سٹور کرنے کا ایک مؤثر عمل وجود میں آ جاتا ہے۔

ایک ایسے مادے کو، جو روشنی پڑنے پر اپنا رنگ تبدیل کر لیتا ہو، ڈیٹا سٹور کرنے کے مختلف طریقوں میں استعمال کیا جا سکتا ہے کیونکہ ہر رنگ روشنی کو الگ طریقے سے منعکس کرتا ہے اور یُوں مختلف معلومات ذخیرہ کرنے کی سہولت فراہم ہو جاتی ہے۔ ٹوکیو یونیورسٹی کے محققین کی ٹیم اِس مادے کو انتہائی چھوٹے سائز کے ذرات میں تبدیل کرنے میں کامیاب ہو گئی ہے۔ اِن ذرات کا قطر پانچ تا بیس نینو میٹر ( ایک میٹر کا پانچ ارب واں تا بیس ارب واں حصہ) بتایا گیا ہے۔

Blueray DVD

اگر اس دھات سے کوئی ڈسک وجود میں آجاتی ہے تو وہ بلو رے ڈسک سے بھی ہزار ہا گنا زیادہ ڈیٹا ذخیرہ کر سکے گی

اگر اِن میں سے سب سے چھوٹے سائز کے ذرے کو استعمال کرتے ہوئے ایک نئی سُپر ڈِسک بنائی جائے تو وہ آج کل استعمال ہونے والی بلُو رے ڈِسک سے ایک ہزار سے زیادہ گنا زیادہ معلومات ذخیرہ کر سکتی ہے، بشرطیکہ اِس طرح کے ڈیٹا کو لکھنے پڑھنے والے متعلقہ آلات تیار کر لئے جائیں۔ سنگل لیئر والی ایک بلُو رے ڈِسک عام ڈی وی ڈی سے پانچ گنا زیادہ ڈیٹا سٹور کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے۔

پروفیسر اوکوشی بتاتے ہیں کہ جس مادے (جرمینیم اینٹی منی ٹیلوریم) سے آج کل کے بلُو رے ڈِسک اور ڈی وی ڈی تیار کئے جاتے ہیں، اُس کے مقابلے میں ٹائیٹینیم آکسائیڈ کی قیمت ایک سو گنا کم ہے۔ اُن کا کہنا ہے کہ ’یہ نیا مادہ سستا ہونے کے ساتھ ساتھ محفوظ بھی ہے اور ابھی سے فیس پاؤڈر سے لے کر سفید پینٹ تک مختلف مصنوعات میں استعمال بھی ہو رہا ہے۔‘

پروفیسر اوکوشی نے کہا، وہ نہیں جانتے کہ اِس مادے کی مدد سے کوئی ڈِسک کب تک بن کر تیار ہو سکے گی اور کب تک عملی استعمال میں آ سکے گی۔ اُنہوں نے کہا کہ وہ اِس مادے کو کاروباری بنیادوں پر تیار کرنے کے سلسلے میں عنقریب نجی شعبے کے اداروں کے ساتھ بات چیت شروع کرنے والے ہیں۔ اِس نئی تحقیق کے نتائج برطانوی جریدے ’نیچر کیمسٹری‘ کے آن لائن ایڈیشن پر جاری کئے گئے ہیں۔

رپورٹ : امجد علی

ادارت : عاطف توقیر

DW.COM