1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

9،000 تارکینِ وطن کو سمندر برد ہونے سے بچا لیا گیا

اقوامِ متحدہ کے ادارہ برائے مہاجرین کا کہنا ہے کہ اس ہفتے کے اختتام پر  9،000 تارکین وطن کو بحیرہ روم میں ڈوبنے سے بچا لیا گیا ہے۔ یو این ایجنسی کے مطابق ان مہاجرین میں زیادہ تر کا تعلق افریقہ سے تھا۔

Mittelmeer - Flüchtlinge - Boot (Getty Images/M. Bicanski)

انسانوں کے اسمگلر شکستہ کشتیوں میں ان تارکین وطن کو بین الاقوامی پانیوں تک لے آتے ہیں

مہاجرین کے اُمور سے متعلق اقوامِ متحدہ کی ایجنسی یو این ایچ سی آر نے آج بروز منگل بتایا ہےکہ بچائے جانے والے مہاجرین بحری سفر کے لیے نا موزوں کشتیوں پر سوار تھے جو لیبیا سے اٹلی کے جنوبی ساحلوں کے لیے روانہ ہوئی تھیں۔

 یو این ایچ سی آر کے ترجمان بابر بلوچ نے ایک نیوز بریفنگ میں بتایا،’’ یہ ہر لحاظ سے ایک زبردست ریسکیو آپریشن تھا۔‘‘

 عالمی ادارہ برائے مہاجرین کے ترجمان لیونارڈ ڈویل کا کہنا ہے کہ موسمِ بہار کی آمد کے باعث لیبیا سے انسانی اسمگلنگ میں اضافے کی بڑی وجہ موسم کا خوشگوار ہونا ہے۔ ڈویل کے مطابق اس سال اب تک بحیرہ روم کے راستے یورپ جانے کی کوشش میں قریب 900 تارکینِ وطن ڈوب کر ہلاک ہوئے ہیں جبکہ 36،000 مہاجرین کو ڈوب کر ہلاک ہونے سے بچایا گیا۔ گزشتہ سال امدادی کارروائیوں میں بچائے جانے والے پناہ گزینوں کی تعاد 24،000 تھی۔

غیرقانونی طور پر یورپ پہنچنے کی کوشش کرنے والوں کے لیے لیبیا اس وقت ایک اہم مرکز بنا ہوا ہے، جہاں کسی موثر اور فعال حکومت کی عدم موجودگی کی وجہ سے انسانوں کے اسمگلر سرگرم ہیں۔ روئٹرز کے مطابق گزشتہ تین برسوں میں اوسطاﹰ ڈیڑھ لاکھ افراد نے انہی سمندری راستوں کو استعمال کر کے اٹلی کا رخ کیا ہے۔

یہ بات بھی اہم ہے کہ انسانوں کے اسمگلر شکستہ کشتیوں میں ان تارکین وطن کو بین الاقوامی پانیوں تک لے آتے ہیں، جب کہ یہاں سے امدادی کشتیاں انہیں ریسکیو کر کے اطالوی جزائر پر پہنچا دیتی ہیں۔ تاہم لیبیا کے کوسٹ گارڈز بعض کشتیوں کو روک کر تارکین وطن کو واپس لیبیا لے جاتے ہیں۔

DW.COM