1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یہ دھمکی نہیں حقیقت ہے، کم جونگ اُن

کم جونگ ان کے بقول شمالی کوریا نے 2017ء کے دوران جوہری اور میزائل ٹیکنالوجی میں نمایاں پیش رفت کی ہے۔ سال نو کے اپنے پیغام میں انہوں نے کہا کہ اب ان ہتھیاروں کی بڑے پیمانے پر تیاری پر توجہ دینے کا وقت آ گیا ہے۔

شمالی کوریا کے صدر کم جونگ ان نے سال نو کے اپنے پیغام میں جوہری حملے کی دھمکی دی ہے۔ ان کے بقول جوہری بم کا بٹن ہمیشہ ان کی میز پر ہوتا ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ یہ دھمکی نہیں بلکہ حقیقت ہے۔ کم جونگ اُن کے بقول ان کے ملک کو جوہری ہتھیار اور میزائل بڑے پیمانے پر تیار کرنے اور تنصیب کرنے کے عمل کو لازمی طور پر تیز کرنا ہو گا، ’’شمالی کوریا  کسی بھی طرح کے امریکی جوہری خطرے سے نمٹ سکتا ہے اور  ہماری جوہری صلاحیت امریکا کو آگ سے کھیلنے سے روک سکتی ہے۔‘‘

اپنے اس خطاب میں ان نے اپنے حریف ملک جنوبی کوریا کے لیے خیر سگالی کا ایک بھی پیغام بھیجا۔ انہوں نے دونوں ممالک سے فوجی تناؤ میں کمی اور باہمی روابط کو بہتر کرنے کے لیے کہا۔ کم جونگ ان کے بقول فروری میں جنوبی کوریا میں ہونے والے سرمائی اولمپکس کھیلوں میں شمالی کوریا کا دستہ بھیجا جا سکتا ہے، ’’ونٹر اولمپکس میں شمالی کوریا کی شرکت  لوگوں کے مابین اتحاد کے اظہار کا ایک بہترین موقع ہے اور ہم اِن کھیلوں کی کامیابی کے لیے دعا گو ہیں۔‘‘

عالمی سطح پر تنہائی کے شکار شمالی کوریا نے گزشتہ برس ستمبر میں ہائیڈروجن بم کا تجربہ کیا تھا۔ اس بارے میں جاپانی حکام کا دعوی ہے کہ یہ بم 160کلو ٹن وزنی تھا۔ یہ بم اس بم سے دس گناہ زیادہ طاقت رکھتا تھا، جسے امریکا نے 1945ء میں جاپانی شہر ہیروشیما پر گرایا تھا۔

ہائیڈروجن بم کا کامیاب تجربہ کر لیا، شمالی کوریا کا دعویٰ

شمالی کوریا امریکا سے مذاکرات چاہتا ہے، جنوبی کوریا

شمالی کوریا کو اقوام متحدہ کی نئی اقتصادی پابندیوں کا سامناامریکا جزیرہ نما کوریا میں کشیدگی کا باعث ہے، شمالی کوریا

 

DW.COM