1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یونان کے بحران پر میرکل کی ’مایوسی‘

جرمن چانسلر انگیلا میرکل نے کہا ہے کہ یورو زون کے جمعرات کو ہونے والے ہنگامی اجلاس میں یونان کے مالیاتی بحران کا حل نکلتا دکھائی نہیں دیتا۔

default

جرمن چانسلر انگیلا میرکل

انہوں نے روس کے صدر دیمتری میدویدیف سے ملاقات کے بعد جرمنی کے شمالی شہر ہینوور میں ایک نیوز کانفرنس سے خطاب میں کہا کہ یونان کے قرضے کو از سر نو ترتیب دینے جیسی کوئی ’شاندار‘ پیش رفت نہیں ہوگی۔

میرکل نے کہا: ’’جمعرات کا دِن اس میں مددگار ثابت ہو گا، لیکن مزید اقدامات کرنے ہوں گے۔‘‘

یورو زون کا ہنگامی اجلاس جمعرات کو ہو رہا ہے، جس میں یونان کے لیے دوسرے بیل آؤٹ منصوبے پر اتفاق رائے کی کوشش کی جائے گی۔

یونان کے لیے نئی مالی مدد میں نجی سرمایہ کاروں کو شامل کرنے پر یورپین سینٹرل بینک (ای سی بی) اور جرمنی کے درمیان اختلافات رہے ہیں۔ ای سی بی ایسا نہیں چاہتا جبکہ جرمنی، فِن لینڈ اور ہالینڈ اس اس مطالبے پر زور دے رہے ہیں۔

میرکل نے یہ بھی کہا کہ حکومتوں کو اپنے قرضے کم کرنے اور مقابلہ سازی کو بڑھانے کی ضرورت ہے۔

باراک اوباما سے گفتگو:

انگیلا میرکل نے منگل کو امریکی صدر باراک اوباما سے بھی ٹیلی فون پر بات کی۔ وائٹ ہاؤس کے مطابق دونوں رہنماؤں نے اتفاق کیا کہ مالیاتی بحران سے مؤثر طور پر نمٹنا یورپ میں پائیدار اقتصادی بحالی اور عالمی معیشت کے لیے ضروری ہے۔

Obama während der Rede an die Nation

امریکی صدر باراک اوباما

اُدھر جرمنی کے اعلیٰ اقتصادی مشیروں (فائیو وائز مین) نے یونان کے قرضے کے جزوی ڈیفالٹ کی سفارش کی ہے۔ ان کا کہنا ہے کہ یونان کے موجودہ اسٹیٹ بانڈز پر پچاس فیصد کا ڈسکاؤنٹ بہتر ہوگا، جو یونان کے قرضے کو جی ڈی پی کے ایک سو ساٹھ فیصد سے ایک سو چھ فیصد تک لے جا سکتا ہے۔

میرکل نے یہ بھی واضح کیا ہے کہ وہ اس حوالے سے جمعرات تک کوئی معاہدہ مذاکرات کی میز پر چاہتی ہیں۔ آج (بدھ کو) جرمن دارالحکومت برلن میں فرانسیسی صدر نکولا سارکوزی سے یورو زون کے ہنگامی اجلاس پر گفتگو کے لیے بھی ان کی ملاقات متوقع ہے۔ اس بات کا اعلان فرانس کے صدارتی ذرائع نے منگل کو کیا۔

رپورٹ: ندیم گِل/خبر رساں ادارے

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM

ویب لنکس