1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یونان کا مالیاتی بحران: مزید بچت، نئے مظاہرے

یونانی وزیر اعظم گیورگوس پاپاندریو کے بقول ملک کو مکمل دیوالیہ پن سے بچانے کے لئے ان کی حکومت کو آئندہ دنوں اور ہفتوں میں معاشی طور پر انتہائی ’تکلیف دہ نوعیت‘ کے مزید بچتی اقدامات کرنا ہوں گے۔

default

وزیر اعظم پاپاندریو نے جمعہ کی شام ایتھنز میں ملکی پارلیمان سے اپنے خطاب میں کہا کہ یہ ان کی حکومت کی سیاسی اور اخلاقی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ داخلی سیاسی نتائج سے قطع نظر ملک کی مالیاتی اور اقتصادی صورت حال کو بہتر بنانے کے لئے تمام ضروری اقدامات کرے۔

یونانی وزیر اعظم کے مطابق ان کی حکومت کے بہت سخت بچتی اقدامات عام شہریوں کے لئے نئے مسائل کی وجہ بن رہے ہیں، تاہم وہ یہ بھی جانتے ہیں کہ ’’جو کچھ آج کیا جارہا ہے، وہ اگر نہ کیا گیا، تو آنے والے کل کے دن یونانی ریاست کو اس کی اور بھی زیادہ قیمت چکانا پڑے گی۔‘‘

NO FLASH Symbolbild Griechenland Finanzen

یونان کے بحران کے سبب یورپی یونین کی مشترکہ کرنسی یورو بھی دباؤ کا شکار ہے

یونان میں عوام کی معاشی تکالیف میں اضافے کا باعث بننے والے ایسے حکومتی اقدامات کے خلاف جمعرات کو ہونے والے عوامی مظاہرے پر تشدد رنگ اختیار کر گئے تھے۔ آج یکم مئی کے روز بھی وہاں کارکنوں کی تنظیموں نے حکومت کے مالیاتی فیصلوں کے خلاف وسیع تر احتجاج کا اعلان کر رکھا ہے۔ اسی سلسلے میں آئندہ ہفتے بدھ کے روز یونان میں ایک بار پھر ملک گیر ہڑتال بھی کی جائے گی۔

اسی دوران یورپی یونین کے رکن ملک یونان کی مدد کے لئے تیار کیا جانے والا بین الاقوامی امدادی پیکیج بتدریج حتمی شکل اختیار کرتا جا رہا ہے۔ اب جرمنی کے کئی بینک، انشورنس کمپنیاں اور صنعتی ادارے بھی مجموعی طور پر اربوں مالیت کی رقوم کے ساتھ یونان کی مالی مدد کے عمل میں رضاکارانہ طور پر شامل ہونے پر آمادہ ہو گئے ہیں۔

برلن میں وفاقی جرمن پارلیمان میں کئی سیاسی پارٹیوں نے یونان کی مالی مدد کے سلسلے میں جرمن حکومت کی طرف سے خصوصی قانون سازی کی کوششوں کی اپنی طرف سے حمایت کو اس امر سے مشروط کر دیا تھا کہ اس کے لئے صرف جرمن ٹیکس دہندگان ہی کی رقوم استعمال نہ کی جائیں بلکہ اس عمل میں جرمن بینک اور دیگر مالیاتی ادارے بھی شامل ہوں۔

George Papandreou in Davos

یونانی وزیر اعظم گیورگوس پاپاندریو

جرمنی میں مختلف سیاسی جماعتوں کے پارلیمانی گروپوں کی طرف سے یونان کو ہنگامی قرضوں کے طور پر دی جانے والی جرمن رقوم کی حمایت سے متعلق یہ شرط اس لئے رکھی گئی تھی کہ یہ پارٹیاں اس بات کی خلاف تھیں کہ ان قرضوں اور ان کی آئندہ واپسی کے سلسلے میں تمام تر مالیاتی خطرات کا سامنا صرف جرمن ٹیکس دہندگان کو ہی کرنا پڑے۔

ایتھنز حکومت نے بین الاقوامی مالیاتی فنڈ IMF، یورپی مرکزی بینک ECB اور یورپی کمیشن کے ساتھ یونان کے لئے مالی امداد کی جو تفصیلات طے کی ہیں، ان کا زیادہ سے زیادہ کل اتوار کے روز تک منظور کیا جانا لازمی ہے۔ اسی سلسلے میں یورپی یونین کے یورو زون میں شامل ملکوں کے وزرائے خزانہ کا ایک خصوصی اجلاس کل اتوار کو برسلز میں ہو گا، جس میں اس امدادی پیکیج کے بارے میں حمتی مشاورت کی جائے گی۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM