1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

یونان: مہاجرین کے ایک دوسرے پر لوہے کی سلاخوں سے حملے

یونان کے شمالی ایجیئن کے علاقے میں واقع شیوس جزیرے پر پناہ گزینوں کے درمیان جمعرات کی شب لڑائی ہوئی جس میں مہاجرین نے ایک دوسرے پر لوہے کی سلاخوں سے حملہ کرتے ہوئے پتھراؤ بھی کیا۔

Griechenland Flüchtlinge protestieren auf Chios (Getty Images/AFP/L. Gouliamaki)

یونانی ریڈیو پر واقعے کے کچھ چشم دید گواہان نے بتایا ہے کہ مہاجرین میں سے کچھ شراب کے نشے میں دھت تھے

یونان کے آن لائن اخبارات ’آلیتھیا‘ اور ’پولیتیس‘ کی رپورٹوں کے مطابق یہ دنگا فساد افغانستان اور الجزائر سے تعلق رکھنے والے پناہ گزینوں  کے درمیان ہوا۔ اس لڑائی کے نتیجے میں کئی تارکینِ وطن معمولی زخمی بھی ہوئے جبکہ ایک خاتون اور ایک بچے کو علاج کے لیے جزیرے پر قائم ہسپتال لے جانا پڑا۔

یہ ہنگامہ اس وقت اختتام پذیر ہوا، جب پولیس کی بھاری نفری وہاں پہنچی۔ جھگڑے کی وجہ ابھی تک غیر واضح ہے تاہم یونانی ریڈیو پر واقعے کے کچھ چشم دید گواہان نے بتایا ہے کہ مہاجرین میں سے کچھ شراب کے نشے میں دھت تھے۔

 بہت سی فلاحی تنظیمیں اور علاقے کے رہائشی شیوس جزیرے میں قائم سوڈا کیمپ کی صورتِ حال پر کئی ماہ سے تشویش کا اظہار کر رہے ہیں۔ اُن کا کہنا ہے کہ کیمپ کی صورتِ حال نا مناسب اور غیر تسلی بخش ہے۔ یہاں مقیم تارکینِ وطن یونان میں پناہ حاصل کرنے کی کوشش کر رہے ہیں تاکہ انہیں واپس ترکی نہ بھیجا جائے۔ تاہم پناہ کی درخواستوں پر کام بہت سست روی سے ہو رہا ہے۔

خیال رہے کہ پاکستان، افغانستان، شام اور دیگر ممالک سے تعلق رکھنے والے ہزاروں تارکین وطن یورپی یونین اور ترکی کے مابین معاہدہ طے پانے کے بعد سے یونانی جزیروں پر پھنسے ہوئے ہیں اور مسلسل انتظار نے ان لوگوں کے صبر کا پیمانہ لبریز کر دیا ہے۔

DW.COM

Audios and videos on the topic