1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یونانی جزیرے لیزبوس پر پولیس، تارکین وطن کے مابین تصادم

یونان کے کئی شہروں میں مہاجرین اور تارکین وطن کی وجہ سے صورتحال تناؤ کا شکار ہے۔ آج منگل کے روز لیزبوس کے جزیرے پر پولیس اور سینکڑوں تارکین وطن کے مابین تصادم کی بھی اطلاعات ہیں۔

خبر رساں ادارے ڈی پی اے کے مطابق جزیرے لیسبوس میں صورتحال اس وقت کشیدہ ہو گئی، جب بڑی تعداد میں مہاجرین نے ایک مسافر کشتی میں سوار ہونے کی کوشش کی۔ اس فیری میں صرف ڈھائی ہزار افراد کی گنجائش تھی جبکہ مہاجرین اس سے کہیں زیادہ تھے۔ تاہم جیسے ہی پولیس نے ان افراد کو کشتی میں سوار ہونے سے روکا تو حالات بگڑ گئے۔ عینی شاہدین کے مطابق اس موقع پر پولیس نے لاٹھی چارج بھی کیا۔ تاہم اس واقعے میں کسی کے زخمی ہونے کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔

حکام کے بقول فیری کو تارکین وطن کی ایک بڑی تعداد کے ساتھ ہی روانہ کر دیا گیا۔ بتایا گیا ہے کہ یہ کشتی دارالحکومت ایتھنز کے قریب پیریئس کے بندرگاہی مقام پر آج منگل کے روز کسی وقت پہنچ رہی ہے۔

Griechenland Syrische Flüchtlinge auf Lesbos Fähre nach Athen

حکام کے بقول فیری کو تارکین وطن کی ایک بڑی تعداد کے ساتھ ہی روانہ کر دیا گیا

اسی دوران تقریباً سترہ سو تارکین وطن کو لے کر ایک اور فیری آج لیزبوس کے ساحلوں پر لنگر انداز ہو گی۔ اطلاعات کے مطابق آج کل تقریباً چھ ہزار شامی مہاجرین اس جزیرے پر موجود ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر ترکی کے راستے یونان پہنچے ہیں۔ اس دوران ایتھنز حکومت نے اعلان کیا ہے کہ مہاجرین کو ملک کے دیگر علاقوں تک پہنچانے کے لیے مزید دو بحری جہاز استعمال کیے جائیں گے۔

یونان میں متعدد جزائر پر مہاجرین کی بڑی تعداد میں آمد کی وجہ سے بحران کی سی صورتحال ہے۔ مقامی انتظامیہ کے پاس وسائل کی کمی کے باعث ان افراد کو شدید مشکلات کا بھی سامنا ہے۔ یونان پہلے ہی گزشتہ کئی برسوں سے مالیاتی مسائل میں گھرا ہوا ہے اور اسی وجہ سے تارکین وطن کے لیے فوری اقدامات میں بھی اسے شدید مشکلات کا سامنا ہے۔

اطلاعات کے مطابق کئی جزائر پر تو تارکین وطن کو سر چھپانے کے لیے کوئی جگہ تک میسر نہیں ہے اور انہیں دن رات کھلے آسمان تلے بسر کرنا پڑ رہے ہیں۔ اس دوران ان کی کوشش ہے کہ وہ یونان سے نکل کر مقدونیہ اور پھر سربیا کی سرحدیں عبور کر کے کسی طرح یورپی یونین کے رکن ملک ہنگری پہنچ جائیں۔ ہنگری شینگن زون میں بھی شامل ہے، جس کا مطلب ہے کہ اس کے بعد یہ مہاجرین مزید 25 یورپی ممالک میں بغیر ویزے اور سرحدوں پر نگرانی کے جا سکتے ہیں۔ ان میں سے زیادہ تر مہاجرین کا کہنا ہے کہ وہ جرمنی اور ان ممالک میں جا کر سیاسی پناہ کی درخواستیں دینا چاہتے ہیں، جن کی اقتصادی حالت مضبوط ہے۔