1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یورپ کو بھی نئی شاہراہِ ریشم تک رسائی دی جائے، موگرینی

یورپی یونین کی خارجہ امور کی چیف نے کہا ہے کہ یورپی ملکوں کو بھی نئے سِلک روڈ تک رسائی ملنی چاہیے۔ دوسری جانب چین میں سلک روڈ سمٹ کا انعقاد اگلے مہینے ہو رہا ہے، جس میں کئی ملکوں کے سربراہان شریک ہوں گے۔

China EU-Außenbeauftragte Federica Mogherini & Li Keqiang (Reuters/K. Fukuhara)

چین کے وزیراعظم لی کیچیانگ یورپی یونین کی خارجہ امور کی سربراہ فیڈیریکا موگیرینی کے ساتھ ملاقات کرتے ہوئے

چین کے دارالحکومت بیجنگ میں واقع انتہائی اہم سِنگہوُا یونیورسٹی کے طلبا سے خطاب کرتے ہوئے یورپی یونین کی خارجہ امور کی چیف فیڈیریکا موگیرینی نے کہا کہ صدر شی جن پنگ کے تجویز کردہ نئے سلک روڈ تک رسائی یورپی ملکوں کو بھی حاصل ہونی چاہیے۔

چین نے شاہراہِ ریشم کے قدیمی تصور کے تناظر میں ’ ایک خطہ، ایک شاہراہ‘ کا عَلم بلند کر رکھا ہے اور اس کے تحت وہ کئی ملکوں میں سڑکیں، ریلوے کا نظام، بندرگاہیں اور بجلی پیدا کرنے کے پلانٹ نصب کرنے کی کوشش میں ہے۔ یہ اربوں ڈالر کا منصوبہ تصور کیا جاتا ہے۔

سِنگہوُا یونیورسٹی میں خطاب کرتے ہوئے فیڈیریکا موگیرینی نے یہ بھی کہا کہ اس سِلک روڈ کے قیام اور کھولے جانے کے بعد براعظم یورپ کے باشندوں کے لیے بھی اس سے فائدہ حاصل کرنا ضروری ہو گا اور اس باعث اس شاہراہ کی افادیت دوگنا ہو سکتی ہے۔ یورپی یونین کی خارجہ امور کی چیف نے یہ بھی کہا کہ کئی اقوام کو چین کی اس طرح کی خارجہ پالیسیوں پر گہری تشویش ہے لیکن یونین ایسے خدشات نہیں رکھتی۔

China EU-Außenvertretterin Federica Mogherini in Pekin (picture-alliance/AP Photo/M. Schiefelbein)

یورپی یونین کی خارجہ امور کی سربراہ چینی دارالحکومت میں پریس کانفرنس کے دوران

رواں برس مئی میں چین کی تجویز کردہ ’نیو سِلک روڈ سمٹ‘ میں تقریباً ایک سو دس ملکوں کی شرکت یقینی خیال کی جا رہی ہے۔ اس سربراہی اجلاس میں زیادہ تر ایشیائی ملکوں کے رہنماؤں کی شرکت متوقع ہے۔  کئی ملکوں کے اعلیٰ سطحی وفود بھی اس اہم اقتصادی نوعیت کی سمٹ میں شریک ہو رہے ہیں۔ تجزیہ کاروں نے اس سربراہی کانفرنس کو چین کی رواں برس کی سب سے بڑی سفارتی سرگرمی قرار دیا ہے۔

 انیس اپریل سے شروع ہونے والے چینی دورے کے دوران فیڈیریکا موگیرینی نے چینی رہنماؤں سے بھی ملاقاتیں کی ہیں۔ ایسی ہی ایک میٹنگ میں وزیراعظم لی کیچیانگ نے موگیرینی کے ساتھ ملاقات میں کہا تھا کہ اقتصادی عالمگیریت کے دور میں چین اور یورپی یونین کے لیے مثبت اقدامات اٹھانا ضروری ہے تا کہ آزاد تجارت کو تقویت حاصل ہو سکے۔

چین گزشتہ کچھ عرصے کے دوران یورپ کی سولہ وسطی اور مشرقی ریاستوں کے ساتھ اپنے تعلقات کو بہتر بنانے کی کوشش میں ہے۔ نومبر سن 2016 میں ایک سربراہی اجلاس یورپ میں بھی منعقد کیا جا چکا ہے۔