1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

یورپ میں غیر ملکیوں کے لئے نئے الیکٹرانک شناختی کارڈ

جرمن وزارتِ داخلہ رواں سال سے ہی آزمائشی بنیادوں پر غیر ملکیوں کے لئے ایسے نئے الیکٹرانک شناختی کارڈز کے اجراء کا سلسلہ شروع کر رہی ہے، جس میں اُن کی انگلیوں کے نشانات کے ساتھ ساتھ اُن کی ڈیجیٹل تصویر بھی محفوظ ہو گی۔

default

یہ الیکٹرانک شناختی کارڈ مئی 2011ء سے پوری یورپی یونین میں اُن غیر ملکی شہریوں کے لئے رائج کئے جا رہے ہیں، جن کے پاس یورپی یونین کے کسی ملک کی شہریت نہیں ہو گی۔ یونین کے اِس اقدام کا مقصد قیام کے اجازت ناموں کی جعل سازی اور یوں یورپی یونین کے ملکوں میں غیر قانونی تارکینِ وطن کی آمد کو روکنا ہے۔

جرمنی بھر میں غیر ملکیوں سے متعلق اُنیس دفاتر میں اِن کارڈز کا اجراء آزمائشی طور پر شروع کیا جا رہا ہے اور روزنامہ ’دی وَیلٹ‘ کے مطابق یہ اقدام اِسی سال کے دوران عمل میں لایا جا رہا ہے۔ اِس آزمائشی مرحلے میں ابھی درخواست دہندگان شامل نہیں ہیں۔

یہ نیا شناختی کارڈ دو انگلیوں کے نشانات اور ایک عدد ڈیجیٹل فوٹو پر مشتمل ہو گا اور اُس ویزے کی جگہ لے گا، جو اب تک غیر ملکی شہریوں کے پاسپورٹ کے اندر چپکا دیا جاتا ہے۔ مرحلہ وار یہ کارڈز اُن غیر ملکیوں کو جاری کیا جائے گا، جو نئے سرے سے قیام کے اجازت نامے کی درخواست

Fingerprint Ekey Biometric

نئےکارڈ میں انگلیوں کے نشان بھی موجود ہوں گے

دیں گے یا پہلے سے موجود اجازت نامے کی مدت میں توسیع کروانا چاہیں گے۔ جرمن وزارتِ داخلہ کا اندازہ ہے کہ سالانہ کوئی 1.1 ملین غیر ملکی اِس شناختی کارڈ کے لئے درخواست دیں گے۔ اِس شناختی کارڈ کی مدت زیادہ سے زیادہ دَس سال ہوا کرے گی۔

اِس شناختی کارڈ کی ایک اضافی سہولت یہ ہو گی کہ یہ انٹرنیٹ میں بھی شناخت کے طور پر کام دے گا۔ اندازہ ہے کہ جرمنی میں مجموعی طور پر 4.3 ملین غیر ملکیوں کو اِس نئے کارڈ کی ضرورت پڑے گی اور اُنہیں اپنی انگلیوں کے نشانات دینے کے لئے متعلقہ دفاتر میں جانا پڑے گا۔ کہا جا رہا ہے کہ اِس کارڈ کی ضرورت یورپی یونین کے رکن ملکوں کے شہریوں کے غیر ملکی رشتہ داروں کو بھی پڑ سکتی ہے۔

اِن شناختی کارڈز کے اجراء کا عمل آئندہ برس مئی میں شروع ہونے والا ہے اور جرمن وزارتِ داخلہ کا اندازہ ہے کہ اِس عمل کے مکمل ہونے میں کئی سال بھی لگ سکتے ہیں۔ اِس کارڈ کے اجراء کی وجہ یورپی یونین کا 2008ء کا وہ ضابطہ ہے، جس کا مقصد یونین کے تمام رکن ملکوں میں غیر ملکیوں کو دئے جانے والے ویزوں کو ایک ہی شکل دینا ہے۔

جرمن پارلیمان میں بائیں بازو کی جماعت کی حزب نے اِس فیصلے کو ’چور دروازے سے مکمل نگرانی کا نظام رائج کرنے کا اقدام‘ قرار دیتے ہوئے ہدفِ تنقید بنایا ہے۔ لیفٹ پارٹی کے رکنِ پارلیمان ژان کورٹے نے جرمن وزارتِ داخلہ پر شہریوں کے تمام بائیو میٹرک کوائف جمع کرنے کی پالیسی پر عمل پیرا ہونے کا الزام عائد کیا۔ اُنہوں نے کہا:’’جہاں ابھی یہ کوائف جمع کروانے یا نہ کروانے کا معاملہ جرمن شہریوں کی صوابدبد پر چھوڑ دیا گیا ہے، وہاں یورپی یونین سے باہر کے 4.3 ملین غیر ملکی شہریوں کو اپنی انگلیوں کے نشانات دینے پر مجبور کیا جا رہا ہے۔‘‘ اُنہوں نے کہا کہ اِس طرح سے وزیر داخلہ نے معاشرے کے کمزور ترین طبقے کو مشکوک قرار دے دیا ہے۔

رپورٹ: امجد علی

ادارت: عابد حسین

ویب لنکس