1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

یورپ میں شامی مہاجرین  ڈیپریشن اور ذہنی مسائل کا شکار

ماہرین کے مطابق یورپ میں مقیم پناہ گزین، بالخصوص شامی مہاجرین ذہنی بیماریوں کا شکار ہیں تاہم  اِن مہاجرین کی ذہنی صحت کے حوالے سے عالمی رویوں میں تبدیلی آنے کے امکانات بہت کم ہیں۔

Türkei Torbali syrische Flüchtlinge arbeiten in Landwirtschaft-Camps (DW/D. Cupolo)

سن دو ہزار پندرہ کے اسپیکر ز پینل کے ایک شریک کے مطابق مہاجرین کے لیے طبی عملے اور ماہرینِ نفسیات کی کمی ہے

سن دو ہزار پندرہ میں برلن میں ہونے والی ورلڈ ہیلتھ سمٹ کے اہم ترین نکات میں سے ایک’پناہ گزینوں کی صحت‘ تھا۔ اور ایک سال بعد اس ماہ نو اکتوبر سے گیارہ اکتوبر تک جاری رہنے والے اس اجلاس میں بھی یہی موضوع سرِفہرست ہے۔ اس سال چند جرات مند اسپیکرز مہاجرین کی ذہنی صحت پر بات کر رہے ہیں۔

گزشتہ برس ہونے والی ہیلتھ کانفرنس پر اگر نظر ڈالی جائے تو پتہ چلتا ہے کہ اس کا آغاز بھی کم و بیش ایسے ہی الفاظ سے ہوا تھا جو اس برس استعمال کیے گئے۔ ایسے میں ذہن میں یہ سوال ابھرتا ہے کہ کیا ایک برس میں صورتِ حال میں کوئی بہتری آئی یا نہیں۔

سن دو ہزار پندرہ کے اسپیکر ز پینل کے ایک شریک اور یورپ اور وسطی ایشیا کے مہاجرین کی صحت کے معاملات کے لیے سینئر علاقائی مینیجر رومیانا پیٹرووا بینیڈیکٹ نے ڈی ڈبلیو سے بات کرتے ہوئے کہا،’’ بد قسمتی سے میری رائے میں صورتِ حال ابتر ہوئی ہے۔ مہاجرین کی صحت کے حوالے سےطبی عملے،ماہرینِ نفسیات، ڈاکٹرز اور ترجمانوں کی کمی رہی۔‘‘

Griechenland Leben im Flüchtlingslager in Vasilika (picture alliance/NurPhoto/N. Economou)

ریڈ کراس کی بین الاقوامی کمیٹی کے سربراہ اِیس ڈاکور کے مطابق اب تک ذہنی مسائل کے شکار مہاجرین کے بارے میں معلومات ناکافی ہیں

بینیڈیکٹ نے مزید کہا کہ تارکینِ وطن اب پہلے سے کہیں زیادہ بڑی تعداد میں ہیں اور انہیں زیادہ غیر یقینی صورت ِ حالات کا سامنا ہے۔ بینڈیکٹ نے کہا کہ یورپی یونین کمیشن کی جانب سے تمام تر کوششوں اور فنڈنگ کے باوجود یہ نہیں کہا جا سکتا کہ پناہ گزینوں کی صحت کے معاملات میں بہتری آئی ہے۔ ریڈ کراس کی بین الاقوامی کمیٹی کے سربراہ اِیس ڈاکور کا کہنا تھا،’’شام اور عراق میں ذہنی صحت بہت بڑا مسئلہ ہے۔ ہم جانتے ہیں کہ جنگ زدہ اور متنازعہ علاقوں میں یہ ایک سنگین مسئلہ ہے۔

 ڈاکور نے مزید کہا کہ،’’ جب ذہنی صحت کے مسئلے سے ڈِیل کرنا ہو تو متاثرہ فرد سے ملنا بہت ضروری ہوتا ہے۔ لیکن اب تک ہمارے پاس ذہنی مسائل کے شکار مہاجرین کے بارے میں معلومات ناکافی ہیں۔ اور ہم نہیں جانتے کہ یہ ڈیٹا کس طرح جمع کیا جا سکتا ہے۔‘‘

DW.COM