1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

یورپ میں جعلی اشیاء فروخت کرنے والی 4500 ویب سائٹس بند

پولیس اور قانون نافذ کرنے والے اداروں نے بڑے پیمانے پر کریک ڈاؤن کرتے ہوئے یورپ بھر میں ساڑھے چار ہزار سے زائد ویب سائٹس بند کر دی ہیں۔ یہ ویب سائٹس مسروقہ اشیاء کی فروخت میں ملوث تھیں۔

ان دنوں یورو پول اور یورپی پولیس کی ایجنسیوں نے جعلی برانڈز کی اشیاء آن لائن فروخت کرنے والوں کے خلاف کریک ڈاؤن شروع کر رکھا ہے اور اس سلسلے میں ہزاروں ویب سائٹس بند کر دی گئی ہیں۔ یورو پول کی طرف سے جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا گیا ہے، ’’ای کامرس میں انٹرنیٹ بنیادی اہمیت اختیار کر چکا ہے۔ عالمی سطح پر رسائی کی وجہ سے کوئی بھی نامعلوم شخص کسی بھی وقت کوئی بھی چیز فروخت کر سکتا ہے۔‘‘

جعل ساز جانتے ہیں کہ انٹرنیٹ پر اشیاء فروخت کرنے کے لامحدود مواقع ہیں اور وہ اس کا بھرپور فائدہ اٹھا رہے ہیں۔ یورو پول کا کہنا ہے، ’’مسروقہ مصنوعات سے صحت کو شدید نقصانات پہنچ سکتے ہیں اور خریدنے والا خود غیر محفوظ ہو سکتا ہے۔‘‘ بتایا گیا ہے کہ نقلی اشیاء میں معیار کا خیال نہیں رکھا جاتا اور اس طرح نقلی ادویات، کپڑے یا پھر جوتے خود خریدنے والے کے لیے نقصان دے ہو سکتے ہیں۔

Russland Medikamentenmarkt (Pfizer)

حال میں ایک ایسی رپورٹ منظر عام پر آئی تھی، جس کے مطابق یورپ میں سب سے زیادہ جعلی ادویات بھارت سے اسمگل کی جا رہی ہیں

موجودہ کریک ڈاؤن میں ستائیس ملکوں کی ایجنسیاں شامل ہیں۔ ان میں زیادہ تر یورپی ملکوں کی پولیس شامل ہے لیکن امریکا اور کینیڈا کی ایجنسیاں بھی اس حوالے سے اپنی معاونت فراہم کر رہی ہیں۔ بند کی جانے والی ساڑھے چار ہزار سے زائد ویب سائٹس سے متعلق یورو پول کا کہنا ہے، ’’یہ ویب سائٹس سبھی کچھ بیچ رہی تھیں۔ لگژری اور مہنگا سامان، کھیلوں کا سامان، اسپیئر پارٹس، الیکٹرانک اشیاء، دوائیں اور مہنگے برانڈز کا میک اپ وغیرہ۔‘‘

اس کریک ڈاؤن کے علاوہ بھی ہالینڈ کی پولیس نے ایسے بارہ افراد کو گرفتار کر لیا ہے جو مسروقہ اشیاء کا کاروبار کر رہے تھے۔ جعلی اشیاء کی فروخت سے یورپ کے بڑے بڑے برانڈز کو سالانہ کروڑوں یورو کا نقصان اٹھانا پڑ رہا ہے۔ اسی طرح حال میں ایک ایسی رپورٹ منظر عام پر آئی تھی، جس کے مطابق یورپ میں سب سے زیادہ جعلی ادویات بھارت سے اسمگل کی جا رہی ہیں۔

یورپ میں جعلی ادویات کا کاروبار

یورو پول نے خبردار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس طرح کی بہت سی ویب سائٹس صارفین کا ڈیٹا چوری کرنے میں بھی ملوث ہیں۔ ایسی جعلی ویب سائٹس کا بھی بتایا گیا ہے، جہاں اشیاء سستی فروخت کے لیے پیش کی جاتی ہیں اور پیسے ٹرانسفر ہونے کے بعد کوئی بھی خریدی گئی چیز صارف کو نہیں ملتی۔

 

DW.COM