1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یورپی یونین کی سمٹ، لیبیا اور پرتگال ایجنڈے پر

آج برسلز میں یورپی رہنماؤں کی دو روزہ سمٹ میں لیبیا میں فوجی مہم کے علاوہ پرتگال کے سیاسی بحران پر توجہ مرکوز رہنے کی توقع کی جا رہی ہے۔ پرتگال کا بحران یورو زون کے لیے خطرہ بن کر ابھر رہا ہے۔

default

مستعفی ہونے والے پرتگالی وزیر اعظم یوزے سوکراتیش

اس سمٹ کا مقصد دراصل پرتگال کے سیاسی ومالی بحران سے نمٹنے کے لیے کسی متفقہ لائحہ عمل تک پہنچنا تھا تاہم لیبیا میں عالمی برادری کی فوجی مداخلت کے بعد اب اس سمٹ میں یہ نکتہ بھی اہمیت اختیار کر گیا ہے۔

اس سمٹ سے قبل پرتگالی وزیر اعظم یوزے سوکراتیش اپنے عہدے سے مستعفی ہو گئے ہیں۔ انہوں نے یہ فیصلہ اس وقت کیا، جب پارلیمان نے ان کی حکومت کی طرف سے پیش کیا گیا بچتی منصوبہ رد کیا۔ انہوں نے یونان اور آئر لینڈ کی طرح بیل آؤٹ پیکج سے بچنے کے لیے یہ بچتی منصوبہ پیش کیا تھا۔

سوکراتیش نے اپنے نشریاتی خطاب میں کہا کہ اپوزیشن کی تمام جماعتوں نے اس منصوبے کو رد کر دیا ہے، جس کے تحت بیرونی مدد کے بغیر ہی ملک کی معیشت کو سہارا دینے کا منصوبہ بنایا گیا تھا۔ اس منصوبے کے مسترد ہونے اور اس پر وزیر اعظم یوزے سوکراتیش کے مستعفی ہونے کے بعد اب یہ امکانات بڑھ گئے ہیں کہ پرتگال بھی بیل آؤٹ پیکج کے لیے درخواست جمع کروا سکتا ہے۔

EU Sondergipfel zu Libyen NO FLASH

اس سمٹ میں لیبیا کے بحران پر بھی گفتگو کی جائے گی

مستعفی ہونے کے باوجود یوزے سوکراتیش یورپی یونین سمٹ میں شریک ہوں گے۔ اس سمٹ میں کوشش کی جائے گی کہ یورو زون کے سترہ رکن ممالک کے ملکی بجٹ کے خسارے کو کم کرنے کے لیے ایک مؤثر پالیسی طے کی جا سکے۔

اس سمٹ میں لیبیا کے بحران پر بھی گفتگو کی جائے گی۔ خبر رساں ادارے اے ایف پی نے سفارتی ذرائع کے حوالے سے بتایا ہے کہ معمر قذافی کے خلاف فوجی کارروائی کے علاوہ اس کارروائی میں نیٹو کے ممکنہ کردار پر بھی گفتگو کی جائے گی۔

بتایا گیا ہے کہ جمعرات کی شام کو ’ورکنگ ڈنر‘ پر برطانوی وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون اور فرانسیسی صدر نکولا سارکوزی لیبیا میں فوجی کارروائی کے حوالے سے ایک ایک دستاویز کے اہم نکات تیار کریں گے جبکہ اٹلی اور مالٹا سے درخواست کی جائے گی کہ وہ اس صورتحال میں پناہ گزینوں کو مدد فراہم کرنے میں کلیدی کردار ادا کریں۔

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM