1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

یمن میں صومالی مہاجرین کی حالت زار

یمن میں صومالی مہاجرین کی آنکھیں آج بھی اس انتظار میں ہیں کہ کب صومالیہ کے حالات معمول پر آئیں تاکہ وہ اپنے گھروں کو واپس لوٹ سکیں۔ چالیس سالہ فاطمہ سترہ سال سے اسی انتظار میں ہے۔

default

یمن میں صومالیہ کے مہاجرین کی بڑی تعداد موجود ہے

بات ہے 1992 کی جب فاطمہ عبداللہ محمود صومالیہ میں خانہ جنگی سے تنگ آکر یمن آئی تھیں۔ یہ سوچ کر کہ چند ہی مہینوں کے بعد وہ اپنے وطن واپس جاسکے گی لیکن سترہ سال گزر جانے کے باوجود وہ آج بھی یمن کے علاقے باساتین میں قائم ایک مہاجر کیمپ میں ہیں۔

فاطمہ یہ بات اچھی طرح جانتی ہے کہ صومالیہ میں فوج اور مسلم عسکریت پسندوں کے درمیان جھڑپوں میں شدت آ چکی ہے۔ فاطمہ کہتی ہیں: ’’جب میں اپنے بچّوں کو صومالیہ کے حالات کے بارے میں بتاتی ہوں تو وہ ڈر جاتے ہیں۔‘‘

فاطمہ کی داستان دیگر صومالی مہاجرین کی طرح ہی دردناک ہے۔ یمن کے ایک مشرقی علاقے میں گزشتہ شال سیلاب آنے کے باعث فاطمہ کو ساحلی شہر باسا تین کا رُخ کرنا پڑا تھا۔

Symbolbild Flüchtlinge Tschad Kinder

باساتین کی آبادی چالیس ہزار نفوس پر مشتمل ہے جس میں چودہ تا سترہ ہزار کے قریب صومالی پناہ گزین ہیں

محتاط اندازوں کے مطابق باساتین کی آبادی چالیس ہزار نفوس پر مشتمل ہے جس میں چودہ تا سترہ ہزار کے قریب صومالی پناہ گزین ہیں۔ اسی لئے باساتین کو’’چھوٹا صومالیہ‘‘ کے نام سے بھی جانا پہچانا جاتا ہے۔

اقوام متحدہ کے ادارے برائے مہاجرین UNHCR کے مطابق یمن میں صومالی پناہ گزینیوں کی مجموعی تعداد 142,000 ہے تاہم یمنی حکومت کا کہنا ہے کہ یہ تعداد پانچ لاکھ سے زائد ہے۔ غیر سرکاری طور پر یمن میں صومالی مہاجرین کی تعداد اس سے بھی کہیں زیادہ بتائی جاتی ہے تاہم اس سلسلے میں حقائق اور شواہد موجود نہیں ہیں۔

صومالیہ کے کشیدہ حالات سے تنگ آکر نقل مکانی کرنے والے شہری صرف یمن کا ہی رُخ نہیں کرتے بلکہ وہ سعودی عرب اور دیگر عرب ملکوں میں بھی داخل ہوجاتے ہیں۔

ڈاکٹر بغیر سرحد نامی بین الاقوامی ادارے کے مطابق صومالی باشندوں کو یمن میں مہاجرین کا سٹیٹس حاصل کرنے کے لئے کوئی درخواست نہیں دینا پڑتی ہے تاہم اس سلسلے میں ایتھیوپیا اور دیگر پناہ گزینوں کے لئے قانون مختلف ہے۔ غیر یمنی باشندوں کو دس روز کے اندر اندر درخواست دینا پڑتی ہے۔

Bildgalerie Ursachen von Armut: Vertreibung

باساتین کو’’چھوٹا صومالیہ‘‘ کے نام سے بھی جانا پہچانا جاتا ہے

ایسی افواہیں گردش میں ہیں کہ انتہائی ابتر اقتصادی صورتحال کے باعث یمن حکومت صومالی مہاجرین کے ساتھ خصوصی برتاؤ قائم نہیں رکھ سکے گی۔ یمن میں بیروزگاری کی شرح چالیسس فیصد تک بڑھ جانے کی وجہ سے مہاجرین کے لئے سہولیات ناکافی ہوچکی ہیں۔

رپورٹ : عروج رضا

ادارت : گوہر نذیرگیلانی