1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

یمن: مہاجرین کی کشتی پر فضائی حملہ،  بیالیس افراد ہلاک

اقوامِ متحدہ کے ایک ادارے اور یمن میں ایک طبی اہلکار کے مطابق بحیرہ قلزم یا بحیرہ احمر کے قریب آبنائے باب المندب سے گزرنے والی ایک کشتی پر حملے میں 42 صومالی مہاجرین ہلاک ہو گئے ہیں۔

Jemen Kampfhubschrauber tötet offenbar Dutzende Flüchtlinge (Reuters/A. Zeyad)

یمن کے حوثی شیعہ باغیوں کے خبر رساں ادارے ’سبا‘ کے مطابق کشتی پر ہدیدیٰ صوبے سے دور آبنائے باب المندب کے قریب فضائی حملہ کیا گیا

عالمی ادارہ برائے مہاجرت کا کہنا ہے کہ ہلاک ہونے والے تارکینِ وطن کے پاس اقوام متحدہ کے ادارے یو این ایچ سی آر کی جانب سے دی گئی دستاویزات تھیں۔ یمن کے دارالحکومت صنعا میں عالمی ادارہ برائے مہاجرت کے سربراہ  کے مطابق ادارے کو اس بات کا یقین ہے کہ کشتی میں سوار تمام افراد تارکینِ وطن ہی تھے تاہم یہ اب تک واضح نہیں کہ صومالیہ میں ان مہاجرین کا تعلق کہاں سے تھا۔

یمن کے حوثی شیعہ باغیوں کے خبر رساں ادارے ’سبا‘ کے مطابق کشتی پر ہدیدیٰ صوبے سے دور آبنائے باب المندب کے قریب فضائی حملہ کیا گیا۔ تاہم سبا ایجنسی کے بیان میں یہ نہیں بتایا گیا کہ اس حملے کے پیچھے کس کا ہاتھ ہے۔

 دوسری جانب جینیوا میں آئی او ایم یعنی عالمی ادارہ مہاجرت کے ترجمان یوئل مِل مان نے صحافیوں سے بات کرتے ہوئے کہا کہ وہ ایسی خبروں کی تصدیق کرنے سے قاصر ہیں جن کے مطابق ایک اپاچی ہیلی کاپٹر گن شپ اس حملے کا ذمہ دار ہے۔

مل مان نے خبر رساں ادارے اے پی سے بات کرتے ہوئے کہا،’’ہم اس بات کی تصدیق کر سکتے ہیں کہ حملے کے نتیجے میں درجنوں اموات ہوئی ہیں۔ اور درجنوں زخمی افراد کو ہسپتال لایا جا رہا ہے۔‘‘ یمن کا ساحلی صوبہ ہدیدیٰ گزشتہ دو برس سے شدید فضائی حملوں کی زد میں ہے۔

 سعودی عرب کی قیادت میں قائم اتحاد اس تنازعے میں یمنی حکومت کا ساتھ دے رہا ہے۔ یمن افریقی تارکینِ وطن کے لیے ایک ٹرانزٹ پوائنٹ کی حیثیت رکھتا ہے جہاں سے وہ بہتر مستقبل کے لیے سعودی عرب پہنچ سکتے ہیں۔