1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

یمن مظاہروں میں چھبیس ہلاک، حزب اختلاف میں اتفاق رائے نہ ہو سکا

اتوار کو یمنی دارالحکومت صنعاء میں سکیورٹی فورسز کی حکومت مخالف مظاہرین پر فائرنگ اور لاٹھی چارج کے نتیجے میں کم از کم 26 افراد ہلاک اور پانچ سو کے قریب زخمی ہو گئے۔

default

فائرنگ اس وقت شروع ہوئی جب ہزاروں مظاہرین ’تبدیلی چوک‘ سے شہر کے مرکز کی جانب بڑھ رہے تھے۔  دارالحکومت کے ایک فیلڈ ہسپتال کے ڈاکٹر طارق نعمان نے چھبیس افراد کی ہلاکت کی تصدیق کی۔ دارالحکومت میں رات بھر فائرنگ اور دھماکوں کی آوازیں سنائی دیتی رہیں اور مظاہرین نے کہا ہے کہ وہ پیر کی صبح بھی اپنے مظاہرے جاری رکھیں گے۔ طبی اہلکاروں کا تخمینہ ہے کہ چھتیس زخمیوں کی حالت تشویش ناک ہے۔ یمن کی وزارت داخلہ نے الزام لگایا کہ مظاہرین کے حملوں میں چار سکیورٹی اہلکار زخمی ہوئے۔ انہوں نے مظاہرین پر پٹرول بم پھینکنے اور گاڑیوں کو نذر آتش کرنے کا الزام بھی لگایا۔

ادھر، اتوار کو یمن کے مختلف سیاسی دھڑوں میں خلیجی تعاون کونسل کے پیش کردہ انتقال اقتدار کے منصوبے پر اتفاق

Flash Galerie Ali Abdullah Saleh

صدر علی عبد اللہ صالح کے اقتدار کے خلاف گزشتہ نو ماہ سے مظاہرے جاری ہیں

رائے نہیں ہو سکا۔ صدر صالح کی برسر اقتدار جنرل پیپلز کانگریس پارٹی کے ترجمان طارق الشامی نے خبر رساں ادارے اے ایف پی کو بتایا، ’’بحران کو حل کرنے کے لیے ہمیں حزب اختلاف کے ساتھ منصوبے پر عملدر آمد کے طریقہ کار پر اتفاق کرنا ہوگا۔ اسی لیے حزب اختلاف کے ساتھ مذاکرات ضروری ہیں۔‘‘ حزب اختلاف کا مطالبہ رہا ہے کہ صدر اس معاہدے پر عملدر آمد کے طریقوں پر تبادلہ خیال سے قبل اس پر دستخط کر دیں۔

حزب اختلاف کے ایک اہم رہنما سلطان الاطوانی نے کہا، ’’انتقال اقتدار سے قبل مذاکرات کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔‘‘

صدر صالح گزشتہ تین ماہ سے سعودی عرب میں مقیم ہیں اور انہوں نے نائب صدر منصور ہادی کو حزب اختلاف کے ساتھ انتقال اقتدار کے منصوبے پر مذاکرات کا اختیار دیا ہے۔

Jemens Al-Kaida-Boss Nasser al-Wahaischi

بین الاقوامی برادری کو خدشہ ہے کہ اگر یمن میں سیاسی نظام بالکل تحلیل ہو گیا تو القاعدہ کے عسکریت پسند ملک پر چڑھ دوڑیں گے

ہفتے کو سعودی عرب کے ایک اعلٰی اہلکار نے اے ایف پی کو بتایا تھا کہ ہادی ایک ہفتے کے اندر اس منصوبے پر دستخط کر دیں گے۔ خلیجی تعاون کونسل کے منصوبے میں صالح سے مطالبہ کیا گیا تھا کہ وہ اقتدار چھوڑ دیں اور تمام اختیارات منصور ہادی کو منتقل کر دیں۔ اس کے عوض انہیں اور ان کے خاندان کو قانونی کارروائی سے استثناء فراہم کیا جائے گا۔

صدر صالح کے اقتدار کے خلاف جاری مظاہروں کو نو ماہ سے زائد عرصہ گزر چکا ہے اور بین الاقوامی برادری کو خدشہ ہے کہ اگر یمن میں سیاسی نظام بالکل تحلیل ہو گیا تو القاعدہ کے عسکریت پسند ملک پر چڑھ دوڑیں گے۔

رپورٹ: حماد کیانی

ادارت: شادی خان سیف

DW.COM