1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ہیٹی میں اب ٹامس طوفان: کم از کم 21 ہلاکتیں

ہیضے کی وبا سے نمٹنے کی جان توڑ کوششیں تو جاری یں کہ زلزلہ سے تباہ حال ملک ہیٹی کو گزشتہ ویک اینڈ پر ’ٹامس‘ نامی سمندری طوفان نے مزید مسائل سے دوچار کر دیا۔ حکام کے مطابق کم از کم اکیس افراد اس طوفان میں ہلاک ہوگئے۔

default

ہیٹی میں ٹامس نامی طوفان

ٹامس نامی یہ طوفان گزشتہ جمعہ کو کیریبیئن جزیرے ’سینٹ لوسیا‘ میں آیا تھا جہاں اس کی زد میں آکر کم از کم 14 افراد لقمہ اجل بنے تھے۔ اُس کے بعد طوفانی لہریں 135 کیلو میٹر فی گھنٹے کی رفتار سے ہیٹی کی طرف بڑھیں۔ ہیٹی کے دارالحکومت پورٹ او پرانس کے نواحی علاقوں میں قائم کئے گئے کیمپس میں موجود ہزاروں متاثرین میں اُس وقت افرا تفری اور خوف و ہراس پھیل گیا جب ٹامس طوفان کی لہریں دارالحکومت کی طرف بڑھنا شروع ہوئیں۔

حکام نے طوفان سے انتباہ کرتے ہوئے عارضی کیمپوں میں موجود تیرہ لاکھ افراد سے اپیل کی کہ وہ فوری طور سے محفوظ مقامات کی طرف چلے جائیں۔ کیمپوں سے انخلاء کے لئے بسوں کا استعمال کیا گیا۔ تاہم بسوں کی تعداد کافی نہیں تھی۔ کیمپوں کے بہت سے رہائش پذیروں نے کیمپ چھوڑنے سے یہ کہہ کر انکار کیا کہ اُن کے پاس سر چھپانے کو کوئی دوسرا ٹھکانہ نہیں ہے۔

Unwetter in Haiti

ہیٹی کے کیمپس میں قیام پذیر افراد طوفان سے خوف زدہ

حالات کی سنگینی سے متنبہ کرتے ہوئے ہیٹی کے صدر نے خود ریڈیو کے ذریعے شہریوں سے اپیل کی کہ وہ ممکنہ حفاظتی اقدامات کریں۔ انہوں نے اپنے پیغام میں کہا کہ وافر تعداد میں بسیں میسر نہیں ہیں اس لئے ہر شخص اپنی جان کی حفاظت خود کرتے ہوئے احتیاطی تدابیر بروئے کار لائے۔

ان کیمپوں میں پہلے سے ہی ہیضے کے شکار افراد کو ضروری طبی امداد فراہم کرنے کا کام حکام کے لئے ایک بڑا چیلنج بنا ہوا ہے۔ ویک اینڈ کے اختتام تک ٹامس کی لہروں کا رُخ پورٹ او پرانس سے ہٹ کر ارد گرد کے ساحلی قصبوں کی طرف مُڑ گیا۔ ساحلی علاقے میں قائم چھوٹے چھوٹے قصبے سیلاب کے پانی کے زور سے تباہ ہوگئے۔ اس کے نتیجے میں مٹی کے تودے گرنے لگے جنہوں نے متعدد پُلوں اور سڑکوں کو نیست و نابود کر دیا۔ سب سے زیادہ نقصان جنوب مغربی حصے میں واقع شہر ’لئوگان‘ کو پہنچا۔ اس علاقہ میں کم از کم آٹھ افراد ہلاک ہوئے۔ اطلاعات کے مطابق ہیٹی کے تقریباً 900 باشندوں کے مکانات تباہ ہو گئے ہیں جبکہ پانچ ہزار کو طوفانی لہروں سے شدید نقصان پہنچا ہے۔

Haiti Hurrikan Tomas

ہیٹی کے حکام نے کہا ہے کہ ٹامس طوفان سے ہیضہ مزید پھیلے گا

’لئوگان‘ نامی شہر پورٹ او پرانس سے 30 کیلو میٹر کے فاصلے پر واقع ہے وہاں کی انتظامیہ نے ایمرجنسی نافذ کرنے کا اعلان کیا ہے۔ ہیٹی کی سول ڈیفنس فورس کی ڈائریکٹر ’آلٹا ژاں بیپٹسٹ‘ نے کہا ہے کہ ’لئوگان‘ مکمل طور پر زیر آب ہے۔ انہوں نے حکومت سے اس علاقے کے عوام کو طبی اور دیگر امداد فراہم کرنے کے لئے ایک فوری ایکشن کی اپیل کی ہے۔

ہیٹی کی 10 ملین سے بھی کم کُل آبادی کا تقریباً تمام حصہ ناگفتہ بہ صورتحال سے دوچار ہے۔ رواں سال کے اوائل میں آنے والے تباہ کن زلزلے کے بعد سے مسلسل سیلابوں، بارشوں اور مٹی کے تودے گرنے سے جہاں لاتعداد جانیں ضائع ہوئی ہیں وہاں ہیضے جیسی وبا کے پھیلاؤ پر قابو پانے میں بھی بہت زیادہ دشواریاں ہو رہی ہیں۔ حکام نے طوفان اور بارشوں کے سبب ہیضے کی وبا کے دارالحکومت پورٹ او پرانس تک پھیلنے کے قوی امکانات سے خبر دار کیا ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: عابد حُسین

DW.COM

ویب لنکس