1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ہیضے کی وبا کا ہیٹی کے دارالحکومت پر’حملہ‘

اقوام متحدہ نے ہیٹی کے دارالحکومت میں ہیضے کے کم ازکم پانچ کیسس کی تصدیق کر دی ہے۔ اس سے قبل ہیٹی کے شمالی اور مرکزی علاقوں میں ہیضے کی مہلک وبا کے اچانک پھیلاؤ کے نتیجے میں 220 جانیں ضائع ہو چُکی ہیں۔

default

اقوام متحدہ کے اہلکاروں نے گزشتہ ہفتے کے روز ہی انتباہ کیا تھا کہ ہیٹی میں وبائی بیماری ہیضہ محض چند علاقوں تک محدود نہیں رہے گا بلکہ اس کے دارالحکومت پورٹ او پرانس تک پہنچنے کے امکانات قوی ہیں۔ آج اتوار کو اقوام متحدہ کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ ہیضہ پورٹ او پرانس تک پہنچ چکا ہے اور وہاں کم از کم پانچ نئے کیسس کا اندراج کیا گیا ہے۔ تاہم اقوام متحدہ کے اہلکاروں نے کہا ہے کہ ہیٹی کے دارالحکومت میں ہیضے کے کیسس خلاف توقع نہیں ہیں کیونکہ اس علاقے میں پہلے سے ہی گوناگوں عفونت پائی جاتی تھی۔ ایک مثبت امر کی طرف اشارہ کرتے ہوئے عالمی ادارے کے اہلکاروں نے کہا ہے کہ پورٹ او پرانس میں ہیضے کے کیسس کی تصدیق اس بات کا ثبوت ہے کہ وہاں وبا کے پھیلاؤ کی روک تھام کے لئے جاری مینیجمنٹ سسٹم فعال ہے۔

Cholerafälle in Haitis Hauptstadt

ہیضے کے مرض میں مبتلا ایک بچا ایک ہسپتال کے فرش پر

اتوار کے روز ایک ویب سائٹ پر شائع ہونے والی رپورٹ کے مطابق ہیٹی کے شمالی علاقے کے مرکزی ہسپتال سینٹ نیکولاس ہیضے کے شکار مریضوں سے مکمل طور پر بھر چکا ہے۔ یہاں مزید مریضوں کی ہر گز گنجائش نہیں ہے جبکہ اس علاقے کے دیگر طبی مراکز بھی ہیضے کے لاتعداد مریضوں کو طبی سہولیات فراہم کرنے اور ان کو ضروری ادویات دینے کے عملی میں سخت مشکلات سے گزر رہے ہیں۔ یہاں بھی مزید مریضوں کی گنجائش ختم ہوتی جا رہی ہے۔

دس ماہ قبل ہیٹی میں آنے والے زلزلے سے نہ صرف ملک کے بیشتر علاقے تہس نہس ہو گئے تھے بلکہ اُس وقت جہاں ملک کو ناقابل تلافی نقصانات پہنچے، وہیں ملک کا صحت کا نظام مکمل طور پر تباہ ہو گیا تھا۔

جنوری میں ہیٹی میں آنے والے زلزلے سے متاثرہ علاقوں میں صحت کے مسائل سے نمٹنے کے لئے ہیلتھ ٹیموں کو تعینات کیا گیا تھا تاہم گوناگوں بیماریوں نے اتنی بڑی تعداد میں انسانوں کو اپنی لپیٹ میں لے رکھا ہے کہ ہیٹی جیسے پسماندہ ملک میں اس قسم کی وبا پر قابو پانا آسان نہیں ہے۔

Cholerafälle in Haiti

ہیضے کے مرض میں مبتلا مریضوں کی تعداد میں مسلسل اضافہ ہو رہا ہے

ہیضے کی وبا پھیلنے کی ابتدائی خبریں سامنے آنے کے بعد ہیٹی کے صحت کے ادارے کے ڈائریکٹر جنرل ڈاکٹر گیبریل اور وزیر صحت الیکس لارسن کے مطابق ابتدائی معائنوں سے تو یہ پتہ چلتا ہے کہ ہیٹی میں ہیضے کی وبا ہی پھیل گئی ہے تاہم اس ملک میں اس خطرناک بیماری کی کوئی تاریخ نہیں ملتی۔

ڈاکٹر گیبریل کے مطابق متاثرہ افراد ہر عمر سے تعلق رکھتے ہیں مگر زیادہ تر متاثرین نوجوان اور بزرگ شہری ہیں۔

رواں سال کے ابتدا میں آنے والے زلزلے کے بعد حکام کوخطرہ تھا کہ ہیٹی میں وبائی امراض پھوٹ پڑیں گے مگر عالمی ادارہ صحت کے اقدامات نے اس خطرے کو ٹال دیا تھا۔

ہیضے کی بیماری گندے پانی کے ذریعے پھیلتی ہے اور اس کا براہ راست تعلق حفظان صحت کی خرابی سے ہوتا ہے۔ بر وقت علاج نہ ہو تو ہیضہ جان لیوا ثابت ہوتا ہے۔

رپورٹ: کشور مصطفیٰ

ادارت: عاطف توقیر

DW.COM

ویب لنکس