1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ہیرو شیما پر ایٹم بم گرائے جانے کی تکلیف دہ یاد

دوسری عالمی جنگ کے دوران چھ اگست سن 1945ء کو امریکیوں نے جاپان کے شہر ہیروشیما پر ایٹم بم گرایا تھا۔ 63 سال پہلے کے اِس واقعے کی یاد منانے کے لئے آج ہیروشیما میں تقریباً 45 ہزار افراد جمع ہوئے۔

default

امریکی فوج کی طرف سے جاری کی گئی تصویر میں ہیروشیما پر ایٹم بم گرنے کا منظر۔

پنتالیس منٹ تک جاری رہنے والی اِس تقریب میں اُن مزید افراد کے ناموں کا اندراج عمل میں آیا، جن کی موت کے اصل اسباب کا تعلق اِسی حملے سے تھا۔ تازہ اعدادوشمار کے مطابق اِس حملے میں مرنے والوں کی مجموعی تعداد دو لاکھ اٹھاون ہزار تین سو دَس ہے۔

مرنے والوں کی یاد میں اِس تقریب میں ایک منٹ کی خاموشی اختیار کی گئی۔ تقریب عین صبح آٹھ بج کر پندرہ منٹ پر شروع ہوئی، یعنی اُسی وقت، جب تریسٹھ برس پہلے اِس شہر پر ایٹم بم گرایا گیا تھا۔

Japan Hiroshima 63. Gedenkfeier

ہیروشیما پر ایٹم بم گرائے جانے کی یاد میں بدھ چھ اگست سن2008ء کو منعقدہ تقریب کا منظر۔

ایک جاپانی عینی شاہد نے حملے کا احوال بتاتے ہوئے کہا: ’’یہ ایک بجلی کی کوند سی تھی، سفید نیلگوں بجلی کی کوند۔ اِس سے اُس عبادت گاہ کا اندرونی حصہ، جس میں مَیں اُس وقت تھا، چکا چوند ہو گیا۔ اِس کے چند سیکنڈ بعد کہیں مَیں نے دھماکے کی آواز سنی۔ اِس کے بعد مَیں نے ناقابلِ یقین حد تک بڑے دھوئیں کے دیو ہیکل بادل کو آسمان کی طرف بلند ہوتے دیکھا۔ اِس میں کئی رنگ تھے، سفید، سیاہ اور گلابی۔ وہ مسلسل بڑا ہوتا گیا۔‘‘

ہیروشیما کے میئر نے ایک ایسے مطالعاتی جائزے پر کام شروع کرنے کا اعلان کیا، جو دو سال تک جاری رہے گا اور جس میں ہیروشیما پر ایٹم بم گرائے جانے کے واقعے کے دُور رَس نفسیاتی اثرات کا جائزہ لیا جائے گا۔