1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ہولوکوسٹ سے متعلق مواد، انٹر نیٹ پر دستیاب

سرچ انجن گوگل ایک ایسے منصوبے کا آغاز کر رہا ہے، جس کے نتیجے میں نازی دور حکومت کی اہم دستاویزات اور تصاویر انٹر نیٹ پر فراہم کی جائیں گی۔ اس کا مقصد نازی دورحکومت کے تلخ حقائق کے بارے میں عوامی آگاہی بتائی گئی ہے۔

default

اس پراجیکٹ میں گوگل کو اسرائیل کے قومی ہولوکاسٹ میوزیم کا تعاون بھی حاصل ہے۔ یہ پراجیکٹ آج یعنی 27 جنوری سے شروع ہو گا۔ ہولو کاسٹ کے دوران چھ ملین یہودیوں کے قتل عام کی یاد میں 27 جنوری کا دن ہر سال منایا جاتا ہے۔ اس مرتبہ اسی دن کی مناسبت سے اس خصوصی آرکائیو سینٹر کا آغاز کیا جا رہا ہے۔

گوگل اور اسرائیلی میوزیم Yad Vashem کے حکام نے بتایا ہے کہ اس منصوبے کو شروع کرنے کا مقصد لوگوں کے دلوں میں ان المناک واقعات کی یادیں تازہ رکھنا ہے۔ خبر رساں ادارے روئٹرز نے سرچ انجن گوگل کے حکام کا حوالہ دیتے ہوئے کہا ہے کہ ہولو کاسٹ پر تحقیق کرنے والوں کے لئے یہ آرکائیو نہایت مفید ثابت ہوگا۔

اس پراجیکٹ کے سربراہ Yossi Matias کہتے ہیں،’ اس حوالے سے نہایت اہم کہانیاں بھی ہیں۔ اگر ہم انہیں محفوظ نہیں بنائیں گے تو وہ بھلا دی جائیں گی۔‘

Flash-Galerie 65 Jahre Befreiung Auschwitz

یہودی خواتین اور بچے، Yad Vashem میوزیم سے حاصل کی گئی ایک یادگار تصویر ، مئی سن 1944ء

اس پراجیکٹ کے تحت ایک لاکھ 30 ہزار تصاویر اور اہم دستاویزات انٹر نیٹ پر فراہم کی جائیں گی، جو براہ راست نازی دور حکومت اور ہولو کاسٹ کے حوالے سے کئی اہم حقائق اور سچی کہانیوں کو بیان کرتی ہیں۔ Matias کے بقول مستقبل میں اس آرکائیو میں مزید تصاویر اور دستاویزات اپ لوڈ کی جاتی رہیں گی۔

اس وقت تک یہ تمام دستاویزات اور تصاویر اسرائیل میں واقع Yad Vashem میوزیم یا اس کی ویب سائٹ پر موجود ہیں تاہم انہیں ہر کوئی نہیں دیکھ سکتا۔ اس میوزیم کے ڈائریکٹر Avner Shalev کہتے ہیں کہ سن 2010ء میں ان کی ویب سائٹ کو گیارہ ملین افراد نے وزٹ کیا ہے،’ اب گوگل کے ساتھ یہ منصوبہ شروع کرنے سے مزید لوگ نہ صرف ہماری ویب سائٹ پر جائیں گے بلکہ اس نئے ڈیٹا بینک کی بدولت اس مخصوص موضوع پر عوامی آگاہی میں بھی اضافہ ہوگا۔‘

رپورٹ: عاطف بلوچ

ادارت: افسر اعوان

DW.COM

ویب لنکس

ملتے جلتے مندرجات