1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

ہنگری: تارکین وطن مخالف بِل دوبارہ پیش نہیں کیا جائے گا

ہنگری کی حکومت کا کہنا ہے کہ مہاجرین کی آباد کاری پر پابندی عائد کرنے کا بِل  ہنگیرین پارلیمنٹ میں منظوری کے لیے دوبارہ پیش نہیں کیا جائے گا۔

ہنگری کے وزیرِ اعظم وکٹور اوربان نے یہ بات آج بروزِ جمعہ سرکاری ریڈیو پر ایک انٹرویو میں کہی۔ وزیرِ اعظم اوربان کا کہنا تھا کہ رواں ہفتے پارلیمنٹ کی جانب سے ملک میں مہاجرین کی آباد کاری پر پابندی کا مجّوزہ قانون مسترد ہونے کے بعد اِسے دوبارہ پیش نہیں کیا جائے گا۔

اوربان نے مزید کہا،’’ ہم نے اس مجّوزہ بِل کو آئین کا حصہ بنانے کی کوشش کی لیکن کامیاب نہیں ہو سکے کیونکہ ہنگری کی حزبِ اختلاف مہاجرین کے بحران کے حوالے سے برسلز کا ساتھ دے رہی ہے۔ چونکہ آئین میں ترمیم نہیں کی جا سکی لہذٰا  نتیجے کے طور پر ہماری حکومت کو موجودہ آئین کی حدود میں رہتے ہوئے ہی مہاجرین کی آباد کاری کے حوالے سے یورپی یونین کے کوٹا سسٹم منصوبے کے خلاف جد وجہد جاری رکھنی ہو گی۔‘‘

خیال رہے کہ رواں ماہ کی آٹھ تاریخ کو ہنگری کے وزیرِ اعظم وکٹور اوربان کی جانب سے ملکی پارلیمنٹ میں مہاجرین کی آبادکاری پر ایک آئینی ترمیم کے ذریعے پابندی عائد کرنے کا منصوبہ ناکام ہو گیا تھا۔ مجوزہ آئینی ترمیم کو ہنگری کی پارلیمنٹ کی کُل ایک سو نناوے نشستوں میں سے ایک سو اکتیس ووٹ حاصل ہوئے۔ پینسٹھ اعشاریہ ساٹھ فیصد اُس مطلوبہ دو تہائی فیصد سے ذرا سی ہی کم ہے جو قانون میں تبدیلی کے لیے درکار تھی۔ ہنگری کی پارلیمنٹ میں اپوزیشن جماعتوں نے رائے شماری کا بائیکاٹ کیا تھا۔

 

DW.COM