1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

مہاجرین کا بحران

ہنگری اور سلوواکيہ کو پناہ فراہم کرنی پڑے گی، يورپی عدالت

يورپی عدالت برائے انصاف نے ہنگری اور سلوواکيہ کی جانب سے يورپی يونين کی مہاجرين پاليسی کے خلاف شکايات مسترد کر دی ہيں۔ عدالتی فيصلے کے مطابق تارکين وطن کو پناہ دينے کے معاملے ميں برسلز رکن رياستوں پر زور ڈال سکتا ہے۔

لکسمبرگ ميں قائم يورپی عدالت برائے انصاف نے بدھ نو ستمبر کو اپنے فيصلے ميں واضح کيا، ’’مہاجرين کی يورپی يونين کے رکن ممالک ميں تقسيم سے متعلق ابتدائی طور پر طے شدہ نظام کے خلاف سلوواکيہ اور ہنگری کی شکايت کو مسترد کيا جاتا ہے۔‘‘ عدالتی فيصلے کے تحريری بيان ميں مزيد کہا گيا ہے کہ مہاجرين کی کوٹے کے تحت تقسيم کے سبب اٹلی اور يونان پر سے کچھ بوجھ کم ہو سکے گا۔

سن 2015 ميں مشرق وسطیٰ، جنوبی ايشيا اور شمالی افريقہ کے کئی ممالک سے ايک ملين سے زائد پناہ گزينوں کی آمد کے نتيجے ميں يونان اور چند ديگر يورپی رياستوں پر کافی بوجھ پڑ گيا تھا۔ اس صورت حال سے نمٹنے کے ليے يورپی کميشن نے ايک منصوبے کو حتمی شکل دی، جس کے تحت 160,000 مہاجرين کو رکن ملکوں ميں باقاعدہ طور پر بسايا جانا تھا۔ تاحال اسکيم کو بروئے کار لاتے ہوئے صرف پچيس ہزار تارکين وطن کو يورپی يونين ميں باقاعدہ طور پر پناہ مل سکی ہے۔ اسکيم کی ناکامی کی ايک بڑی وجہ چند مشرقی يورپی رياستوں کی جانب سے اس کے خلاف احتجاج ہے۔ ہنگری اور سلوواکيہ نے اس کے خلاف يورپی عدالت برائے انصاف ميں مقدمہ دائر کر رکھا تھا، جس کا فيصلہ چھ ستمبر کو سنايا گيا۔

انسانی حقوق کے ليے سرگرم تنظيم ايمنسٹی انٹرنيشنل نے يورپی عدالت برائے انصاف کے فيصلے کا خير مقدم کيا ہے۔ تنظيم کی يورپی شاخ کے ڈائريکٹر ايورنہ مک گوون نے کہا، ’’ہنگری اور سلوواکيہ نے يورپی يونين کی يکجہتی کے ساتھ چال بازی کرنے کی کوشش کی تاہم پناہ کے متلاشی افراد کو پناہ کی فراہمی ميں ان ممالک کو اپنا کردار ادا کرنا ہو گا۔ انہوں نے يورپی رياستوں پر زور ديا کہ وہ پناہ کے مستحق افراد کی امداد کے ليے اپنے اپنے کردار ادا کريں۔

DW.COM

ملتے جلتے مندرجات