1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

’ہم ہار نہیں مانیں گے‘، مدیراعلیٰ کی گرفتاری کے بعد بھی ’جمہوریت‘ پرعزم

ترک روزنامے ’جمہوریت‘ نے اپنے مدیر اعلیٰ کی گرفتاری کے باوجود اس عزم کا اظہار کیا ہے کہ وہ ہار نہیں مانے گا اور آزادنہ صحافت جاری رکھے گا۔

ترک پولیس نے چھاپے مار کر اس اخبار کے مدیراعلیٰ اور دیگر اہم عہدیداروں کو حراست میں لے لیا ہے۔ ان گرفتاریوں پر مغربی ممالک کی جانب سے ترک حکومت کو تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

منگل کے روز اس اخبار کے شمارے پر شہ سرخی درج تھی، ’ہم ہار نہیں مانیں گے‘۔ روزنامہ ’جمہوریت ‘ نے ان گرفتاریوں کو آزادی صحافت پر حملہ قرار دیا۔ حکام نے پیر کے روز اس اخبار کے مدیراعلیٰ مراد سابُنجو اور معروف کالم نگار گورے اوز سمیت متعدد افراد کو حراست میں لیا تھا۔

Türkei Protest gegen Absetzung des Chefs der Zeitung Cumhuriyet (DW/K. Akyol )

ترکی میں روزنامہ جمہوریت کو آزادی صحافت کی ایک علامت سمجھا جاتا ہے

استنبول میں پراسیکیوٹر دفتر کی جانب سے کہا گیا ہے کہ اس اخبار کے عملے کو کرد عسکریت پسندوں کے کہنے پر جرائم کرنے کے شبے میں گرفتار کیا گیا، جب کہ ان کے رابطے جلاوطن ترک مذہبی مبلغ فتح اللہ گولن سے بھی تھے۔ ترک حکومت جولائی میں ہونے والی ناکام فوجی بغاوت کا الزام گولن پر عائد کرتی ہے، جسے وہ مسترد کرتے ہیں۔

اس اخبار نے اپنے عملے پر لگنے والے تمام الزامات کو مسترد کرتے ہوئے انہیں ’ناقابل قبول اور غیرقانونی‘ قرار دیا ہے۔ جمہوریت اخبار سن 1924 سے نکل رہا ہے اور اسے ترکی میں سب سے اہم سکیولر اخبار کی حیثیت حاصل ہے جب کہ یہ اخبار صدر رجب طیب ایردوآن اور ان کی قدامت پسند جماعت جسٹس اینڈ ڈیویلمپنٹ پارٹی کا بھی سخت ناقد ہے۔

ترک وزیراعظم بن علی یلدرم نے منگل کے روز انقرہ میں اپنے ایک خطاب میں اس اخبار یا گرفتاریوں کا براہ راست ذکر کیے بغیر کہا کہ انقرہ حکومت کو آزادی صحافت سے کوئی مسئلہ نہیں، مگر انسداد دہشت گردی کے لیے اقدامات کیے جاتے رہیں گے۔

روزنامہ جمہوریت کے عہدیداروں کی گرفتاریوں پر ردعمل میں امریکی محکمہ خارجہ نے بھی ترک حکومت کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے ’جمہوریت‘کو ترکی کا سب سے قابل احترام اخبار قرار دیا ہے۔