1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

صحت

‘ہم سب ٹینگو کے لیے پاگل‘

ذہنی امراض ميں مبتلا افراد کے ليے بیونس آئرس کے ايک ہسپتال میں بند کھڑکیاں ماحول کو بے جان سا بنا دیتی ہیں لیکن جیسے ہی ٹینگو میوزک بجایا جاتا ہے ہسپتال کا افسردہ ماحول بالکل ہی تبديل ہو جاتا ہے۔

Bildergalerie Tanzen Tango

ٹینگو کلاس میں مریض رقص کے ذریعے اپنے جذبات کا کھل کر اظہار کرتے ہیں

بیونس آئرس کے ’بورڈا ہسپتال‘ میں مہینے میں دو مرتبہ ٹینگو ڈانس سکھایا جاتا ہے۔ اس ڈانس کلاس کو ’ہم سب ٹینگو کے لیے پاگل‘ کا نام دیا گیا ہے۔ ٹینگو ڈانس ٹیچر لورا سیگاڈے نے خبر رساں ایجنسی اے ایف پی کو بتایا،’’ذہنی مریض اکثر خاموشی سے ہر بات مان لیتے ہیں لیکن ٹینگو کلاس میں یہ رقص کے ذریعے اپنے جذبات کا کھل کر اظہار کرتے ہیں۔‘‘ ٹینگو ڈانس ٹیچر کا کہنا ہے کہ ہم ایک آدمی کو ایک آدمی ہونے جیسا محسوس کراتے ہیں۔ یہ لوگ کلاس میں مریض کی حیثیت سے آتے ہیں لیکن جب یہاں سے جاتے ہیں تو وہ ڈانس کے فن کے شاگرد بن کر جاتے ہیں۔‘‘

ذہنی امراض ميں مبتلا افراد کے لیے بورڈا ارجنٹائن میں مردوں کا سب سے بڑا ہسپتال ہے۔ ڈانس کلاسوں میں خواتین ڈانس پارٹنرز باہر سے رضاکارنہ طور پر آتی ہیں۔ ہسپتال کے ماہر نفسیات گوائل ارمو کا کہنا ہے کہ ٹینگو ڈانس کے ذریعے مریضوں کو اپنی تخیلقی صلاحیتوں اور اپنے جسم کومثبت انداز میں استعمال کرنے کا موقع ملتا ہے۔

ہسپتال کے ایک مریض ماکسیمیلانو کہتے ہیں کہ وہ بہت اچھا محسوس کر رہے ہیں کیونکہ انہوں نے بہت اچھا رقص کیا ہے۔ ماکسیمیلانو ہسپتال میں مريض نہيں لیکن پھر بھی وہ مریضوں کے ساتھ ٹینگو کی کلاسیں ضرور لیتے ہیں۔

Argentinien Buenos Aires Festival Tango

رقص ’شیزوفرینا‘ جیسے مرض میں لاحق مریضوں کی زندگیوں میں رنگ پیدا کر سکتا ہے

اس ٹینگو ورکشاپ کا انعقاد ماہر نفسیات سیلوانا پرل کرتی ہیں۔ کلاس سے قبل وہ ہسپتال میں تمام مریضوں کو ڈانس کلاس میں حصہ لینے کے لیے بلاتی ہیں۔ کئی مریض ایسے بھی ہیں جو اس کلاس میں نہیں جانا چاہتے۔ اپنی دوائی لینے کے انتظار میں کھڑے ایک مریض نے سیلوانا کو کہا کہ میرے پاس وقت نہیں ہیں۔

سیلوانا کہتی ہیں کہ ٹینگو کلاس کا مقصد مریضوں کی ہسپتال کی روٹین کو توڑنا ہے۔ رقص ’شیزوفرینا‘ جیسے مرض میں لاحق مریضوں کی زندگیوں میں رنگ پیدا کر سکتا ہے اور ان مریضوں کی بے جان زندگیوں میں مصورانہ ہل چل مچا سکتا ہے۔

ہسپتال کی کنٹین میں بنائے گئے ڈانس فلور پر کچھ مریض رضاکارانہ پارٹنرز کے ساتھ باتیں کرتے اور ہنستے مسکراتے ٹینگو میوزک پر رقص کر رہے ہیں۔ 53 سالہ ڈانس انسٹرکٹر روکی سیلس کہتے ہیں، ’’یہ مریض صرف میرے دیے گئے احکامات پر عمل نہیں کرتے بلکہ یہ خود سیکھ کر ڈانس کرتے ہیں۔‘‘

کلاس کے اختتام پر سب ٹیگو گانے گاتے ہیں۔ ذہنی امراض میں لاحق مریضوں نے کلاس کا اختتام ’ یہ دنیا گندگی کا ڈھیر ہے اور ایسے ہی رہے گی‘ گانا گاتے ہوئے کیا۔

DW.COM