1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

ہم جنس پرستی، ایڈز کے پھلاؤ کی ایک اہم وجہ

ایچ آئی وی ایڈز شمالی افریقہ اور مشرقی وسطیٰ کے ہم جنس پرستوں میں تیزی سے بڑھ رہی ہے۔ محقیقن نے خبردار کیا ہے کہ غیر محفوظ جنسی رویوں کی وجہ سے ایڈز کا دیگر علاقوں تک پھلینے کا خطرہ بڑھ رہا ہے۔

default

دنیا کے متعدد ممالک میں ہم جنس پرستی ایک ممنوعہ موضوع ہے۔ قطر کےکورنل میڈیکل کالج کے محققین کے مطابق کئی ممالک، جن میں مصر، پاکستان، سوڈان اور تیونس شامل ہیں، ان میں ہم جنس پرستی اور غیر محفوظ جنسی روابط کی وجہ سے ایڈز کا وائرس تیزی سے پھیل رہا ہے۔ ان ممالک میں کچھ خاص طبقوں میں اس وائرس سے متاثرہ افراد کی تعداد پانچ فیصد سے بھی زیادہ ہے۔

طبی موضوع پر شائع ہونے والے ایک جریدے کے مطابق پاکستان میں صورتحال تشویشناک ہوتی جا رہی ہے اور ہم

Flash Galerie Symbolbild HIV

2009ء میں ایڈزسے متاثرہ افراد کی تعداد 33 ملین سے زیادہ تھی

جنس پرستوں میں ایڈز سے متاثرہ افراد کی تعداد 28 فیصد تک پہنچ گئی ہے۔ اس تناظر میں محققین کا کہنا ہے کہ جن ممالک میں ایڈز تیزی سے پھیل رہا ہے انہیں نگرانی کے عمل کو سخت کرنا چاہیے۔ ساتھ ہی ہم جنس پرستوں کو ایڈز کے بارے میں زیاہ سے زیادہ آگاہی دینی چاہیے اور انہیں اس مرض سے محفوظ رہنے کا طریقہ کار سمجھانا چاہیے۔

ایک اندازے کے مطابق 2009ء میں دنیا بھرمیں قوت مدافعت کو کمزور کر دینے والے اس مرض سے متاثرہ افراد کی تعداد 33 ملین سے زیادہ تھی۔ اقوام متحدہ کے اعداد و شمار سے ثابت ہوتا ہے کہ ان میں تقریباً 22 ملین افراد کا تعلق سب صحارہ کے خطے سے ہے۔ تاہم مشرق وسطی اور شمالی افریقہ میں ایڈز سے متاثرہ افراد کے حوالے سے بہت کم ہی اعداد و شمار موجود ہیں۔ اس بارے میں طویل مشاہدے کے بعد محققین اس نتیجہ پر پہنچے ہیں کہ ان دو خطوں میں خاص طور پر مرد ہم جنس پرست ایڈز کے پھیلاؤ کا سبب بن رہے ہیں۔ ان ممالک میں ہم جنس پرست افراد معاشرے سے چھپ کر جنسی روابط قائم کرتے ہیں، جس وجہ سے اسے کنٹرول کرنے میں مشکلات کا سامنا ہے۔

رپورٹ: عدنان اسحاق

ادارت: امتیاز احمد

DW.COM