1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ہلمند میں طالبان کے خلاف نیٹو کی بڑی کارروائی

افغانستان کے جنوبی صوبے ہلمند میں نیٹو افواج نے طالبان کے خلاف اب تک کی سب سے بڑی کارروائی شروع کر دی ہے۔ اسے آپریشن مشترک کا نام دیا گیا ہے، جس میں 15 ہزار فوجی حصہ لے رہے ہیں۔

default

نیٹو نے ابتدائی کامیابیوں کا اعلان کیا ہے جبکہ طالبان نے سخت مقابلے کا عندیہ دیا ہے۔

امریکی، برطانوی اور افغان فوجیوں کو ہفتہ کو صبح سویرے ہلمند کے علاقے مرجا میں ہیلی کاپٹروں کی مدد سے اتارا گیا۔ جس کے کچھ ہی دیر بعد نیٹو نے آپریشن میں ابتدائی کامیابی اور طالبان کی ہلاکتوں کا اعلان کیا۔

مغربی دفاعی اتحاد نیٹو کا کہنا ہے کہ اس کارروائی سے اچھے نتائج برآمد ہو

Flash-Galerie Wahlen in Afghanistan 2009

رواں برس افغانستان میں تعینات غیرملکی فوجیوں کی تعداد ڈیڑھ لاکھ ہو جائے گی

رہے ہیں۔ افغان فوجی ذرائع کے مطابق مرجا کے 70 فیصد علاقے کو طالبان سے صاف کر دیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا ہے کہ لڑائی میں 20 طالبان مارے گئے ہیں۔ برطانوی فوج کا کہنا ہے کہ اس علاقے میں طالبان کے 11 ٹھکانوں پر قبضہ کرلیا گیا ہے۔

ISAF کے نائب کمانڈر لیفٹیننٹ جنرل نِک پارکر کا کہنا ہے کہ مرجا کے شدت پسندوں کو سمجھنا چاہئے کہ ان کی لڑائی بے معنی ہے، انہیں کچھ حاصل نہیں ہو گا اور فورسز ان پر قابو پا ہی لیں گی۔

دوسری جانب طالبان کے ترجمان قاری یوسف احمدی نے کہا ہے کہ مرجا کا علاقہ تاحال ان کے قبضے میں ہے۔ یوسف احمدی نے خبررساں ادارے AP کو بتایا کہ کابل حکومت آپریشن مشترک میں طالبان کی ہلاکتوں کو بڑھا چڑھا کر بیان کر رہی ہے۔ اس نے دعویٰ کیا کہ صرف دو طالبان ہلاک ہوئے ہیں۔

طالبان نے چھ امریکی فوجیوں کی ہلاکت کا دعویٰ بھی کیا ہے۔ خبررساں ادارے AFP کے مطابق اس دعوے کی تصدیق ناممکن ہے اور طالبان ہلاکتوں کی تعداد بڑھا کر ظاہر کرنے کے عادی ہیں۔

ہلمند کے علاقے مرجا میں جاری اس کارروائی میں 15 ہزار فوجی حصہ لے رہے ہیں، جن میں سے زیادہ تعداد امریکہ، برطانیہ اور افغانستان کے فوجیوں کی ہے۔ نیٹو کے مطابق ڈنمارک، ایسٹونیا اور کینیڈا کے فوجی بھی اس آپریشن کا حصہ ہیں۔ نیٹو کے مطابق مرجا کے علاقے میں طالبان عسکریت پسندوں کی تعداد ایک ہزار تک ہو سکتی ہے۔

افغان صدر حامد کرزئی نے زور دیا ہے کہ آپریشن کے دوران شہریوں کو محفوظ رکھنے کے لئے ہر ممکن کوشش کی جائے۔

ہلمند کے گورنر گلاب منگل کا کہنا ہے کہ آپریشن مشترک کا مقصد علاقے کو طالبان سے صاف کرنا اور کابل حکومت کا کنٹرول بحال کرنا ہے۔

مرجا طویل عرصے سے طالبان کے کنٹرول میں ہے، جس کی آبادی 80 ہزار ہے۔ اسی علاقے میں وہ منشیات بھی تیار کرتے ہیں۔

افغان وزیر دفاع عبدالرحیم وردک کے مطابق یہ ایک مشکل آپریشن ہے۔ کابل

Helikopter

طالبان کے علاقے میں ہیلی کاپٹروں سے فوجی اتارے گئے

میں صحافیوں سے گفتگو میں وزیر دفاع نے کہا کہ طالبان نے علاقے میں جگہ جگہ بم اور بارودی سرنگیں نصب کر رکھی ہیں، جس کی وجہ سے اتحادی فوجی احتیاط سے آگے بڑھ رہے ہیں۔

اُدھر افغانستان کے جنوبی علاقے میں طالبان کے ایک حملے میں تین امریکی فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔ نیٹو کی انٹرنیشنل سیکیورٹی اسسٹنس فورس کے اعلامئے کے مطابق یہ فوجی ہفتہ کو ایک بم حملے کا نشانہ بنے۔ تاہم اعلامئے میں یہ نہیں بتایا گیا کہ یہ حملہ افغانستان کے جنوبی علاقے میں کہاں ہوا۔

افغان فوج کے مطابق قندھار میں ایک خودکش حملہ ہوا ہے، جس میں ایک امریکی فوجی ہلاک ہو گیا ہے۔ تاہم نیٹو نے اس کی تصدیق نہیں کی۔

افغان مشن میں تعینات فوجیوں کی ان ہلاکتوں کے ساتھ وہاں رواں برس اب تک مرنے والے غیرملکی فوجیوں کی تعداد 69 ہو گئی ہے۔ گزشتہ برس افغانستان میں 520 غیر ملکی فوجی ہلاک ہوئے تھے۔

افغانستان میں تعینات نیٹو کے فوجیوں کی مجموعی تعداد ایک لاکھ 13 ہزار ہے۔ امریکہ وہاں مزید 30 ہزار فوجی بھیجنے کا اعلان کر چکا ہے جبکہ نیٹو کے دیگر ممالک نے دس ہزار اضافی فوجیوں کا اعلان کیا ہے۔

رپورٹ: ندیم گِل

ادارت: عصمت جبیں

DW.COM