1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

ہرجانہ اعتراف جرم نہیں: کلارک

برطانوی حکام نے واضح کیا ہے کہ گوانتا نامو بے جیل کے سولہ سابق قیدیوں کو ہرجانے کی ادائیگی کا مطلب ان پر کئے گئے تشدد کی ذمہ داری قبول کرنا ہر گز نہیں۔

default

بن یامین محمد، فائل فوٹو

لندن حکومت کی جانب سے منگل کو اعلان کیا گیا ہے کہ گوانتا نامو جیل کے سولہ سابق قیدیوں کے ساتھ عدالتی معاملہ ایک ڈیل کے ذریعے نمٹادیا گیا ہے۔ ابھی یہ نہیں بتایا گیا کہ ان قیدیوں کی جانب سے دائر کی گئی اپیل کے جواب میں انہیں کتنا ہرجانہ ادا کیا گیا ہے۔

میڈیا رپورٹوں میں اس رقم کی مالیت کا اندازہ کئی ملین یورو لگایا جارہا ہے۔ ہر جانہ وصول کرنے والوں میں سابق قیدی بن یامین محمد بھی شامل ہیں۔ ایک برطانوی عدالت میں فروری میں اس ایتھوپین نژاد برطانوی شہری پر امریکی حراست میں تشدد کا انکشاف کیا گیا تھا۔ برطانوی حکومت کے اعتراض کے باوجود اس معلومات کو عام کردیا گیا تھا۔ اعتراض کرنے والے حکام کا مؤقف تھا کہ یہ معلومات عام ہونے سے امریکہ اور برطانیہ کے مابین خفیہ معلومات کے تبادلے کے امور پر اثر پڑ سکتا ہے۔

Kenneth Clarke Großbritannien Koservativen

برطانوی وزیر انصاف کینتھ کلارک

حالیہ مفاہمت سے قبل برطانوی حکومت کو اندازہ تھا کہ مقدمہ جاری رکھنے سے پانچ سال میں لگ بھگ 50 ملین پاؤنڈ کا خرچہ آ سکتا ہے۔ یہ خطرہ بھی موجود تھا کہ عدالتی کارروائی میں کسی موقع پر برطانوی حکومت سے خفیہ نوعیت کی معلومات مانگی جاسکتی تھیں۔

وزیر انصاف کینتھ کلارک نے پارلیمان کو بتایا کہ قیدیوں کے غیر فوجی ’سول‘ ازالے کے لئے مفاہمت یا ڈیل کو حتمی شکل دے دی گئی ہے۔ کلارک کے بقول ایک سمجھوتے کے تحت معاملے کی تفصیلات خفیہ رکھی جارہی ہے البتہ یہ واضح ہے کہ ٫٫برطانیہ کی جانب سے‘‘ جرم قبول نہیں کیا گیا ہے اور ’’درخواست دہندہ سابق قیدیوں کی جانب سے‘‘ الزامات واپس نہیں لئے گئے ہیں۔

وزیر خارجہ ولیم ہیگ کا کہنا ہے کہ ہرجانے کی ادائیگی اس لئے بھی ضروری تھی تاکہ قیدیوں کے ساتھ بدسلوکی کے معاملے میں برطانوی اہلکاروں پر لگائے گئے الزامات کی تحقیقات شروع کی جاسکے۔ اقوام متحدہ کے صدر دفاتر میں میڈیا نمائندوں سے بات چیت میں ہیگ نے کہا کہ انکوائری کے آغاز کے لئے ضروری تھا کہ ان مقدمات میں مفاہمت کے عمل کوخوش اسلوبی سے طے کیا جا سکے۔

USA Gefangenenlager Guantanamo Häftling

گوانتا نامو بے جیل کا ایک قیدی، فائل فوٹو

ہیگ کے مطابق ’’یہ بات آگے نہیں بڑھ سکتی تھی اگر ہم سالوں تک عدالت میں مقدمات کا سامنا کرتے رہیں، اس سے ہمارے انٹیلی جنس اداروں کی توجہ بھی بٹی رہتی‘‘۔ واضح رہے کہ خارجہ امور سے متعلق برطانوی جاسوس ادارے6 MI کے سربراہ جون ساویرز گزشتہ ماہ کہہ چکے ہیں، ’’ قیدیوں پر کیا گیا تشدد ہر لحاظ سے غیر قانونی تھا اور ہمارا اس سے کوئی لینا دینا نہیں ہے‘‘۔ اس بیان کے مطابق تشدد کی ذمہ داری براہ راست امریکی اہلکاروں پر منتقل ہو گئی تھی۔

برطانوی حکومت کا دعوی ہے کہ وہ تشدد کے خلاف ہے۔ وزیر اعظم ڈیوڈ کیمرون واضح طور پر کہہ چکے ہیں کہ وہ ان الزامات کی حقیقت جاننے کے لئے انکوائری کا آغاز کروائیں گے جن میں کہا گیا تھا کہ برطانوی خفیہ سروس کے اہلکار بیرون ملک مشتبہ شدت پسند قیدیوں پر کس طور تشدد میں ملوث رہتے ہیں۔ جولائی میں اپنے ایک خطاب میں کیمرون نے کہا تھا کہ جتنی دیر تک ان الزامات کی گونج رہے گی برطانیہ کی ساکھ متاثر ہوتی رہے گی۔

رپورٹ : شادی خان سیف

ادارت : عابد حسین

DW.COM

ویب لنکس