1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

گھریلو تشدد پر سزاؤں میں نرمی، روسی خواتین پریشان

روس میں گھریلو تشدد پر دی جانے والی سزاؤں میں نرمی کا قانون جلد ہی نافذ ہونے والا ہے۔ پارلیمنٹ کی منظوری کے بعد اب اِس کے نفاذ میں صدر ولادیمیر پوٹن کی جانب سے توثیق ہونا باقی رہ گئی ہے۔

روسی پارلیمنٹ نے اُس مسودہٴ قرارداد کی منظوری دے کر قانون بنا دیا ہے، جس نے گھروں میں خواتین پر کیے جانے والے تشدد میں دی جانے والی سزاؤں میں نرمی پیدا کر دی ہے۔ اس قانون کی منظوری کے لیے روسی پارلیمنٹ دوما نے خاصی سبک رفتاری سے عمل کیا تھا۔ روس کے انسانی حقوق کے کارکنوں کا خیال ہے کہ بل کی منظوری کے لیے جو رفتار پارلیمنٹ نے اپنائی تھی وہ حیران کن اور معنی خیز ہے۔ اب اس کے نفاذ کے لیے صدر پوٹن کی توثیق رہ گئی ہے۔

Marokko Plakat gegen Vergewaltigung in der Ehe (DW/A. Boukhems)

اس قانونی پیش رفت پر حقوق کے کارکن اور گھریلو تشدد کے متاثرین نے صدائے احتجاج بلند کرنا شروع کر تو دی ہے

گھریلو تشدد کی شکار ایک نوجوان چھبیس سالہ روسی خاتون الیگزانڈرا گلیبوف نے نیوز ایجنسی اے ایف پی سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وہ اس قانون سے خواتین میں پیدا ہونے والی پریشانی کا احساس کر سکتی ہیں کیونکہ وہ اپنے والد کے ہاتھوں نفسیاتی اور جسمانی اذیت کا شکار رہی ہے۔ گلیبوف کے مطابق اُس کا والد ہمیشہ اُس کے سر پر مکے سے ضرب لگایا کرتا تھا اور اُس تشدد کے بعد وہ گھنٹوں بے حال رہتی تھی۔ وہ کئی برسوں اپنے باپ سے پٹتی رہی لیکن پولیس کو رپورٹ نہیں کر پائی تھی۔

الیگزانڈرا گلیبوف اپنے والد سے مکمل قطع تعلقی اختیار کرنے کے بعد اب اپنے بوائے فرینڈ کے ساتھ ماسکو میں رہائش پذیر ہے لیکن اُس کو اب بھی ڈیپریشن لاحق ہے۔ اُس کا کہنا ہے کہ موجود قانون نے اُسے مجبور کر دیا کہ وہ گھریلو تشدد کے لیے پہلے سے موجود سزاؤں میں نرمی کے قانون کے خلاف اٹھنے والی آوازوں کا حصہ بنے۔

 اعداد و شمار کے مطابق روس میں ہر پانچویں خاتون کو گھریلو تشدد کا سامنا ہے۔ سن 2015 میں گھریلو تشدد کی وجہ سے 7500 خواتین کی موت واقع ہوئی تھی۔ روس میں عام طور پر کہا جاتا ہے کہ جو کسی کو مارتا ہے، وہ اُس سے پیار و محبت بھی شدت سے کرتا ہے۔ ایک تازہ ترین رائے عامہ کے جائزے میں انسٹھ فیصد لوگ ہلکے پھلکے تشدد کو قبول کرتے ہیں۔

کہا جا رہا ہے کہ اس قانون کی منظوری کے پسِ پردہ کریملن کے قدامت پسند اراکین پارلیمنٹ کا ہاتھ ہے۔ اس کا مسودہ بھی قدامت پسندوں نے تیار کر کے پارلیمنٹ میں پیش کیا تھا۔ نئے بل کو پیش کرنے والے اراکین کا موقف ہے کہ خاندانی معاملات میں ہلکے پھلے تشدد کے تناظر میں پہلے سے موجود سخت قوانین خاندانی امور میں غیر ضروری مداخلت کے مساوی تھے۔

اس قانونی پیش رفت پر انسانی حقوق کے کارکن اور گھریلو تشدد کے متاثرین نے صدائے احتجاج بلند کرنا شروع کر تو دی ہے لیکن ان آوازوں کا اثر پارلیمنٹ کے اراکین پر دکھائی نہیں دیا اور یہ لوگ  صدر پوٹن کی بصیرت پر تکیہ کیے ہوئے ہیں کہ وہ امکاناً اِس بل کی توثیق سے گریز کریں لیکن کئی کا خیال ہے کہ ایسا مشکل ہی دکھائی دیتا ہے کہ وہ پارلیمانی قانون کی توثیق کے راستے میں کھڑے ہوں۔