1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

گولن کو حوالے کرو ورنہ خدا حافظ، ترکی کی امریکا کو تنبیہ

ترکی نے امریکا کو خبر دار کیا ہے کہ اگر ریاست ہائے متحدہ امریکا نے پنسیلوینیا میں مقیم خود ساختہ جلا وطن ترک مبلغ فتح اللہ گولن کو اس کے حوالے نہ کیا تو امریکا انقرہ حکومت کے ساتھ اپنے اتحاد کو کھو دے گا۔

Bekir Bozdag Türkei Justizminister

ترک وزیر انصاف نے کہا ہے کہ اگر امریکا گولن کو انقرہ کے حوالے نہیں کرتا تو وہ ترکی کے ساتھ تعلقات قربان کرے گا

امریکا سے کہا گیا ہے کہ وہ دونوں ممالک کے باہمی تعلقات کو فتح اللہ گولن کی وجہ سے قربان نہ کرے۔ ترک وزیر انصاف بیِکر بوزداگ نے انقرہ میں صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اگر امریکا گولن کو انقرہ کے حوالے نہیں کرتا تو وہ ایک ’دہشت گرد‘ کی وجہ سے ترکی کے ساتھ تعلقات قربان کرے گا۔ ترکی کی طرف سے واشنگٹن سے مسلسل مطالبہ کیا جا رہا ہے کہ وہ گولن کو ملک بدر کرے۔ انقرہ ، پینسلوینیا میں خود ساختہ جلاوطنی کی زندگی گزارنے والے مذہبی رہنما گولن کو ناکام فوجی بغاوت کا ذمہ دار قرار دیتا ہے تاہم فتح اللہ گولن نے پندرہ جولائی کی پر تشدد بغاوت میں ملوث ہونے سے انکار کیا ہے۔

ترک وزیر انصاف نے سرکاری خبر رساں ایجنسی انادولو سے گفتگو میں یہ بھی کہا،’’ گولن کی حوالگی کے معاملے پر ترک عوام میں امریکا مخالف جذبات عروج پر ہیں اور خدشہ ہے کہ یہ مخالفانہ جذبات نفرت میں نہ تبدیل ہو جائیں۔‘‘ بیکر بوزداگ نے یہ بھی کہا کہ امریکا ایک عظیم ملک ہے اور ہم امید رکھتے ہیں کہ یہ ایک عظیم ملک ہی کی طرح عمل کرے گا۔

ترکی نے گولن کی تحریک کو دہشت گرد تنظیم قرار دیا ہے اور اس مذہبی رہنما پر مقدمہ چلانے کے لیے امریکا سے ان کی واپسی کا مطالبہ کر رہا ہے۔ دوسری جانب واشنگٹن کا موقف ہے کہ اسے ترکی میں ناکام فوجی بغاوت میں گولن کے ملوث ہونے کے ثبوت درکار ہیں اور یہ بھی کہ گولن کی ترکی کو حوالگی باضابطہ طریقے سے ہونی چاہیے۔

USA Türkei Flaggen Symbolbild

بیِکر بوزداگ کے مطابق گولن کی حوالگی کے معاملے پر ترک عوام میں امریکا مخالف جذبات عروج پر ہیں

ترک حکومت نے پندرہ جولائی کی بغاوت کے بعد سے گولن کے حمایتیوں کے خلاف کریک ڈاون شروع کر رکھا ہے۔ بوزداگ کے مطابق اب تک سولہ ہزار مشتبہ افراد کو گرفتار کیا گیا ہے جن کے خلاف مقدمے زیر التوا ہیں۔ اس کے علاوہ دیگر چھ ہزار زیر حراست افراد سے پوچھ گچھ کی جا رہی ہے۔ ترک وزیر انصاف نے مزید بتایا کہ لگ بھگ سات ہزار چھ سو چھیاسٹھ افراد ایسے بھی ہیں جو زیر تفتیش ہیں لیکن انہیں گرفتار نہیں کیا گیا۔

ترکی میں گولن کی تحریک سے وابستگی کے شبے میں ہزاروں افراد کو ملازمتوں سے برخاست یا معطل کیا گیا ہے۔ ان میں صحت، میڈیا ،عدلیہ، فوج، تعلیم اور سول سروس سے تعلق رکھنے والے افراد شامل ہیں۔ یورپی اقوام اور انسانی حقوق کی تنظیموں نے ترکی میں حکومتی کریک ڈاون کے دائرہ کار پر خدشات کا اظہار کیا ہے۔

DW.COM