1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

گورڈن براؤن کے لئے ایک اور برا دن

برطانوی وزیر اعظم گورڈن براؤن کو اپنے معاون سے کی گئی سرگوشی عام ہونے پر ایک خاتون ووٹر کے گھر جاکر معافی مانگنا پڑی ہے۔

default

براؤن کی قسمت کا ستارہ ان دنوں بھنور میں گھرا دکھائی دیتا ہے، جو چھ مئی کو ہونے والے انتخابات میں ان کی جماعت لیبر پارٹی کی جیت کے پہلے سے معدوم امکانات کو مزید کم کرتا جارہا ہے۔

بدھ کو وزیر اعظم براؤن انتخابی مہم کے دوران برطانیہ کے شمال مغربی علاقے Rochdale کے دورے پر تھے، جہاں انہوں نے رضاکارانہ بنیادوں پر علاقے کی صفائی کرنے والوں سے ملاقاتیں کی۔ اسی دوران ٹیلی ویژن کیمروں کی موجودگی میں ان کی حامی ایک 66 سالہ خاتون Gillian Duffy نے مشرقی یورپی ممالک سے آئے تارکین وطن کی جانب براؤن حکومت کے ’نرم رویے‘ سمیت دیگر معاملات کو تنقید کا نشانہ بنایا۔

Gordon Brown beleidigt Wählerin

گورڈن براؤن لیبر پارٹی کی حامی خاتون Gillian Duffy کو حکومتی پالیسیوں سے مطمئن کرنے کی کوشش کرتے ہوئے

براؤن نے موقع کی نزاکت کو سمجھتے ہوئے انہیں یقنین دلانے کی کوشش کی کہ برطانوی بھی دیگر یورپی مملاک میں جاکر ملازمتیں کررہے ہیں، لہٰذا یورپی باشندوں کا برطانیہ آنے کو برا خیال نہ کیا جائے۔

تاہم براؤن کی بدقسمتی کا آغاز اس وقت ہوا، جب وہ ہجوم نکل کر اپنی گاڑی میں سوار ہوئے۔ یہ وہ موقع تھا جب انہوں نے اپنے ’دل کی بھڑاس‘ نکالی۔ براؤن نے اپنے معاون سے کہا: ’’ یہ ایک تباہی تھی، مجھ سے اس خاتون کا سامنا نہیں کرایا جانا چاہئے تھا، یہ کس کی تجویز تھی، یہ محض ایک متعصب قسم کی خاتون تھیں۔‘‘

براؤن برطانوی نشریاتی ادارے Sky News کا مائیکروفون اپنی کوٹ سے اتارنا بھول گئے تھے، جس کے باعث ان کی تمام گفتگو سن لی گئی۔ بعدازاں اسکائی نیوز نے Duffy کو براؤن کی تمام باتیں سنوائی اور انہیں پھر نشر کرڈالا۔ اس ساری صورتحال نے براؤن کو اس پر مجبور کردیا کہ وہ Duffy کے گھر جائیں اور ان سے ذاتی طور پر معافی مانگیں۔

Großbritannien Wahlen Sky news TV-Duell Gordon Brown, Nick Clegg und David Cameron

وزارت عظمیٰ کی دوڑ کے دوسرے مباحثے کا منظر

جمعرات کو ہی برطانوی وزارت عظمیٰ کی دوڑ کے تینوں امیدواروں یعنی ’گورڈن براؤن، ڈیوڈ کیمرون اور نک کلیگ کے درمیان تیسرا براہ راست مباحثہ ہونے جارہا ہے جس کا موضوع معاشی پالیسی ہے۔

بیشتر عوامی جائزوں میں براؤن کی لیبر پارٹی، کنزرویٹیو اور لبرل ڈیموکریٹ جماعت سے بھی پیچھے ہے۔ سیاسی پنڈتوں کے لگائے گئے حساب کتاب کے مطابق کسی بھی جماعت کو واضح برتری حاصل ہونے کی امید نہیں اور آئندہ برطانوی پارلیمان معلق ہوسکتی ہے۔

رپورٹ : شادی خان سیف

ادارت : ندیم گِل

DW.COM