1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

گوانتانامو کے قیدیوں کی مجوزہ یمن واپسی کی مخالفت

امریکی سینیٹ کے جان میک کین سمیت تین سرکردہ ارکان نے صدر باراک اوباما سے مطالبہ کیا ہے کہ گوانتانامو کی امریکی جیل سے کسی بھی یمنی قیدی کو ملک بدر کر کے واپس یمن نہ بھیجا جائے۔

default

جان میک کین (بائیں) کی قیادت میں امریکی سینیٹرز کے ایک وفد نے کچھ عرصہ قبل یمن کا دورہ بھی کیا تھا

ان سینیٹرز نے کہا کہ ایسا تب تک نہ کیا جائے جب تک صنعاء حکومت یہ ضمانت نہ دے دے کہ ان مبینہ دہشت گردوں کی عسکریت پسندانہ کارروائیوں میں دوبارہ شمولیت عملی طور پر نا ممکن بنا دی جائے گی۔

واشنگٹن میں سینیٹ کے ان تینوں ارکان نے، جن میں ری پبلکن جان میک کین اور لنڈسے گراہیم کے علاوہ آزاد رکن جوزف لیبرمن بھی شامل ہیں، منگل کی شام صدر اوباما کے نام اپنے ایک خط میں کہا کہ گوانتانامو کے قیدیوں کی یمن منتقلی کا منصوبہ اپنی موجودہ حالت میں انتہائی غیر دانشمندانہ اقدام ہو گا جس پر کافی غور و فکر نہیں کیا گیا۔

Kämpfe im Jemen

یمنی فوج ان دنوں دہشت گردوں کے خلاف بڑی کارروائیاں کر رہی ہے

امریکی سینیٹ کے ان بہت اہم ارکان نے کہا کہ یمن میں سیکیورٹی کی موجودہ صورت حال کو دیکھا جائے، یا اس بات کو کہ ماضی میں بھی یمنی حکومت بڑے مجرم سمجھے جانے والے قیدیوں کو جیلوں میں بند رکھنے میں ناکام رہی ہے، تو یہ اندازہ لگانا مشکل نہیں کہ کیوبا کے جزیرے پر قائم بین الاقوامی سطح پر بہت متنازعہ امریکی حراستی کیمپ سے مشتبہ دہشت گردوں کی یمن منتقلی اچھا فیصلہ نہیں ہو گا۔

صدر باراک اوباما نے عہدہ صدارت سنبھالنے کے کچھ ہی عرصے بعد اعلان کیا تھا کہ گوانتانامو کی امریکی جیل سال 2010 کے اوائل میں بند کر دی جائے گی۔ تاہم کئی قانونی اور عملی مشکلات کی وجہ سے اوباما انتظامیہ اب یہ بھی تسلیم کر چکی ہے کہ گوانتانامو جیل کی مجوزہ وقت پر بندش ممکن نہیں ہو گی۔

اس امریکی جیل میں ابھی بھی قریب دو سو مشتبہ دہشت گرد زیر حراست ہیں، جن میں سے نصف کے قریب یمن کے شہری ہیں۔ واشنگٹن حکومت کا ارادہ ہے کہ ان یمنی قیدیوں میں سے چھ کو صنعاء حکومت کے حوالے کر دیا جائے۔

تاہم ان تینوں سینیٹرز نے اپنے خط میں یہ مؤقف اختیار کیا کہ آج کے یمن میں دہشت گرد نیٹ ورک القاعدہ افغانستان اور پاکستان کے بعد دنیا کے کسی بھی دوسرے ملک کے مقابلے میں سب سے زیادہ منظم ہے۔ ایسے میں گوانتانامو کے کسی بھی یمنی قیدی کی اس کے ملک واپسی امریکہ کے لئے کسی مثبت اور بہتر تبدیلی کا باعث بننے کے بجائے سلامتی کے حوالے سے نقصان کا باعث زیادہ بنے گی۔

رپورٹ: مقبول ملک

ادارت: ندیم گِل

DW.COM