1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

گوانتانامو جیل کا مستقبل امریکی رائے دہندگان کے ہاتھ میں

امسال نومبر میں ہونے والے امریکی صدارتی انتخابات طے کریں گے کہ گوانتانامو میں امریکی جیل بند کی جائے گی یا نہیں

default

گوانتانامو میں قائم متنازعہ امریکی جیل

امریکہ میں بش انتظامیہ نے گوانتانامو میں متنازعہ امریکی جیل میں موجود دہشت گردی سے متعلق دنیا کے مختلف ممالک سے تعلق رکھنے والے ملزمین کو ان کے وطن بھیجنا شروع تو کردیا ہے مگر اس بات کی امید اب بھی بہت کم ہے کہ گوانتانامو جیل کو اس سال کے آخر تک مکمل طور پر بند کیا جا سکے۔


گیارہ ستمبر کے دہشت گردانہ حملوں کے بعد جنوری دو ہزار دو میں قائم کی جانے والی اس جیل کو بند کرنے میں کئی طرح کی قانونی اور عملی مشکلات حائل ہیں۔ امریکی حکومت کے مطابق دو سو پچپن میں سے اسّی کے قریب قیدیوں کو خصوصی فوجی عدالتوں میں مقدمات کا سامنا ہے جب کہ ان میں سے ساٹھ کو ان کے ممالک کے حوالے کیا جا رہا ہے۔ گوانتانامو جیل میں مقیّد ایک سو پندرہ کے قریب قیدیوں کے مستقبل کے بارے میں اس وقت کوئی بات یقین سے نہیں کہی جا سکتی ہے۔

Kombo Wahlen USA John McCain und Barak Obama

گوانتانامو جیل کے قیدیوں کی قسمت کا فیصلہ امریکی صدارتی انتخابات کے زریعے طے ہونے کا امکان


اس صورتِ حال کے پیش ِنظر یہ بات صاف دکھائی دیتی ہے کہ گوانتانامو بے کی جیل اور اس میں موجود قیدیوں کا مسئلہ نئی امریکی انتظامیہ کو منتقل ہو جائے گا جس کے قائم ہونے میں اب چند ماہ ہی باقی ہیں۔ رپبلکن پارٹی کے صدارتی امیدوار جان میک کین اور ڈیموکریٹک پارٹی کے امیدوار باراک اوباما دونوں ہی اس جیل کو بند کرنے پر متفّق ہیں۔ تاہم دونوں امیدواروں میں اس حوالے سے نظریاتی اختلافات ضرور پائے جاتے ہیں۔


باراک اوباما جان میک کین کی نسبت عراق جنگ کے بہت بڑے مخالف ہیں اور وہ دہشت گردی کے خلاف جنگ کے حوالے سے امریکی پالیسی میں، گو کلّی طور پر نہیں، مگر چند ایک تبدیلیوں کے خواہش مند ضرور ہیں۔ وہ سمجھتے ہیں کہ امریکی عدالتیں گوانتانامو کے قیدیوں کے خلاف مقدمہ چلانے کی اہل ہیں۔ جان میک کین دوسری طرف گوانتانامو جیل بند تو کرنا چاہتے ہیں مگر اس حوالے سے ان کی کچھ شرائط ہیں۔


دوسری جانب امریکہ اور دنیا بھر کی انسانی حقوق کی تنظیمیں گوانتانامو جیل کو انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی قرار دیتی ہیں اور اس کو فوراً بند کرنے کا مطالبہ کرتی رہی ہیں۔ اس جیل میں مقیّد قیدیوں کے اہلِ خانہ بھی گوانتانمو جیل کو بند کرنے کے لیے مہم چلاتے رہے ہیں تاہم یہ معاملہ اتنا آسان نہیں جتنا کہ نظر آتا ہے۔


گوانتانامو جیل برقرار رہے گی یا بند کردی جائے گی اس کا انحصار بڑی حد تک امریکی رائے دہندگان پر ہے جو امسال نومبر میں اپنے صدر کا انتخاب کریں گے۔