1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

معاشرہ

گناہ گار ضرور ہوں، مگر ’یہ الزام‘ غلط ہے، بیرلسکونی

آخر کار ایک طویل عرصے سے جاری کشمکش کے بعد یہ فیصلہ کر لیا گیا کہ اطالوی وزیراعظم سلویو بیرلسکونی کو عدالت کے کٹہرے میں کھڑا ہو نا ہی پڑے گا۔

default

عدالت میں بیرلسکونی کے خلاف اتنے شواہد پیش کردیے گئے ہیں کہ ان کے خلاف مقدمے کی کارروائی اب شروع کردی جائے گی۔ رواں سال اپریل میں شروع ہونے والے اس مقدمے کی یہ کوئی پہلی عدالتی کارروائی نہیں ہو گی، جس کا اطالوی وزیراعظم سلویو بیرلسکونی کو سامنا کرنا پڑے گا۔ اس سے قبل ان کے خلاف دس سے زائد مقدامات قائم کیے گئے، جن میں سے زیادہ تر میں انہیں بری کر دیا گیا۔

Italien Proteste gegen Berlusconi

اٹلی میں بیرلسکونی کے خلاف مظاہرے بھی ہوئے ہیں

لیکن کم عمر لڑکی کے ساتھ جنسی روابط رکھنے اور اسے پولیس سے بچانے کے لیے اپنے اختیار کا استعمال کرنے کا یہ معاملہ دنیا بھر میں اتنی مقبولیت پا چکا ہے کہ لگتا ہے کہ اس کا نتیجہ 74 سالہ بیرلسکونی کے سیاسی کیریئر پر کوئی نہ کوئی نقش ضرور چھوڑ کر جائےگا۔

’خواتین اور بیرلسکونی‘ یہ الفاظ ایک دوسرے کے لیے لازم و ملزوم سمجھے جانے لگے ہیں کیونکہ اطالوی وزیراعظم یہ اعتراف کر چکے ہیں کہ خوبصورت خواتین ان کی کمزوری ہیں۔2003 ء میں توانہوں نے امریکی تاجرکو اٹلی میں سرمایہ کاری پر راضی کرنے کے لیے یہاں تک کہہ دیا کہ ’’سرمایہ کاری کا فائدہ یہ ہے کہ اٹلی کی حسینائیں ہوش ربا ہیں‘‘۔

لیکن انہی میں سے ایک لڑکی نے بیرلسکونی کے ایسے ہوش گم کیے کہ اب انہیں عدالت میں جواب دہ ہونا پڑ رہا ہے۔ روبی کے ساتھ 74 سالہ بیرلسکونی نے اس وقت مبینہ طور پر جنسی روابط قائم کیے، جب وہ سترہ برس کی تھی اور اٹلی میں یہ جرم ہے۔ اس سے قبل 2009ء میں اطالوی وزیراعظم کا ایک سیکس اسکینڈل سامنے آ چکا ہے۔ اس وقت ایک ماڈل کی اٹھارہویں سالگرہ میں شرکت کی تصاویر منظر عام پر آنے کے بعد ان کی اہلیہ ویرونیکا لاریو نے بیرلسکونی سے علیحدگی اختیار کر لی تھی۔

2009ء میں ابھی بیرلسکونی اپنے اوپر لگائے جانے والے الزامات کو سازش قرار دینے میں مصروف تھے کہ اسی دوران ساردینیا میں ان کے پرتعیش بنگلے میں ہونے والی ایک پارٹی میں بنائی گئی غیر اخلاقی تصاویر منظر عام پر آ گئیں۔

NO FLASH Berlusconis Skandale Frauen Party

سلویو بیرلسکونی کا پہلا سیکس اسکینڈل 2009ء میں منظر عام پر آیا تھا

اُسی سال جون کے مہینے میں ایک کال گرل پاتریزیا ڈی اداریو نے انکشاف کیا کہ ساردینیا میں ہونے والی پارٹی کے منتظیمن نے اسے بیرلسکونی کے ساتھ ایک رات گزارنے کے دو ہزار یورو دیئے تھے۔

بہرحال یہ بات حقیقت ہے کہ اگر بیرلسکونی اس مرتبہ بھی اپنے اوپر لگائے جانے والے الزامات کو جھوٹا قرار دینے میں کامیاب ہو جاتے ہیں، تو’گناہ گار‘ ہونے کا اعتراف کرنے کے باوجود ان کی شہرت میں مزید اضافہ ہو جائے گا۔ دوسری صورت میں انہیں 15 سال تک کی قید کی سزا بھی سنائی جا سکتی ہے۔

رپورٹ: عدنان اسحاق

ادارت : شادی خان سیف

DW.COM

ویب لنکس