1. Inhalt
  2. Navigation
  3. Weitere Inhalte
  4. Metanavigation
  5. Suche
  6. Choose from 30 Languages

حالات حاضرہ

گلوبل وارمنگ: جنیوا میں ایک اور اجلاس

دنیا کے 45 ملکوں کے نمائندے دو روزہ میٹنگ میں شریک ہیں جس کا موضوع غریب اور ترقی پذیر ملکوں کی گلوبل وارمنگ کے سلسلے میں امداد میں اضافہ کرنا ہے۔

default

کلوبل وارمنگ کا ایک پوسٹر

یورپی ملک سوئٹزر لینڈ کے شہر جنیوا میں گزشتہ روز شروع ہونے والی اس میٹنگ کا بنیادی مقصد غریب ملکوں کے لئے گلوبل فنڈ کے قیام کی راہ ہموار کرنا ہے۔ یہ اجلاس آج جمعہ کو ختم ہو جائے گا۔ اس میٹنگ میں شریک میزبان ملک کے ماحولیات سے متعلقہ امور کے نمائندے فرانس پیریز (Franz Perrez)کا خیال ہے کہ یہ فنڈ غریب ملکوں کو گرین انڈسٹریل ٹیکنالوجی کی فراہمی میں اہم رول ادا کرے گا۔ گرین انڈسٹریل ٹیکنالوجی سے مراد ماحول دوست صنعتی تکنیکی مہارت ہے جس کے ذریعے سبز مکانی گیسوں کے اخراج کو کنٹرول کرنا آسان ہو گا۔

جنیوا میں جاری اس دو روزہ کانفرنس میں شرکاء کوپن ہیگن منعقدہ عالمی کانفرنس میں طے شدہ 30 ارب ڈالر مالیت کے فنڈ میں اضافے کی بابت کوئی فیصلہ کرنے کی کوشش کریں گے۔ تیس بلین ڈالر کا یہ فنڈ بنیادی طور پر دوسال کے لئے مختص کیا گیا تھا۔

اقوام متحدہ کے ماحولیات سے متعلق جرمن شہر بون میں قائم بین الاقوامی ادارے کی سربراہ کرسٹیانا فیگوریس (Christiana Figueres) نے گرین

Christiana Figueres wird neue Klima-Chefin

اقوام متحدہ کے ماحولیات تے متعلق ادارے کی سربراہ کرسٹیانا فیگوریس

صنعتی تکنیکی مہارت کے لئے گرین فنڈ کو انتہائی اہم قرار دیتے ہوئے کہا کہ یہ غریب اور امیر اقوام کے درمیان اعتماد سازی کا باعث ہو گا۔ ان کا مزید کہنا ہے کہ مالی معاونت سے ترقی پذیر ممالک یقینی طور پر سبز مکانی گیسوں کے اخراج کی پالیسی کو ترک کر سکتے ہیں۔ فیگوریس کے مطابقاگر کنکُون میں کوئی بڑا فیصلہ سامنے نہ آیا، تو اقوام عالم پر سن 2012 تک کی مہلت کے تناظر میں دباؤ خاصا بڑھ بھی سکتا ہے۔ اسی طرح جنیوا کانفرنس میں اس فنڈ کی بابت بات کرتے ہوئے سوئس وزیر ماحولیات Moritz Leuenberger نے اس میٹنگ میں ماحولیات اور مالیات کو موضوع اور ایجنڈے کا اہم ترین پہلو قرار دیا۔ ان کے مطابق کنکُون کانفرنس کی کامیابی کا انحصار بھی جنیوا میٹنگ کے شرکاء کے مابین اتفاق رائے پر ہو گا۔

فرانس پیریز کا یہ بھی کہنا ہے کہ گرین گلوبل فنڈ بنیادی طور پر ایک طویل المدتی سرمایہ کاری پروجیکٹ ہے، جو انجام کار ماحولیاتی تبدیلیوں میں مثبت پہلوؤں کو سامنے لا سکتا ہے۔ ان کا مزید کہنا ہے کہ کوپن ہیگن کانفرنس میں سن 2010 سے بارہ تک کے لئےغریب اور ترقی پذیر ممالک کے اندر اعتماد کی بحالی کی خاطر تیس ارب ڈالر کی ضرورت محسوس کی گئی تھی لیکن اصل میں ٹارگٹ سال سن 2020 ہے، جب بڑے مقصد کے حصول کے لئے یعنی گرین انڈسٹریل ٹیکنالوجی کے لئے 100 ارب ڈالر کے بنیادی سرمائے کے حصول کے لئے ترقی یافتہ اقوام کو تحریک دینا ہو گی۔

اقوام متحدہ کی عالمی ماحولیاتی کانفرنس رواں سال نومبر کی 29 تاریخ سے 10 دسمبر تک میکسیکو کے ساحلی تعطیلاتی شہر کنکُون میں ہو گی۔

رپورٹ: عابد حسین

ادارت: مقبول ملک

DW.COM